GB News

بحیثیت رکن اسمبلی ملنے والی تنخواہ پر میرا نہیں علاقے کے غریب اور نادار افراد کا حق ہے،جاوید حسین

گلگت ( خصوصی رپورٹ) پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما و نو منتخب رکن قانون ساز اسمبلی جاوید حسین اپنی تنخواہ غریب اور نادار افراد کیلئے وقف کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ بحیثیت رکن اسمبلی ملنے والی تنخواہ پر میرا نہیں علاقے کے غریب اور نادار افراد کا حق ہے اور میں ہر ماہ کی تنخواہ ایک گائوں کیلئے دونگا گائوں کی کمیٹی مستحق بیوائوں ،یتیموں اور نادار افراد میں بلاتفریق تقسیم کرینگے انہوں نے ہفتہ کے روز انہیں ووٹ دیکر کامیاب بنانے پر سکندر آباد ،پسن اور مناپن کا دورہ کیا اور ان علاقوں کے عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ عوام نے مجھے ووٹ دیکر منتخب کیا اور میں عوام کے اعتماد کو کبھی ٹھیس نہیں پہنچائوںگا انہوں نے کہا کہ میں ہرگائوں میں ایک ایک کمیٹی بنائوںگا کمیٹی میں تمام سیاسی و مذہبی جماعتوں کے لوگ شامل ہونگے اور ان کمیٹیوں کی نگرانی میں خود کرونگا انہوں نے کہا کہ یہ کمیٹی اپنے اپنے گائوں میں موجود حقیقی مستحق اور نادار افراد کی فہرست بنائینگے اور حکومت کی جانب سے مجھے بحیثیت رکن اسمبلی ملنے والی ماہانہ تنخواہ جو 168000 روپے ہے ہر ماہ ایک گائوں کی کمیٹی کے سپرد کرونگا اور یہ کمیٹی مستحق یتیموں اور نادار افراد میں تقسیم کریگی اور یہ تنخواہ مستحق افراد کو ملے رہی ہے یا نہیں اس کی نگرانی میں خود کرونگا ،انہوں نے کہا کہ میرے حلقے کے عوام نے مجھے ووٹ دیکر رکن اسمبلی منتخب کیا ہے اور رکن اسمبلی کی حیثیت ملنے والی تنخواہ پر میرا نہیں غریب اور نادار افراد کا حق ہے انہوں نے کہا کہ میرا مشن علاقے کے عوام کو مختلف پارٹیوں میں تقسیم کرنا نہیں بلکہ ایک قوم بنانا ہے اس لئے مجھے بحیثیت رکن اسمبلی حلقے کیلئے ترقیاتی منصوبوں کی نشاندہی کا حق حاصل ہے اور میں یہ حق صرف پارٹی کارکنوں کی مشاورت سے نہیں بلکہ علاقے کے تمام لوگوں سے مشاورت سے استعمال کرونگا ،انہوں نے کہا کہ علاقے کے ترقیاتی منصوبوں کی نشاندہی میں نہیں کرونگا بلکہ گائوں کی سطح پر بنائی گئی کمیٹی جس میں تمام پارٹیوں کے لوگ شامل ہونگے وہ کریگی انہوں نے کہا کہ اب کوئی ٹھیکہ فروخت ہوگا نہ ٹھیکے کیلئے کسی ٹھیکیدار کی سفارش ہوگی تمام ترقیاتی منصوبوں کی نگرانی متعلقہ گائوں کی کمیٹی کریگی اور ترقیاتی منصوبوں کو ادھورا چھوڑنے والے ٹھیکیداروں کا محاسبہ عوام خود کریگی آئندہ نگر کے اس حلقے میں کوئی منصوبہ نا مکمل اور ادھورا نہیں رہیگا ،تمام منصوبے بروقت مکمل ہونگے ، انہوں نے کہا کہ حلقے میں جن جن ٹھیکیداروں نے پی ڈبلیو ڈی سے پیسے وصول کرکے ترقیاتی منصوبوں کو ادھورا چھوڑا ہے ان کیخلاف ہم قانونی کارروائی کرینگے اور ان نامکمل منصوبوں کو ہر صورت میں مکمل کرائینگے ،انہوں نے کہا کہ حلقے کیلئے ملنے والی سرکاری آسامیوں پر غریب اور مستحق افراد کا زیادہ حق بنتا ہے اس سے قبل سفارش کی بنیاد پر ایک گھر کے تین تین اور چار چار افراد کو سرکاری اداروں میں بھرتی کیاگیا ہے جبکہ غریب ،یتیم اور مستحق افراد کو محض سفارش نہ ہونے کی بنیاد پر نظرانداز کیاگیا ہے آئندہ ہم علاقے سے سفارش کلچر کو ختم کرینگے اور میرٹ پر عمل کرینگے البتہ غریب اور نادار بے روزگار نوجوانوں کی کمیٹی کی سفارشات کی روشنی میں ملازمت فراہم کرنے کیلئے عوام کے تعاون سے ہر ممکن کوشش کرینگے انہوں نے کہا کہ میں حلقے میں گزشتہ پندرہ سال سے سیاست میں موجود ہوں جبکہ 2015ء میں الیکشن میں حصہ بھی لیا تھا مگر مجھے حکومت کی جانب سے ایک روپیہ بھی نہیں ملا اب اگر رکن اسمبلی منتخب ہونے پر ماہانہ ایک لاکھ اٹھاسٹھ ہزار (168000) روپے تنخواہ ملتی ہے تو اس پر میرا نہیں حلقے کے غریب عوام کا حق ہے ۔

Share Button