GB News

نئے پاکستان کا حشر دیکھنا ہے تو خیبر پختونخوا میں جاکر دیکھیں، نواز شریف

Share Button

وزیراعظم محمد نوازشریف نے مخالفین کو کڑی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ ا ن کو پاکستان کی ثقافت اور روایات کاپتہ اور خیال نہیں، یہاں بڑوں کے احترام اور چھوٹوں سے شفقت سے پیش نے کی روایت ہے، یہ لوگ جھوٹ بولنے کے ماہر ہیں ، ا ن کو رشتوں اور پیار کا کوئی تقدس نہیں، مخالفین الزام تراشی کرتے ہیں، ، مخالفین کا اپنی زبان پر کنٹرول نہیں رہتا ، انہیں نہیں پتہ کہ پاکستان میں بڑوں کے ادب اور چھوٹے سے شفقت اور خواتین سے احترام کا کلچر ہے، ان کے منہ سے کس طرح کے الفاظ نکلتے ہیں ان کو نہیں پتہ،میں چیچہ وطنی میں دھرنا دینے نہیں آیا بلکہ عوام کی خوشحالی اور ترقی کے منصوبے لیکر آیا ہوں ، ہم صرف پنجاب ہی نہیں بلکہ دھرنے دینے والوں کے صوبے میں بھی سڑکیں بنا رہے ہیں ، سندھ اور بلوچستان میں بھی ترقیاتی منصوبے تیزی سے مکمل کر رہے ہیں ، خیبرپختونخوا کے لوگ بھی حیران ہیں کہ پنجاب میں میٹرو بھی بن رہی ہے ، سٹرکیں بھی تعمیر ہو رہی ہیں ، بجلی کے کارخانے بھی لگ رہے ہیں جبکہ نیا پاکستان کا نعرہ لگانے والوں کے صوبے میں پرانے سکول ، پرانے ہسپتال اور ٹوٹی پھوٹی سڑکیں ہیں ،یوریا پہلے 1800کا ہوتا تھا آج 1400روپے کا ہے ، پہلے ڈی اے پی 4000روپے تھی اور آج 2500روپے کی ہے ، ٹیوب ویلوں کی بجلی کا ریٹ 18روپے یونٹ سے کم ہو کر 5روپے کا رہ گیا ہے، چیچہ وطنی کو لاہور سے ملتان جانیو الے موٹروے سے ملایا جائے گا ، چیچہ وطنی میں ویٹرنری یونیورسٹی کا کیمپس بنایا جائے گا ، شہر کی تعمیر وترقی کیلئے 25کروڑ روپے ، سڑکوں کی تعمیر کیلئے 25کروڑ روپے اور بجلی کی کمی کو پورا کرنے کیلئے 10کروڑ روپے کی گرانٹ لایا ہوں ، چیچہ وطنی ٹیکنیکل انسٹیٹیوٹ اور ووکیشنل ٹریننگ انسٹیٹیوٹ کو اپ گریڈ کیا جائے گا ، گرلز اور بوائز کے گورنمٹ ڈگری کالجز میں ایم اے کی کلاسز کا اجراء کیا جائے گا ، یہاں سوئی گیس کی فراہمی کا بھی اعلان کرتا ہوں ،۔وہ جمعرات کو یہاں چیچہ وطنی میں عوامی جلسے سے خطاب کر رہے تھے ۔ وزیراعظم نوازشریف نے کہا ہے کہ آ ئندہ وفاقی بجٹ کیلئے بلند ،پائیدار اور جامع اقتصادی ترقی کے حوالے سے خصوصی توجہ دی جائے گی،انہوں نے کابینہ کے ارکان کو ہدایت کی کہ وہ اقتصادی ترقی کو بڑھانے کیلئے ترجیحات کا تعین کریں اور اضافی ملازمتوں کے مواقع پیدا کرنے کے حوالے سے اقدامات کریں، ارکان ہنڈی اور غیر رسمی چینلز کے ذریعے رقوم کی منتقلی کی حوصلہ شکنی کے حوالے سے اقدامات تجویز کریں تاکہ ریگولر چینلز کے ذریعے ترسیلات زر میں اضافہ کیا جا سکے،انہوں نے ہدایت کی کہ حکومت انسانی اور فزیکل انفراسٹرکچر کی تعمیر کے حوالے سے سرمایہ کاری بڑھانے کے لئے پر عزم ہے اس حوالے سے آئندہ بجٹ ترقیاتی بجٹ میں اضافہ اور غربت میں کمی حکومت کی اولین ترجیح ہوگی،وزیراعظم نوازشریف نے اس بات کو سراہا کہ پاکستان سٹاک ایکس چینج میں سرمایہ کاری جلد 100ارب ڈالر کی حد کوچھو جائیگی جبکہ وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ حکومت نے میڈیم ٹرم میکرو اکنامک سٹریٹجی مرتب کی ہے تاکہ زرمبادلہ کے ذخائر کو بڑھایا جا سکے اور مالیاتی خسارہ کم کیا جا سکے، مالیاتی خسارہ کم کر کے جون 2020تک جی ڈی پی کا4فیصد کیا جائے گا، آئندہ بجٹ میں سی پیک ،توانائی ، مواصلات ، غربت میں کمی کے شعبوں میں سرمایہ کاری پر توجہ دی جائیگی ، مالی سال 2017-18کا بجٹ اقتصادی ترقی کی شرح 6فیصد رکھی جائیگی اورمحصولات میں اضافے کیلئے کوششیں بڑھائی جائیں گی، حکومت کسانوں کو زرعی پیداوار بڑھانے کیلئے مراعات دینے کیلئے پر عزم ہے ۔انہوں نے آگاہ کیا کہ وزیراعظم کا زرعی شعبے کے پیکج سے مثبت نتائج سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں ،گنا، گندم اور مکئی کی اچھی فصل پیدا ہوئی ہے۔جمعرات کو وزیراعظم نوازشریف کی صدارت میں وفاقی کابینہ کا بجٹ حکمت عملی پیپر برائے 2017-20کا جائزہ لینے کیلئے اجلاس ہوا۔ وزیراعظم نوازشریف نے کہا کہ آئندہ بجٹ کیلئے بلند ،پائیدار اور جامع اقتصادی ترقی کے حوالے سے خصوصی توجہ دی جائے گی ۔انہوں نے کابینہ کے ارکان کو ہدایت کی کہ وہ اقتصادی ترقی کو بڑھانے کیلئے ترجیحات کا تعین کریں اور اضافی ملازمتوں کے مواقع پیدا کرنے کے حوالے سے اقدامات کریں ۔

Facebook Comments
Share Button