تازہ ترین

Marquee xml rss feed

سابق وزیراعظم نوازشریف کل نیب میں تفتیش کے لیے پیش ہونگے، سینئر تجزیہ کار کادعویٰ-حکومت کے گزشتہ چار سال کے دوران موثر اقدامات کے تحت ریلوے کی آمدنی میں نمایاں اضافہ ہوا ہی,ریلوے اراضی کی 95 فیصد ڈیجیٹلائزیشن مکمل کرلی ہے‘ قبضہ مافیا کے خلاف کارروائی ... مزید-ایف آئی اے اور پی ٹی اے نے عائشہ گلالئی کے عمران خان پر الزامات کی فرانزک تحقیقات کو ناممکن قرار دے دیا-بدعنوانی کی روک تھام اور لوٹی گئی رقم کی وصولی نیب کی اولین ترجیح ہے، چیئرمین نیب قمر زمان چوہدری-معیشت مضبوط نہ ہو تو ایٹم بم بھی آزادی کی حفاظت نہیں کر سکتے، سیاسی استحکام معیشت کی مضبوطی کا واحد راستہ ہے دوسروں کی جنگیں لڑتے لڑتے ہم نے اپنے معاشرہ کو کھوکھلا ... مزید-مولانا فضل الرحمان کا آرٹیکل 62,63کو آئین سے نکالنے کی حمایت سے انکار صادق اور امین کی بنیادی شقوں کو نکالنا آئین سے مذاق ہے-احتساب عدالت ، سابق وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف کے خلاف رینٹل پاور کرپشن کیس میں دلائل مکمل ، فیصلہ محفوظ-عمران خان کا خیبرپختونخواہ کے خوبصورت علاقے کوہستان کا دورہ تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل، تحریک انصاف کے سربراہ نے دنیا بھر کے سیاحوں کو پاکستان آنے کی دعوت دے دی-میاں صاحب اپنی عقلمندی کی وجہ سے آج یہ دن دیکھ رہے ہیں، خورشید شاہ ملک میں کوئی سیاسی بحران نہیں صرف ایک جماعت میں بحران ہے، چیئرمین نیب کی تقرری کیلئے بطور اپوزیشن لیڈر ... مزید-تاثردرست نہیں کہ فوج کے تمام سربراہوں کے ساتھ مخالفت رہی، محمد نوازشریف قانون کی حکمرانی پریقین رکھتاہوں،کبھی بھی اداروں کے ساتھ ٹکراؤ کی پالیسی نہیں اپنائی،سپریم ... مزید

GB News

دفتری اوقات میں کسی بھی ملازم کی غیر حاضری برداشت نہیں کی جائے گی ، حفیظ الرحمن

Share Button

گلگت(پ ر) وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے ڈائریکٹریٹ آف ایجوکیشن گلگت کا بغیر پروٹوکول ڈھائی بجے اچانک دورہ کیا ملازمین کی حاضری چیک کی۔ ڈائریکٹر ایجوکیشن، ڈپٹی ڈائریکٹر لیگل سمیت متعدد ملازمین کی غیرحاضری پر برہمی کا اظہارکرتے ہوئے نوٹسز جاری کرنے کا حکم دیا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے اپنے دورے کے موقع پر کہاکہ ملازمین ہر صورت اپنی حاضری کو یقینی بنائیں دفتری اوقات میں کسی بھی ملازم کی غیر حاضری برداشت نہیں کی جائے گی ۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ عوام کی شکایات میڈیا اور دیگر ذرائع سے موصول ہورہی ہیں کہ 2 بجے کے بعد سرکاری دفاتر میں ملازمین غیر حاضرپائے جاتے ہیں سیکریٹریز اور دیگر سینئر آفیسران ماتحت دفتروں میں دفتری اوقات کے دوران ملازمین کی حاضری یقینی بنائیں آئندہ کسی بھی سرکاری دفترکا ہنگامی دورے کے موقع پر دفتری اوقات میں ملازمین کی عدم حاضری کی صورت میں معطلی سمیت سخت محکمانہ کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔وزیر اعلیٰ سیکریٹریٹ کا اچانک دورہ کیا صوبائی سیکریٹری داخلہ، سیکریٹری سروسز، سیکریٹری تعلیم، سیکریٹری پلاننگ، سیکریٹری قانون اورماتحت آفیسران کی دفاتر میں موجودگی پر اطمینان کا اظہارکرتے ہوئے دفتری اوقات میں اپنے دفاتر میں موجودگی کوسراہا ۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہاکہ صوبے میں ای گورننس کا نظام متعارف کرایا جارہا ہے جو وقت کی اہم ضرورت ہے بائیومیٹرک حاضری کے نظام کو سنٹرلائز سسٹم سے منسلک کیا جائے اور تمام دفاتر میں فائلوں کو بھی کمپیوٹرائز نظام سے منسلک کرنے کیلئے اقدامات کئے جائیں۔ صوبے میں آئی ٹی کا ایک الگ شعبہ بنایاجائے جو تمام نظام کو مانیٹر کرسکے۔وزیر اعلیٰ نے ڈی ایچ کیو ہسپتال ایمرجنسی کا اچانک دورہ کیا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے ایمرجنسی میں موجود مریضوں اور تیماداروں سے مسائل دریافت کئے۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے موٹر سائیکل سے ایکسیڈنٹ سے زخمی ہونے والے مزیض سے بھی اس کے مسائل پوچھے ۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے اس موقع پر ڈی ایچ کیوہسپتال گلگت میں ضروری طبی آلات کی عدم دستیابی کی شکایت کا نوٹس لیتے ہوئے سیکریٹری صحت اور ڈی ایم ایس ڈی ایچ کیوہسپتال گلگت کو تمام ضروری طبی آلات کی ہسپتال میں دستیابی ہر صورت یقینی بنانے کی ہدایت کی۔ وزیر اعلیٰ تحصیل آفس گلگت کا اچانک دورہ کیا۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے اسسٹنٹ کمشنر گلگت اورماتحت عملے کی تحصیل میں موجودگی کوسراہتے ہوئے کہاکہ سائلین کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کئے جائیں اور دفتری اوقات میں تمام ملازمین کی حاضری کو یقینی بنایاجائے۔وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ قائد نواز شریف کی ہدایت پر ہی گلگت واپس آیا ہوں ہمارے کارکن اور ہمارے عہدیدار، پارٹی کے ورکرزہمارے قائد کی ریلی میں شریک ہیں ہماری جماعت نے مشرف کے دور میں بھی اپنے خرچے پر جماعت کے تقریبات اور لاہورتک جلسوں میں شرکت کی ہے ۔ اسلام آباد سے لاہور ریلی میں ہمارے صوبائی وزرائ، ممبران اسمبلی نے کارکنوں کے ساتھ تعاون کیاہے اپنے تنخواہ سے فنڈز دیئے ہیں کوئی سرکاری وسائل کا استعمال نہیں کیا گیا ہماری جماعت ایک نظریاتی جماعت ہے جو لوگ نظریہ، اصول اور ایک ایجنڈے کے تحت کسی جماعت سے وابستہ ہوتے ہیں ان کے منظور نظر پیسے نہیں ہوتے جو جماعتیں ہم پر تنقید کررہے ہیں ان کا مقصد پیسے بنانا رہا ہے کچھ جماعتوںکا اقتدار میں آنے کا مقصد صرف اپنی تجوریاں بھرنا ہوتا ہے اسی لئے اسلام آباد لاہور ریلی میں سرکاری وسائل کا استعمال کرنے کے الزامات لگا رہے ہیں جو حقائق کے بالکل خلاف ہیں ہمارے کسی کارکن نے سرکاری وسائل کا استعمال نہیں کیا بلکہ جماعت کے ساتھ نظریے اور ایجنڈے کی وجہ سے وابستگی ہے اسی لئے اپنے خرچے پر ہمارے کارکن اسلام آباد سے لاہور ریلی میں شریک ہیں۔

Share Button