تازہ ترین

Marquee xml rss feed

مشیرِوزیراعظم کا اختیارات سے تجاوز؛ اہل خانہ کا رعایتی ٹکٹوں پرمختلف ممالک کا مفت سفر-ہیواوے نے نیا چار کیمروں والا انتہائی سستا اسمارٹ فون متعارف کرا دیا-دوسری شادی کرنیوالے شوہر کو6ماہ قید و ایک لاکھ جرمانے کی سزا-گوجرخان، وارڈ نمبر 14صندل روڈ پر قتل کی واردات ، 36سالہ شخص کی لاش گھر سے بر آمد-گوجرخان، ہونہار طالب علم حسیب بٹ کا اعزاز-گوجرخان، گورنمنٹ امجد عنایت جنجوعہ شہید ہائی سکول بھاٹہ کا اعزاز-گورنمنٹ بوائز ہا ئی سکول زرعی فارم راولپنڈی کے ہونہار طالب علم حیان علی خان کی مقابلہ حسن قرائت میں راولپنڈی ڈویژن میں پہلی پوزیشن-مرکزی قبرستان کی سڑک کی تعمیر کیلئے فنڈزفراہم کرنے پر آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی کے ممبر حافظ احمد رضا قادری ایڈووکیٹ کا شکریہ-ْلاہور کے احتجاجی جلسے میں عمران خان او رشیخ رشید نے جو پارلیمنٹ کیخلاف بازاری اور گھٹیا زبان استعمال کی،شدید مذمت کرتے ہیں،پارلیمنٹ پر لعنت بھیجنے وا لے اسی پارلیمنٹ ... مزید-سپریم کورٹ کے حکم پر میونسپل کارپوریشن مری نے آپریشن کیلئے تیاریوں کو حتمی شکل دے دی

GB News

سیکورٹی کاقیام ایک مسلسل عمل ہے

Share Button

آئی جی گلگت بلتستان کیپٹن ظفر اقبال اعوان نے کہا ہے کہ گلگت میں سیکیورٹی کا نظام مربوط بنایا گیا ہے سیکیورٹی اداروں کی کوششوں سے خطہ امن کا گہوارہ بن چکا ہے’امن کو برقرار رکھنے کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز کو کردار ادا کرنا ہو گا۔یہ درست ہے کہ امن کے قیام کیلئے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں رکھا جانا چاہیے کیونکہ ہم حالت جنگ میں ہیں۔ہمیںسب سے پہلے اندرونی طور پر ہر اس سرگرمی کو روکنا ہو گا، جس کے ذریعے انسانی رویہ میں تشدد کا امکان ہو۔ چاہے یہ تشدد سیاسی نوعیت کا ہو مذہبی نوعیت کا یا پھر تعلیمی نوعیت کا، سیکیورٹی کا مطلب ہرگز یہ نہیں کہ آپ بندوق اٹھا کر کھڑے ہو جائیں۔ سیکیورٹی کی ابتدا تو انسانی سوچ سے کی جا سکتی ہے۔ ہر قسم کے ایسے لٹریچر پر کڑی پابندی لگا دینی چاہئے، جس میں نظریاتی تشدد کا پرچار کیا گیا ہو چاہے وہ لٹریچر سیاسی ہو یا مذہبی،عسکری تربیت ریاست کا کام اور سرکاری عسکری اداروں کی ذمہ داری ہے، اگر کوئی عسکری طبیعت کا حامل ہے تو اسے چاہیے کہ وہ اپنی صلاحیتوں کو ملک و قوم کیلئے وقف کر دے نجی عسکری تربیت کے مراکز کے خلاف سخت کارروائی کرکے ایسے ادارے قائم کرنے والوں کے خلاف زبردست قانونی چارہ جوئی کی جائے۔ ریاست کی اولین ذمہ داری ہے کہ وہ ایسے تمام افراد کو اپنی حراست میں لے لے جو پرامن اسلامی تشخص کو خونخوار اور مکروہ تعارف میں بدلنے کی کوشش کریں۔ ہر قسم کی غیر سرکاری عسکری تربیت پر پابندی لگا دی جائے مذہبی عسکریت پسندوں کے جلسے جلوسوں پر پابندی لگا دی جائے اور خلاف ورزی پر گرفتار کرلیا جائے یہی امن کے قیام کا واحد حل ہے۔

Facebook Comments
Share Button