تازہ ترین

Marquee xml rss feed

مشیرِوزیراعظم کا اختیارات سے تجاوز؛ اہل خانہ کا رعایتی ٹکٹوں پرمختلف ممالک کا مفت سفر-ہیواوے نے نیا چار کیمروں والا انتہائی سستا اسمارٹ فون متعارف کرا دیا-دوسری شادی کرنیوالے شوہر کو6ماہ قید و ایک لاکھ جرمانے کی سزا-گوجرخان، وارڈ نمبر 14صندل روڈ پر قتل کی واردات ، 36سالہ شخص کی لاش گھر سے بر آمد-گوجرخان، ہونہار طالب علم حسیب بٹ کا اعزاز-گوجرخان، گورنمنٹ امجد عنایت جنجوعہ شہید ہائی سکول بھاٹہ کا اعزاز-گورنمنٹ بوائز ہا ئی سکول زرعی فارم راولپنڈی کے ہونہار طالب علم حیان علی خان کی مقابلہ حسن قرائت میں راولپنڈی ڈویژن میں پہلی پوزیشن-مرکزی قبرستان کی سڑک کی تعمیر کیلئے فنڈزفراہم کرنے پر آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی کے ممبر حافظ احمد رضا قادری ایڈووکیٹ کا شکریہ-ْلاہور کے احتجاجی جلسے میں عمران خان او رشیخ رشید نے جو پارلیمنٹ کیخلاف بازاری اور گھٹیا زبان استعمال کی،شدید مذمت کرتے ہیں،پارلیمنٹ پر لعنت بھیجنے وا لے اسی پارلیمنٹ ... مزید-سپریم کورٹ کے حکم پر میونسپل کارپوریشن مری نے آپریشن کیلئے تیاریوں کو حتمی شکل دے دی

GB News

پاکستان میں سرجیکل سٹرائیکس کے لیے 15 ماہ تک تیاری کی, بھارت کا نیا دعوی

Share Button

نئی دہلی:   بھارت کے سابق وزیر دفاع منوہر پریکر  نے ایک متنازعہ بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ مرکزی وزیر راجیہ وردھن سنگھ راٹھور سے ایک ٹیلی ویژن اینکر کے توہین آمیز سوال کی وجہ سے انہوں نے پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں سرجیکل اسٹرائیک کا فیصلہ کیا تھا۔

انہوں نے جو کہ اب گوا کے وزیر اعلی ہیں، پنجی میں جمعہ کے روز صنعت کاروں کے ایک اجتماع میں تقریر کرتے ہوئے کہا کہ ‘سرجیکل اسٹرائیک کا منصوبہ پندرہ ماہ قبل بنایا گیا تھا’۔ انہوں نے اس کی تفصیل بتاتے ہوئے کہا کہ 4 جون 20155 کو شمال مشرقی علاقے کے دہشت پسند گروپ این ایس سی این نے منی پور کے چندیل ضلع میں بھارتی فوج کے ایک قافلے پر گھات لگا کر حملہ کیا اور 18 جوانوں کو ہلاک کر دیا ۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ جب انہیں یہ اطلاع ملی تو بقول ان کے میں نے توہین محسوس کی کہ دو سو افراد کے ایک دہشت گرد گروپ نے 18 ڈوگرہ جوانوں کو ہلاک کر دیا۔ یہ فوج کی توہین تھی۔ ہم نے دوپہر اور شام میں میٹنگ کی اور پہلی سرجیکلاسٹرائیک کا فیصلہ کیا۔ 8 جون کو اسٹرائیک کی گئی جس میں بھارت میانمار سرحد پر 70-800 دہشت گرد مارے گئے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ مرکزی وزیر راجیہ وردھن سنگھ راٹھور جو کہ سابق فوجی میں، ایک ٹی وی چینل پر اس کی تفصیلات پیش کر رہے تھے۔ اینکر نے ان سے سوال کیا کہ کیا آپ کے اندر مغربی سرحد پر بھی اسی قسم کی کارروائی کرنے کی جرات اور اہلیت ہے؟پریکر کے بقول میں نے اسے بڑی شدت سے سنا اور فیصلہ کیا کہ جب وقت آئے گا تو ایسا کیا جائے گا۔ 29 ستمبر 2016 کی اسٹرائیک کی تیاری 9 جون 2015 سے شروع کر دی گئی تھی۔

خیال رہے کہ پاکستان نے سرجیکل اسٹرائیک کے بھارت کے دعوے کو بے بنیاد قرار دے کر مسترد کر دیا تھا اور کہا تھا کہ ایسی کوئی کارروائی سرے سے ہوئی ہی نہیں ہے۔ بھارت بھی حزب اختلاف کی بعض جماعتوں نے اس دعوے پر شبہ ظاہر کرتے ہوئے حکومت سے سرجیکل اسٹرائیک کا ثبوت دینے کا مطالبہ کیا تھا۔منوہر پریکر کے اس بیان پر بھارت میں نیا تنازعہ کھڑا ہوگیا۔

ایک سینیر تجزیہ کار پروفیسر اپوروانند نے کہا کہ یہ بہت خطرناک بیان ہے۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ حکومت انتہائی غیر سنجیدہ لوگوں کے ہاتھوں میں ہے۔ عوام کو اس حکومت سے محتاط رہنا چاہیے۔ کیونکہ اس ملک کے لوگ محفوظ نہیں ہیں۔ یہ سرکار ٹیلی ویژن اینکر کے سوال پر فیصلے کر رہی ہے۔ اگر ایسے سوالات پر اتنے بڑے فیصلے کیے جا رہے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہوا کہ یہ حکومت جن لوگوں کے ہاتھوں میں ہے ان میں نہ تو گہرائی ہے اور نہ ہی ٹھہرا ہے۔ ایسے لوگوں کے ہاتھوں میں حکومت کی باگ ڈور کا ہونا ملک کی بیرونی سلامتی کے لیے بھی خطرناک ہے اور اندرونی سلامتی کے لیے بھی۔

سابق وزیر اعلی عمر عبد اللہ نے بھی اس بیان پر شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے مرکز کی اسٹریٹجک سیکیورٹی پالیسی کے بارے میں سوال کیا۔ انہوں نے ٹویٹر پر کہا کہ اگر ایک نیوز اینکر کے مبینہ سوال کی بنیاد پر اتنا بڑا فیصلہ کیا جاتا ہے تو پھر اس ملک کے عوام کیسے محفوظ رہ سکتے ہیں۔

Facebook Comments
Share Button