تازہ ترین

Marquee xml rss feed

انسداد دہشت گردی پولیس سے مقابلے میں بدنام زمانہ کالعدم لشکر جھنگوی کا سربراہ آصف چھوٹو مارا گیا-فیصل آباد، مسلح موٹر سائیکل سوار وںنے فائرنگ کرکے نوجوان کوقتل کردیا-فیصل آباد،بھٹہ انڈسٹری ہزاروں افراد کو روزگار فراہم کر رہی ہے،رانا ثنا ء اللہ بھٹہ انڈسٹری کو درپیش مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جائیں گے ،صوبائی وزیر قانون-بہاولپور، صوبائی وزیر اور ایم ڈی چولستان درمیان اختلافات ، ایم ڈی کی خدمات واپس ،چولستان کی ترقی سیاست کی بھینٹ چڑھ گی-ملائیشیاء سے ڈی پورٹ ساٹھ افراد کا لاہور ائیرپورٹ پر احتجاج-کراچی،ایف آئی اے نے خاتون کو بلیک میل کرنیوالے ملزم کو حراست میں لے لیا-رضا ربانی، ایاز صادق، خورشید شاہ ، مولانا فضل الرحمان ودیگر کے بینک اکاؤنٹس میں جعلی ٹرانزیکشن کا انکشاف ایف آئی اے اور سٹیٹ بنک کو تحقیقات کی ہدایت-سینٹ ، قومی احتساب ترمیمی آرڈیننس2017ء کو کثرت رائے سے منظور اپوزیشن کی جانب سے پیش کی جانے والی قرارداد پر اسے شکست کا سامنا کرنا پڑا، حق میں 33، مخالفت میں 21ووٹ پڑے رضاکارانہ ... مزید-پی اے سی کی ذیلی کمیٹی کا اجلاس چیئرمین ایف بی آر کی ریٹائرمنٹ کے باعث ملتوی-خبیب فائو نڈیشن کا ترک رفاہی تنظیم آئی ایچ ایچ کے ساتھ شامی پناہ گزینوں کی امداد کا معاہدہ

GB News

پاکستان میں واقع 10 حیرت انگیز پہاڑی درے جن کے بارے میں شاید کبھی سنا ہوگا

page

ایک پہاڑی درہ  پہاڑ کی حد کے ذریعے یا ایک چوٹی پر راستہ ہوتا  ہے جو کہ سفر کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے دروں نے تجارت ، جنگ ، اور منتقلی میں اہم کردار ادا کیا ہے آپ نے قراقرم  کا نام تو سنا ہوگا مگر پاکستان میں اور بھی بلند درے موجود ہیں جن پر خوبصورت چراگاہیں اور ایسی جھیلیں موجود ہیں جنہیں چودویں کی رات کو دیکھنے پر دیوانگی طاری ہو سکتی ہے

 1 منتقا پاس Mintaka Pass (4,700)

سطح سمندر سے 4،700 میٹر پر واقع ، خنجراب کے مغرب قراقرم میں یہ مشہور اعلی پہاڑ کے پاس قدیم شاہراہ ریشم پر مسافروں کی طرف سے استعمال کیا جاتا تھا

The Mintaka Pass

2 گوندوگورو لا Gondogoro La( 5,940 m)

یہ حیران کن درہ 5.940 میٹرکی بلندی پر واقع ہے ، یہ گلگت بلتستان میں حوشی وادی کو کونکورڈیا سے منسلک کرتا ہے دنیا میں سب سے اونچے دروں میں سے ایک ہے . اس کے اوپر سے کے ٹو اور 8،000 میٹر کے تین دیگر پہاڑوں کو دیکھا جا سکتا ہے

Gondogoro La (Pass)

3 ددریلی پاس Dadarili Pass (5,030m)

یہ علی پہاڑی درہ گلگت بلتستان میں غذر کی وادی کو بالائی سوات سے جوڑتا ہے

m4

 4 چلنجی لاChillinji La(5300m)

یہ پاس 5،300 سے زائد میٹر پر واقع ہے، یہ پاس بالائی ہنزہ کے چپرسن کی وادی کے ساتھ اشکومن میں کرمبر کی وادی کو جوڑتا ہے

Chillinji la

5 برزل پاس Burzil Pass(4,100m)

گلگت بلتستان کے ضلع استور، دیوسائی نیشنل پارک کے مغرب میں واقع . یہ ایک  پاس ہے  – لیکن یہ لائن آف کنٹرول (اسے سرینگر کے ساتھ گلگت مربوط کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا) کے قریب ہے ،  پاس کو عبور کر کے پاکستانی حدود تک ہی جایا جاسکتا ہے

Burzil Pass

Burzil Pass Photo Basitt Ali

6 شمشال پاس Shimshal Pass (4,735m)

یہ درہ 4.735 میٹرکی بلندی پر واقع ہے ،یہ شمشال کی وادی برلڈو دریا کی طرف ہے یہ علاقےکے ٹو کے شمال چہرے کی طرف جانے کے لیے کوہ پیما استعمال کرتے ہیں

shimshal_pass

7 کرمبر پاس Karambar Pass(4,300m)

یہ درہ 4،300 میٹرکی بلندی پر واقع ہے  ، یہ درہ  ضلع غزر کے اشکومن وادی کو  کرمبر دریا  کے بالائی چترال میں وادی سےجوڑتا ہے

karumbar lake and pass

8 بورگل پاس Boroghil Pass (3,800m)

یہ درہ 3،800 میٹرکی بلندی پر واقع ہے ،یہ پہاڑی درہ افسانوی واخان کوریڈور میں ہے جو افغانستان کے بدخشاں صوبے کو پاکستان کے ضلع چترال سے ملاتا ہے

Borghil Valley Photo By Atif Saeed

Borghil Valley Photo By Atif Saeed

9 کاچی کانی پاس Kachikani Pass (4,700m)

یہ درہ 4،700 میٹرکی بلندی پر واقع ہے  اس پاس کے مغرب میں چترال کی وادی ہے جس کو پاکستان کے سرمی وادی سوات کے ساتھ جوڑتا ہے

The Kachikani Pass

10 بابوسر پاس Babusar Pass (4,173m) 

یہ درہ 4,173 میٹرکی بلندی پر واقع ہے ، وادی کاغان کو شاہراہ قراقرم پر چلاس کے ساتھ سے تھک نالہ کے ذریعے سے منسلک کرتا ہے

Babusar

Share Button