تازہ ترین

Marquee xml rss feed

عید کے موقع پر پولیس ش�داء کے ا�لخان� کو یاد رکھا جائے، صوبائی وزیر داخل� سندھ-پاکستانی نوجوان با صلاحیت اور اعلیٰ درج� کی ذ�انت کے حامل �یں، گورنر سندھ-پاسبان لیاری زون کے تحت �زاروں مستحق بچوں میں عید کے لباس تقسیم-لا�ور : اے ایس ای� کی کاروائی مسا�ر کے استقبال کے لئے آنے والے ش�ری کے قبضے سے ایک پسٹل، 2 میگزین اور 5 گولیاں برآمد-لا�ور :ایس پی سول لائن علی رضا کی سربرا�ی میں سکیورٹی خدشات کے باعث پی سی �وٹل میں �نگامی مشقیں کی گئی-لا�ور :عید ال�طر کے قریب آتے �ی گوشت، پھلوں اور شبزیوں کی قیمتوں میںاضا�� �و گیا-لا�ور : صوبائی دارلحکومت میں لگائے گئے رمضان بازار ایک روز قبل �ی ختم کر دئیے گئے جس کے باعث ش�ری م�نگے داموں اشیاء ضروریات خریدنے پر مجبور �و گئے �یں، مختل� علاقوں میں ... مزید-لا�ور : تھان� �یکٹری ایریا کی حدود میں موٹر سائیکل سوار شخص کی �ائرنگ 2 لڑکیوں پلوش� اور مشعل کر زخمی کر دیا-لا�ور : پولیس کی کاروائی منشیات �روش گر�تار ، اس کے قبضے سے 200 لٹر شراب برآمد-لا�ور :صوبائی دارلحکومت لا�ور میں علاق� غیر سے آنے والی گاڑی سے بڑی تعداد میں بارودی مواد برآمد کر کے 2 ملزمان کو گر�تار

GB News

انصاف کی فراہمی کے لئے بنچ اور بار کے درمیان مضبوط تعلق ضروری ہے، جسٹس رانا شمیم

سپریم اپیلٹ کورٹ گلگت بلتستان کے چیف جج جسٹس رانا محمد شمیم خان نے کہا ہے کہ انصاف اور اچھائی کے لئے بنچ اور بار کا مضبوط تعلق ضرورت ہے ۔ ملک کے دوسرے حصوں کی نسبت گلگت بلتستان کے وکلاء محنت اور تیاری کے ساتھ عدالتوں میں پیش ہوتے ہیں جو کہ مثبت رجحان ہے ۔ نئے وکلاء سپریم اپیلٹ کورٹ کے رولز کا مطالعہ کریں ۔ عدالت عظمی میں نئے وکلاء کو لائسنس تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہو ئے معززچیف جج نے کہا کہ گلگت بلتستان کی 15 لاکھ آبادی میں 60 وکلاء کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ آپ سپریم اپیلٹ کورٹ کے وکیل ہیں آپ اچھی وکالت کرتے ہوئے اپنی سالمیت اور وقار کو قائم رکھیں تاکہ اچھے وکلاء کے طور پر آپ کا نام لیا جا سکے انہوں نے کہا کہ وکلا ء کا کام فیصلے کرنا نہیں ہے بلکہ انصاف کے لئے ججوں کی مدد کرنا ہے ۔ وکلا صاحبان اپنے سائلوں کو صحیح مشورے دیں غلط مشورہ دے کر کوئی بھی وعدہ نہ کریںتاکہ شرمندگی کا سامنا نہ ہو ۔ انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کے وکلاء زیادہ محنت اور تیاری کے ساتھ عدالتوں میں پیش ہوتے ہیں جو کہ یہاں کے وکلاء میں مثبت رجحان ہے جسٹس رانامحمد شمیم نے کہا کہ وکلاء کے مسائل سے آگاہ ہیں مختلف عدالتوں میں ایک ساتھ کیسز کی وجہ سے وکلا کو زیادہ بھاگ دوڈ کرنی پڑتی ہے ۔ ایسے میں ہماری کوشش ہے کہ وکلا ء کو ان کے کیسز کے بارے میں ایک ماہ قبل ہی پتہ چلے ایک ہفتہ قبل ان کے دفاتر اور گھروں کے پتہ پر لیٹرز بھجوا دیں اور ایک دن پہلے انہیں موبائل پیغام کے زریعے سے مطلع کیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ سپریم اپیلٹ کورٹ کے وکلاء تنظیموں اور ایڈو کیٹ جنرل کے لئے جگہ فراہم کر دی گئی ہے جبکہ گلگت اور سکردو میں وکلا ء کے لئے پلاٹس کی کوشش کر رہے ہیں ایسی زمینیں وکلاء کو الاٹ کی جائیں جو کہ کہ متنازعہ نہ ہو اس سلسلے میں حکومت نے یقین دہانی بھی کرائی ہے ۔ اس سے قبل سپریم اپیلٹ کورٹ کے جج جسٹس جاوید اقبال اور بار کونسل کے نائب چیئر مین منظور ایڈو کیٹ نے بھی خطاب کرتے ہوئے لائسنس حاصل کرنے والے وکلاء کو مبار کباد دی انہوں نے کہا کہ بار اور بنچ کا چولی دامن کا ساتھ ہے ۔ وکلاء محنت و لگن کے ساتھ کام کریں تقریب کے دوران سپریم اپیلٹ کورٹ کے چیف جج جسٹس رانا محمد شمیم نے 24 وکلاء میں لائسنس تقسیم کئے ۔جس سے سپریم اپیلٹ کورٹ کے لائسنس یافتہ وکلاء کی تعداد 58 ہو گئی ہے تقریب کے دوران سیکریٹری قانون رحیم گل سمیت وکلاء کی کثیر تعداد شریک تھی

Share Button