تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پاک افغان سرحدی علاقے میں ایک اور امریکی ڈرون حملہ، 2 خطرناک دہشت گردوں کو ہلاک کر دیے جانے کی اطلاعات-مستونگ کے مرکزی بازارمیں دھماکے کی اطلاع-آرمی چیف کا آرمی میڈیکل سنٹرایبٹ آباد کا دورہ،ڈاکٹرزاورمیڈیکل سٹاف کی تعریف یاد گارشہداء پرحاضری اور پھول بھی چڑھائے،دہشتگردکی جنگ میں آرمی میڈیکل کورنے قیمتی جانیں ... مزید-طارق فضل چوہدری کی طرف سے وفاقی دارالحکومت میں ایمبیسی روڈ پر درختوں کی کٹائی کا نوٹس لینے پر سی ڈی اے نے رپورٹ پیش کر دی-عمران خان سیاست میں اناڑی ہیں، انہیں آرام کی ضرورت ہے ،ْ دانیال عزیز فرد جرم عائد ہونے کے بعد نیب ٹیم کون سے ثبوت تلاش کرنے کے لئے لندن گئی ہوئی ہے ،ْ میڈیا سے گفتگو ... مزید-وزیر اعظم کی قندھار میں افغان سکیورٹی اہلکاروں پر ہونے والے دہشت گردوں کے حملہ کی سخت مذمت-ایف آئی اے کی جدید بنیادوں پر تنظیم کی جائے،نئی ٹیکنالوجی سے جرائم پر قابو پانے کی صلاحیت حاصل کی جائے، انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کیلئے موثر اور عملی اقدامات اٹھائے ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے نیب کو کرپٹ ترین ادارہ قراردے دیا نیب کرپشن ختم کرنے کی بجائے کرپشن کا گڑھ بن چکا،مشرف اور بعد کے ادوارمیں نیب کو سیاسی مقاصدکیلئے استعمال ... مزید-سیکرٹری وزارتِ انسداد منشیات اقبال محمود کا اے این ایف ہیڈکوارٹر راولپنڈی کا دورہ-ن لیگ خیبرپختونخواہ دوست محمد خان نے پیپلزپارٹی میں شمولیت کا اعلان کردیا

GB News

گلگت بلتستان میں سیاحت کے فروغ کیلئے نیا سسٹم

Share Button

گلگت بلتستان کے وزیر سیاحت فدا خان نے کہا ہے کہ گلگت بلتستان میں سیاحت کی ترویج کیلئے آن لائن سسٹم متعارف کروایا جارہاہے’ ٹورازم کے فروغ اور سیاحوں کو گائیڈ کرنے کے حوالے سے جدید خطوط پر محکمہ سیاحت کو استوار کیاجائیگا ‘ انہوں نے کہا کہ سیاحوں کیلئے پی ڈبلیو ڈی کے ریسٹ ہائوس پرائیویٹ کرلئے جائینگے اور جتنے بھی ہوٹلز مالکان ہیں ان کواپنے ریٹ درمیانہ رکھنے کیلئے ایڈمنسٹریشن کے ذمہ داروں کے ساتھ رابطہ کیاگیا ہے تاکہ جو ٹورسٹ آتے ہیں انکو لوٹنے کا سلسلہ ختم ہو سکے’کچھ پرائیویٹ کمپنیوں نے سرکاری زمین دینے کا کہا ہے تاکہ وہ وہاں ہوٹلز بنائینگے زمین دینے کے حوالے سے نجی کمپنیوں اور محکمہ سیاحت کے ساتھ لیز پر زمین دینے کے حوالے سے کام ہوگا، محکمہ سیاحت کاکام ہوٹلز بنانا یا ہیلی کاپٹر مہیا کرنا نہیں ہے بلکہ سیاحوں کو سہولیات مہیا کرنا ہے ‘گلگت بلتستان کے تمام اضلاع میں ٹورسٹ انفارمیشن سنٹرز کاقیام عمل میں لایاجائیگا ،ملکی و غیر ملکی سیاحوں کو فول پروف سیکیورٹی فراہم کرنے کے حوالے سے ٹھوس اقدامات اٹھائینگے ٹورازم پرموشن کیلئے عوام کا بھی فرض بنتا ہے کہ وہ حکومت کے ساتھ تعاون کریں ۔ٹورازم کے فروغ کیلئے حکومتی اقدامات کو حوصلہ افزاء قرار دیا جا سکتا ہے اس شعبے کی ترقی انتہائی ضروری ہے تاکہ دنیا بھر کے سیاحوں کو ان علاقوں کی طرف راغب کیا جا سکے’ پاکستان کو اللہ نے سمندری ساحل، ریتلے ریگستان وتھر، دنیا کی عظیم پہاڑی چوٹیاں، زرخیز زمینوں کے میدانوں، مختلف متعدل موسموں اور دریائوں جیسی نعمتوں سے نواز رکھا ہے۔دنیا میں بدلتے ہوئے علاقائی وثقافتی حالات کے تناظر میں سماجی، معاشرتی، صنعتی ترقی کے بعد بہت سے ممالک نے اپنی ملکی سیاحت کو فروغ دے کر سیاحت کو بھی انڈسٹری کا درجہ دے دیا ہے اور اکثر ممالک سیاحت کو اپنی معیشت کی ریڑھ کی ہڈی سمجھتے ہیں۔ سری لنکا نے اپنے اندرونی معاملات کو سدھارنے کے بعد پچھلے چند سالوں میں بڑی تیزی سے اپنی سیاحت کو فروغ دیا ہے اور وہ دنیا بھر سے آنے والے سیاحوں کی میزبانی کر رہا ہے۔ اور ممالک نے بھی پچھلے کچھ عرصہ میں دنیا بھر کے سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرلیا ہے۔ ڈبلیو ٹی اوکی رپورٹ کے مطابق 2016میں دنیا بھر کے سیاحوںکی تعداد ایک ارب سے تجاوز کرگئی ہے مختلف ممالک سال میں موسم کے لحاظ سے ٹورازم فیسٹیول مناتے ہیں اور اپنی قومی ایئر لائن کی مدد سے مختلف پیکجز کا اعلان کرکے سیاحت کے شوقین لوگوں کو اپنے ملک کی سیاحتی سرگرمیوں کی طرف متوجہ کرتے ہیںکیونکہ سیاحت سے زرِ مبادلہ آنے کے ساتھ ساتھ معیشت کو بھی فروغ ملتا ہے اور علاقائی سرگرمیوں میں بھی تیز ی آجاتی ہے جو ان علاقوں کے رہائشیوں کے لئے بھی معاشی ترقی کا سبب بنتی ہے۔بد قسمتی سے ہمارے ہاں فارن ٹورسٹ نہ ہونے کے برابر ہیں۔ہمارے شمالی علاقہ جات کے حسن کو دنیاوی جنت کہا جاتا ہے اور بے تحاشا قدرتی مناظر انسان پر سکتہ طاری کردیتے ہیں۔ہم نے سیاحت کوغیر ملکی سطح پر زیادہ اہمیت نہیں دی جس کی وجہ سے دنیا کے اکثر ممالک کے لوگ یہاں کے سیاحتی حسن سے ناواقف ہیں۔ سیاحتی سرگرمیوں میں اضافے کیلئے ضروری ہے کہ حکومتی سطح کے ساتھ ساتھ پرائیویٹ سیاحتی کمپنیوں کو بھی اس میدان میں زیادہ سے زیادہ اپنا حصہ ڈالناچاہیے اور غیر ملکی سیاحوں کیلئے سپیشل سیکیورٹی فورس تشکیل دی جائے علاوہ ازیں سیاحت کے فروغ کیلئے مناسب قانون سازی کرکے سیاحوں کو رہائشی و سفری سہولیات کے ساتھ ساتھ سیکیورٹی کا تحفظ دے کر اپنی طرف راغب کیا جائے تاکہ غیر ملکی سیاحتی گروپس کو مکمل تحفظ فراہم ہوسکے اور سیاحوں کو بھی بِلا خوف شمالی علاقہ جات سمیت بے شمار سیاحتی مقامات پر گھومنے کا موقع مل سکے۔اس طرح دنیا بھر میں پاکستان کا مثبت چہرہ واضح ہوگا اور ملکی معیشت میں بھی ٹورازم کی وجہ سے بہتری آئے گی اور ٹورازم ایک انڈسٹری بن کے ابھرے گی۔صوبے میں سیاحت کے فروغ کیلئے سیاحوں کو تحفظ کا اطمینان دلانا بنیادی مسئلہ ہے ۔ جب تک اس امر کا اطمینان نہ ہو سیاحوں کو متوجہ نہیں کیا جاسکتا۔ اس مقصد کے لئے ضروری ہوگا کہ صوبے میں سیاحوں کے قافلوں اور ٹولیوں کو مراکز سیاحت اور ہوٹلوں میں خصوصی تحفظ دیاجائے۔ تاریخی مقامات کی سیر کرنے والوں کو دورے کے موقع پر معلومات کی فراہمی اور رہنمائی کے ساتھ ساتھ ان کی حفاظت کا بھی بندوبست ہونا چاہئے تاکہ طلبا محققین اور عام سیاح بلا خوف و خطر ان مقامات کا دورہ کرسکیں۔ صوبے میں سیاحوں کی آمد و رفت میں آسانی کے لئے خصوصی ٹرانسپورٹ اور گائیڈز کا بندوبست ہونا چاہئے۔ اس ضمن میں موجود سہولیات میں بہتری لائی جائے۔ ہم جانتے ہیں کہ سیاحت سے بلواسط یا بلاواسطہ لاکھوں بیروزگار نوجوانوں کو روزگار مل رہا ہے اور اگر سیاحت کو فروغ نہیں ملے گا تو اس کا براہ راست اثر یہاں کی معیشت پر پڑ سکتا ہے جس سے لوگوں کو مشکل ترین صورتحال کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔اس لیے سیاحتی مقامات کو بھی جاذب نظر بنانا ضروری ہے حکومت کو بھی اپنی طرف سے سیاحت کے فروغ کیلئے کوششوں کوجاری رکھنا ہو گا محض باتیں کر لینے یا خواب دیکھنے سے سیاحت ترقی نہیں کرے گی۔ ہوٹل مالکان اور اس شعبے سے وابستہ افراد کو بھی یہ ہدایت دی جانی چاہیے کہ وہ سیاحوں سے مناسب ریٹس وصول کریں جبکہ ٹرانسپورٹروں پر بھی اسی طرح کی ذمہ داریاں عائد ہوتی ہیں کہ وہ سیاحوں سے مناسب کرایہ وصول کریں سیاحت سے وابستہ افراد کے علاوہ عام لوگوں کو بھی اس بات کا خاص خیال رکھنا چاہئے کہ وہ سیاحوں کے ساتھ اچھا برتائو کریں اور ان کی ضرورتوں کا پورا پورا خیال رکھیں تاکہ جو سیاح یہاں سے جائیں وہ اچھاتاثر لے کرجائیں اور ہر برس زیادہ سے زیادہ سیاح یہاں کی سیاحت پر آسکیں ۔گلگت بلتستان میں سیاحتی شعبے میں ترقی کے وسیع مواقع ہیں اور اس میں صحیح معنوں میں کام کرکے لوگوں کیلئے روزگار اور آمدن کے مواقع پیدا کیے جاسکتے ہیں یہ سیاحوں کیلئے ایک پرکشش علاقہ ہے ‘ہم دیکھتے ہیں کہ دنیا بھر میں سیاحت کے فروع کیلئے متعدد اقدامات کیے جاتے ہیں ہمیں بھی سیاحت کے فروغ کیلئے حالات کی مناسبت سے ایسے فیصلے کرنا ہوں گے جو بیرونی سیاحوں کو یہاں آنے پر راغب کر سکیں۔

Facebook Comments
Share Button