تازہ ترین

Marquee xml rss feed

خادم حسین رضوی کا دھرنا ختم نہ کرنے کا اعلان کردیا-پی ٹی ٓئی کی مشکلات میں اضافہ، باغی رہنماوں نے خاموشی سے بڑی چال چل دی-اسحاق ڈار وطن واپس نہیں آرہے ،معاملات جوں کے توں پڑے ہیں اسلئے ملک کو فل ٹائم وزیرخزانہ کی ضرورت ہے، ایم کیوایم پاکستان اور پی ایس پی کا اتحاد ٹوٹتے ہی دونوں جماعتوں ... مزید-شہباز شریف اور چوہدری نثار کی چھٹی جبکہ شاہد خاقان اور نواز شریف میں دوریاں بڑھنے کا وقت قریب آ گیا ہے ختم نبوت کا مسئلہ اٹھا کیوں، حکومت کو راجہ ظفر الحق کی رپورٹ کو فی ... مزید-دنیا کے مشہور ترین یو سی براوزر کی گوگل پلے اسٹور سے چھٹی-سی پیک سے صوبہ بلوچستان کو سب سے زیادہ ترقی اور فائدہ ہو گا، توانائی انفراسٹرکچر کی فراہمی سے بلوچستان میں معاشی اور سماجی انقلاب آئے گا،نوجوانوں کو روزگار کے بھرپورمواقع ... مزید-پاکستان اور بھارت کے ڈی جی ملٹری آپریشنز کے مابین غیر اعلانیہ ہاٹ لائن رابطہ بھارتی فوج کی لائن آف کنٹرول کی مسلسل خلاف ورزیوں ، بے گناہ شہریوں کو نشانہ بنانے کا معاملہ ... مزید-مریم اورنگزیب کی سینئر صحافی مظہر اقبال کی ہمشیرہ اورسینئر صحافی ذوالفقار بیگ کے چچا کے انتقال پر تعزیت-شیخ رشید کی جانب سے عمران خان کو جمائما سے دوبارہ شادی کرنے کا مشورہ-دھرنا قائدین اور حکومت کے درمیان مذاکرات میں پیش رفت ، تحریک لبیک کے رہنمائوں نے شوریٰ سے مشاورت کیلئے حکومت سے وقت مانگ لیا ، حکومت کا دھرنے کے رہنمائوں کے خلاف مقدمات ... مزید

GB News

وفاقی حکومت نے سوست ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور این ایل سی کے حوالے کرنے کیلئے کوششیں تیزکردی

Share Button

اسلام آباد(شبیر حسین سے)وفاقی حکومت نے گلگت بلتستان میں پاک چین سرحد پر واقع سوست ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور نیشنل لاجسٹکس سیل(این ایل سی)کے حوالے کرنے کیلئے کوششیں تیزکردی ہے۔وفاقی حکومت نے سوست ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور این ایل سی کے حوالے کرنے سے متعلق حتمی فیصلہ کرنے کیلئے پرسوں 19 جولائی کو تمام سٹیک ہولڈرز کا اہم اجلاس طلب کیا ہے۔اجلاس میں حتمی فیصلہ کے بعد وزیر اعظم پاکستان کو باضابطہ سمری ارسال کی جائے گی جس میں سوست ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور این ایل سی کے حوالے کرنے کی سفارش کی جائے گی۔باوثوق زرائع نے بتایا کہ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبہ کے تحت دونوں ملکوں کے مابین تجارت میں اضافہ کے پیش نظر وفاقی حکومت نے گلگت بلتستان میں پاک چین سرحد پر واقع سوست ڈرائی پورٹ کو مزید توسیع دینے اور پہلے سے موجود انفراسٹرکچر کو مزید بہتر بنانے کا منصوبہ تیار کیا ہے۔جس کو عملی جامہ پہنانے کیلئے ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور نیشنل لاجسٹکس سیل کے حوالے کیا جائے گا۔اس ضمن میں وفاقی حکومت نے تمام سٹیک ہولڈرز سے ابتدائی مشاورت کرلی ہے تاہم حتمی مشاورت کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز کا اجلاس پرسوں19 جولائی کو طلب کیا گیا ہے اجلاس کی صدارت وفاقی وزیر برائے امورکشمیر و گلگت بلتستان کریں گے جبکہ اجلاس میں گلگت بلتستان حکومت ، وزارت خزانہ، این ایل سی سمیت دیگر سٹیک ہولڈرز کے نمائندے شرکت کریں گے ۔اجلاس میں حتمی فیصلہ کے بعد وزیر اعظم پاکستان کو باضابطہ سمری ارسال کی جائے گی جس میں سوست ڈرائی پورٹ کی انتظامی امور این ایل سی کے حوالے کرنے کی سفارش کی جائے گی۔ زرائع نے بتایا کہ منصوبہ کے تحت نیشنل لاجسٹکس سیل ( این ایل سی) ڈرائی پورٹ پورٹ پر مستقبل میں چائنہ پاکستان اقتصادی راہداری منصوبہ کے تحت دونوں ملکوں کے مابین تجارت میں اضافہ کو مد نظر رکھتے ہوئے نہ صرف سوست ڈرائی پورٹ کو مزید توسیع دی جائے گی بلکہ ڈرائی پورٹ پر تمام درکار سہولیات کی فراہمی کیلئے مزید انفراسٹرکچر بھی قائم کرے گی۔منصوبہ کے تحت ڈرائی پورٹ پر فیسیلیٹیشن سنٹر قائم کیا جائے گا جبکہ ایکسپورٹ ، ایمپورٹ شدہ سامان کی سٹوریج کی جگہ میں اضافہ سمیت سامان کو تولنے کیلئے جدید مشینری کی تنصیب، کارگو ہینڈلنگ مشینری کی تنصیب، دفاتر، سکیورٹی انتظامات، پانی و بجلی کی سہولیات کی فراہمی، سنٹرل ہیٹنگ سسٹم، سینیٹشن سسٹم سمیت دیگر انتظامات فراہم کئے جائیں گے۔واضح رہے کہ سوست ڈرائی کا انتظام 2004 میں جوائنٹ ونچرز کے تحت چائنہ کی سینگ جیانگ سینو ٹرانز کمپنی اور پاکستان کی سلک روٹ ڈرائی پورٹ ٹرسٹ پر مشتمل پاک چین سوست پورٹ کمپنی کو حوالے کیا گیا تھا جس میں چینی کمپنی کو ہولڈنگ شیئر 60فیصد جبکہ پاکستانی کمپنی کا ہولڈنگ شیئر 40 فیصد مقرر کیا گیا تھا۔کمپنی کو ابتدائی طور پر10 سال کیلئے پورٹ کی منیجمنٹ کی زمہ داری تھی بعد ازاں 2014میں مزید سات سال کی توسیع کی گئی تھی تاہم دونوں کمپنیوں میں اختلافات کے بعد معاملہ عدالتوں میں جانے کے بعد پورٹ کے انتظام و انصرام 2014 میں گلگت بلتستان حکومت نے لیا تھا ۔

 

Facebook Comments
Share Button