تازہ ترین

Marquee xml rss feed

شہبازشریف بغیر پروٹوکول ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال چنیوٹ پہنچے آپ کے دوروں سے ڈاکٹروں اورعملے کے روئیے میں مثبت تبدیلی آئی ہے مریضوں اوران کے لواحقین کی وزیراعلیٰ ... مزید-صوبائی حکومت نے اداروں میں سیاسی مداخلت ختم کی جس سے اداروں کی کارکردگی میں نکھار آیا ،پرویزخٹک ادارے اب ڈیلیور کرنے لگے ہیںاور خواص کی تابع فرمانی کی بجائے عوام کی ... مزید-پاکستان گھومنے گئی تھی ،جب برا وقت آتا ہے تو دماغ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے‘ عظمیٰ احمد ایسا کچھ تھا نہیں کہ ہم اتنی جلدی شاد ی کر لیں گے ، بس یہی خیال تھا پاکستان دیکھنا ہے ... مزید-وزیراعظم نواز شریف تلاوت قرآن پاک شروع ہوتے ہی قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے لئے ایوان میں پہنچ گئے-وفاقی بجٹ صرف الفاظ کا ہیر پھیر ہے جس سے عوام کو دھوکہ دیا گیا ہے‘اعجاز چوہدری نواز حکومت نے عوام دشمن بجٹ پیش کر کے یہ ثابت کر دیا ہے کہ انہیں غریب اور عام آدمی کی کوئی ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب کا ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال چنیوٹ کابغیر پیشگی اطلاع اور بغیر پروٹوکول اچانک دورہ، انتظامیہ لاعلم رہی ایمرجنسی اوردیگر وارڈکا معائنہ،مریضوں کی عیادت ... مزید-دیپیکا پڈوکون فلم ’’بدلاپور2 ‘‘ میں مرکزی کردار ادا کریں گی-ایشوریہ رائے بچن فلمساز مانی رتنم کی نئی فلم میں کام کریں گی-کراچی:کراچی ملک کا معاشی حب اور ترقی کا پیمانہ ہے ، شہر کی ترقی پورے ملک کی خوشحالی کی ضمانت ہے،محمد زبیر مجموعی قومی آمدنی میں سب سے زیادہ حصہ دینے والے کراچی کو عالمی ... مزید-کراچی:وفاقی حکومت ہائر ایجوکیشن کمیشن کے بجٹ میں مزید اضافہ کررہی ہے،محمد زبیر جس سے تعلیم کے فروغ اور تحقیق کے کاموں میں مزید اضافہ ہوگا ، وفاقی حکومت اعلیٰ تعلیم کے ... مزید

GB News

جدید طریقہ تدریس کے تقاضے

شگر کے ڈپٹی ڈائریکٹر ایجوکیشن کا کہنا ہے تعلیم ہمارے لیے زندگی و موت کا مسئلہ ہے’تعلیمی میدان میں پیشرفت کے بغیر ہم نہ صرف اقوام عالم میں پیچھے رہ جائیں گے بلکہ ہمارا وجود بھی خطرے میں پڑ جائے گا’ہمیں روایتی طریقہ تدریس سے نکل کر جدید طریقہ تدریس اور ٹیکنالوجی کو استعمال میں لا کر طریقہ تدریس کو موثر بنانے کی ضرورت ہے۔ یہ درست ہے کہ جب تک ہم جدید دور کے تقاضوں کے مطابق تعلیم کو ہم آہنگ نہیں کریں گے عہد حاضر کا ساتھ نہیں دے سکیں گے۔تدریس ایک با کمال اور تخلیقی شعبہ ہے۔ درس و تدریس تخلیقی عمل سے گزر کر ہی تاثیر کا درجہ پاتے ہیں۔ موثر تدریس کے لئے استاد کواپنے مضمون پرمکمل لیاقت کے علاوہ تدریسی طریقوں اور مہارتوں سے بھی واقف ہونا ضروری ہوتا ہے۔اناتول فرانس کے مطابق فن تدریس کا اہم مقصد طلبہ میں فطری تجسس کی بیداری ہے تاکہ وہ اپنی آنے والی زندگی آسودگی اور اطمینان سے بسر کر سکیں۔ایک منصوبہ بند تدریس کے ذریعے جہاں فطری تجسس کے سوتے پھوٹتے ہیں وہیں تخلیقی فکر کی بنیادیں بھی استوار ہوتی ہیں۔بچوں میں تخلیقی فکر کو مہمیز کرنے میں نصاب سے زیادہ اساتذہ کا کردار اہمیت کا حامل ہوتا ہے۔تعلیم ایک بہت ہی وسیع میدان ہے جہاں ہر دن نت نئے تجربات اور نظریات وجود میں آتے رہتے ہیں۔ہر دن مختلف مشورے اور جدید اصطلاحات سے اساتذہ کو روشناس کرنا گویا محکمہ تعلیم کے لئے اب ایک عام بات ہوچکی ہے۔تعلیمی میدان میں جدت طرازی سے کام لینے کے ساتھ ساتھ ہم عصر تعلیمی نظریات سے آگہی بھی اساتذہ کے لئے ضروری ہوتی ہے۔تخلیقی تدریس کی انجام دہی کے لئے اساتذہ کودنیا بھر کی تعلیمی اور تدریسی عمل کے ارتقا میں رونما ہونے والی تبدیلیوں سے واقف ہونا ضروری ہوتا ہے۔آج تک کوئی بھی قوم اپنے تعلیمی ماہرین اور اساتذہ کی سوچ اور معیار سے زیادہ بلند نہیں ہوئی ہے ۔ اساتذہ کے معیار کے مطابق ہی معاشرے کی ترقی ہوتی ہے۔ سماج کی ترقی کے لئے ہر زمانے میں صاحب نظر اساتذہ اور تعلیمی ماہرین کی بے حد ضرورت ہوتی ہے۔اساتذہ کے لئے تخلیقی تدریس کا ادراک لازمی ہے تاکہ وہ اپنے علم کو بروقت تنقیدی اور تخلیقی انداز میں استعمال کر سکیں۔تدریس ایک دانشورانہ کام ہے۔ تخلیقی صلاحیتوں کے حامل اساتذہ اکتساب کوبلندیوں تک پہنچادیتے ہیں۔کسی بھی جماعت میں پائے جانے والے طلبہ کے تجربات ،مشاہدات ،اہلیت،فہم و ادراک کبھی بھی ایک جیسے نہیں ہوتے ہیں۔کمرہ جماعت کا یہ تنوع اکتسابی ماحول کے لئے رکاوٹ نہیں بلکہ ایک وسیلہ کا کام کرتا ہے۔ جہاں افکار و معلومات میں تنوع کے باعث طلبہ کے لئے اکتساب کا میدان وسیع ہوجاتا ہے وہیں اساتذہ کے لئے اکتسابی عمل کو مہمیز کرنے میں یہ تنوع نہایت معاون و مددگار ثابت ہوتا ہے طلبہ کی خفتہ فطری تخلیقی صلاحیتوں کی بیداری،تخلیقی فکر کی تشکیل و استحکام منظم تخلیقی تدریس کے ذریعے ہی ممکن ہے۔ہمارے اسکول طلبہ میں تخلیقی شعور و استدلال کے فروغ کے بجائے روایتی ساکت و جامد نظریات کی تبلیغ کو ہی تدریس سمجھ رہے ہیں۔ایسے تباہ کن نظریات پر تخلیقی تدریسی طریقوں سے ہی قابو پایا جاسکتا ہے۔طلبہ کی پوشیدہ فطری تخلیقی صلاحیتوں کو عیا ں کرنا ہی تعلیم کا اصل مقصد ہے۔کمرہ جماعت میں موجود ہر طالب علم پیدائشی طور پر اختراعی صلاحیتوں اور تخلیقی فکر کا حامل نہیں ہوتا لیکن اساتذہ اپنی کوشش اور جستجو سے ہر بچے میں تخلیقیت اور اختراعیت کو فروغ دے سکتے ہیں۔ایک لائق استاد ہر بچے میں ہمہ وقت تخلیقی سوچ پیداکرنے میں مصروف رہتاہے۔بچوں میں تخلیقی شعور ،تجزیہ ،تدببر اور مشاہدے کی صلاحیتوں کے فروغ میں سب سے بڑی رکاوٹ کسی بھی سماج کا بے جان ساکت و جامد نصاب تعلیم ہوتا ہے ۔تخلیقی اظہار کے بہتر وسیلوں کی عدم فراہمی کے باعث طلبہ کی تخلیقی صلاحیتں ٹھٹھر کر رہ جاتی ہے۔ یہ نقص عام طور پر ہمارے تعلیمی نظام میں پایا جاتا ہے جسے دور کرتے ہوئے ہم تعلیم کو مزید مفید اور کارآمد بناسکتے ہیں۔اساتذہ طلبہ مرکوز طریقہ ہائے تدریس اپناتے ہوئے، فرسودہ روایتی تدریسی طریقوں سے اجتناب کرتے ہوئے اکتسابی عمل کو مزید پرکشش اور پرکیف بناسکتے ہیں۔اساتذہ تخلیقی تدریس کے مقاصد سے آشنائی اور مختلف طریقہ ہائے تدریس سے کماحقہ واقفیت حاصل کرتے ہوئے نہ صرف طلبہ میں تخلیقی اظہار کو اجاگر کرسکتے ہیں بلکہ تعلیمی عمل کو مزید دلچسپ ،رنگین،متحرک اور فعال بناسکتے ہیں۔استاد تخلیقی صلاحیتوں کے فروغ کے لئے سازگار ماحول پیدا کرنے میں اگر کامیابی حاصل کر لیتا ہے تب باقی کردار ماحول خود اپنے آپ انجام دینے لگتا ہے۔اساتذہ بچوں میں معلومات کی ترسیل پر ہی اکتفا نہ کریں بلکہ ان میں شوق و ذوق پیدا کریں۔بچوں میں اگر شوق و ذوق پیدا ہوجائے تب وہ اپنی منزل خود تلاش کر لیتے ہیں۔موثر تدریسی اور تخلیقی فکر کے فروغ کے لئے سازگار ماحول کی تخلیق بے حد ضروری ہوتی ہے۔تخلیقی سوچ’طلبہ میں تخلیقی فکر کو کمرہ جماعت میں منتخب تعلیمی سرگرمیوں کے ذریعہ تشکیل دیا جاسکتا ہے۔طلبہ کو روشن لکیر پر چلنے اور روایتی فکر سے باز رکھتے ہوئے انہیں تخلیقی فکر کی جانب آمادہ کیا جاسکتا ہے۔معلوم و معروف نتائج سے آزادکر تے ہوئے طلبہ کو خول سے باہر جھانکنے کی ترغیب دی جاسکتی ہے۔طلبہ میں اکتسابی آسودگی اور تخلیقی فضا کو ہموار کرنے کیلئے اساتذہ اپنے تدریسی مواد اور طریقہ کار پر بہت زیادہ توجہ مرکوز کریں۔

Share Button