تازہ ترین

Marquee xml rss feed

قومی اسمبلی میں پارلیمانی سیکرٹریٹ برائے پائیدار ترقیاتی اہداف کے قیام کو ایک سال مکمل ہوگیا،رکن قومی اسمبلی و وزیر مملکت برائے اطلاعات ونشریات وقومی ورثہ ایم این اے ... مزید-وفاقی دارالحکومت کے پولی کلینک اسپتال میں کامیاب آپریشن کے ذریعے 13سالہ لڑکی کی جنس تبدیل ، عطیہ نامی لڑکی کا نام جنس بندلنے کے بعد عدنان رکھ دیا گیا میڈیکل کے لحاظ سے ... مزید-سیالکوٹ ،بھارتی سیکیورٹی فورسز کی سرحدی گائوں پر فائرنگ سے 54 سالہ خاتون شہید رینجرز حکام کے بی ایس ایف سے مذاکرات ،خاتون کی نعش واپس کر دی ، رینجر زحکام نے لو احقین ... مزید-ایف آئی اے نے اسلام آباد سے انسانی اسمگلر گرفتار کر لیا ،ملزم نے شہریوں کو بیرون ملک کا جھانسا دے کر لاکھوں روپے بٹورے-وزیر اعلیٰ پنجاب کاراولپنڈی میں پتنگ بازی اور ہوائی فائرنگ کے واقعات کا سخت نوٹس، اے ایس پی اور ایس ایچ او تھانہ صدر راولپنڈی کو فوری معطل کرنے کا حکم-پانامہ کیس میں سپریم کورٹ کا ہرفیصلہ قبول کریں گے ‘ عدالت کے خلاف نہیں جائیں گے ‘ وزیر اعظم ترکی میں بیٹھ کر دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑ رہے ہیں ‘ افغانستان سے فوجی انخلاء ... مزید-پشاو: بس ریپڈ ٹرانزٹ منصوبے پر تعمیراتی کا م کا آغاز کرکیکم سے کم مدت میں مکمل کیا جائے،پرویز خٹک ْمنصوبے کے تینوں پیکیجز کاٹینڈر30 اپریل تک جاری کیا جائے، منصوبے کو ایک ... مزید-پشاور:صوبائی حکومت نے ہر فیصلے میں عام آدمی کو مد نظر رکھنیکی وجہ سیتحریک انصاف پر عوام کا اعتماد روز بروز بڑھتا جارہا ہے، پرویز خٹک تحریک انصاف گزشتہ تین سالوں سے نظام ... مزید-پشاور: مردان میں جاری ترقیاتی سکیموں کو بروقت مکمل کیا جائے،پرویز خٹک تحصیل کاٹلنگ کی عمارت 31مارچ تک مکمل کرکے متعلقہ حکام کے حوالے جبکہ کاٹلنگ میں ریسکیو 1122کے لئے اراضی ... مزید-آپریشن ردالفساد پاکستان میں دہشت گردی اور انتہا پسندی کے تابوت میں آخری کیل ثابت ہو گا،مقررین کا سیمینار سے خطاب

GB News

بجلی دینے کادعویٰ کرنیوالوں نے بجلی ہی غائب کردی،راجہ جلال

raja-jalal

سکردو (چیف رپورٹر ) تحریک انصاف کے چیف آرگنائزر اجہ جلال حسین مقپون اور سکردو کے ڈپٹی آرگنائزر غلام حیدر نے کہاہے کہ سکردو میں 72,72گھنٹے بجلی غائب رہتی ہے لیکن صوبائی وزیر پانی وبجلی جھوٹ پر جھوٹ بول رہے ہیں ہمیں پانی وبجلی کے وزیر کے اوپر بہت ترس آتا ہے کیونکہ وزیر اعلیٰ انہیں لفٹ ہی نہیں دے رہے ہیں حفیط الرحمن کو چاہئے کہ وہ وزیر پانی وبجلی کی بات سنیں اور سکردو میں بجلی کے مسئلے کو حل کرائیں حکومت نے سو دنوں میں بجلی کی لود شیدنگ ختم کرنے کاوعدہ کیا تھا مگر ڈیڑھ سال کے عرصے میں بجلی ہی غائب کر دی صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ سکردو شہر کو لاوارث چھوڑدیا گیاہے واپڈا کے تمام بجلی گھر خراب ہو چکے ہیں لیکن بجلی گھروں کی مرمت کیلئے حکومت ایک پیسہ فراہم نہیں کر رہی ہے اور جھوٹ کا سہارا لے رہی ہے بجلی کے طویل ترین بریک ڈاؤن کے باعث تجارتی مراکز بند ہو رہے ہیں تاجر دیوالیہ ہو رہے ہیں گھریلو مشکلات خطرناک حد تک بڑھ گئی ہیں ایسا لگتا ہے کہ صوبائی حکومت نے سکردو شہر اور مضافاتی علاقوں کو لاوارث چھوڑ دیا ہے انہوں نے کہاکہ سی پیک میں گلگت بلتستان کو نظرانداز کیا جارہاہے ان باتوں میں کوئی حقیقت نہیں ہے کہ ہمارے چار منصوبوں کو سی پیک میں شامل کیا گیا ہے وزیر اعلیٰ بتائیں کہ انہیں چین جا کر سکردو روڈ اور شغرتھنگ پاور پراجیکٹ کو سی پیک میں شامل کرنے کا خیال کیوں نہیںآیا ؟انہوں نے کہاکہ منظم سازش کے تحت بلتستان کو ترقیاتی میدان میں پیچھے دھکیلا جارہاہے منتخب نمائندے پر کشش تنخواہیں اور ٹی اے ڈی اے لے کر مزے کر رہے ہیں ان کے اندر وزیر اعلیٰ حفیظ الرحمن کے سامنے احتجاج کرنے کی کوئی جرأت اور ہمت نہیں ہے بلتستان کے اراکین اسمبلی اور کونسل کی مجرمانہ خاموشی اور بے غیرتی کی وجہ سے ہمارے مسائل سنگین ہو رہے ہیں وفاق میں ایک سال بعد مسلم لیگ ن کی حکومت ختم ہو رہی ہے وفاقی حکومت کے خاتمے کے بعد صوبائی حکومت کو گھاس ڈالنے والا کوئی نہیں ہوگا بلتستان کے منتخب نمائندے وفاق میں مسلم لیگ ن کی حکومت کے خاتمے سے قبل سکردو روڈ کی تعمیر کیلئے حکومت پر دباؤ بڑھائیں ورنہ وفاقی حکومت کے خاتمے کے بعد کچھ نہیں ہوگا پھر افسوس کرنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے روڈ کی تعمیر ایک سال کے اندر شروع نہ ہوئی تو سمجھو کہ بلتستان کے عوام کیلئے روڈ خواب بن جائے گا انہوں نے کہاکہ آئینی حیثیت کے تعین کیلئے لیت ولعل سے کام لیا جارہاہے اس مقصد کیلئے جو کمیٹی بنائی گئی تھی وہ کمیٹی غیر فعال ہو گئی ہے عوام آئینی حیثیت کے بارے میں بالکل ناامید ہو گئے ہیں انہوں نے کہاکہ ہر طرف مسائل ہی مسائل ہیں ان کے حل کیلئے حکومت کچھ نہیں کر رہی ہیتحریک انصاف آئینی حقوق کے حصول سکردو روڈ کی تعمیر اور بجلی کے مسئلے کے حل کیلئے بھر پور احتجاجی تحریک شروع کرے گی عوام شرکت کو یقینی بنائیں۔

Share Button