تازہ ترین

Marquee xml rss feed

حکومت کسی ریٹائرڈ جج کو نگراں وزیر اعظم نہیں بنانا چاہتی-سرگودھا میں مریم نواز کی تصاویر پر کالی سیاہی سے حمزہ لکھ دیا گیا-پی ٹی آئی 2013ء کے الیکشن سے بھی کم سیٹیں جیتے گی-نوزائیدہ بچوں کی اموات، پاکستان دنیا بھر میں پہلے نمبر پر پاکستان میں ہر22میں سے ایک بچہ پہلے مہینے ہی موت کا شکار،صحت کا بجٹ ناکافی ہے،ترجمان یونیسیف-پاکستان دہشت گردی کی مالی معاونت روکنے کے لیے سخت کارروائی نہیں کر رہا،امریکہ پاکستان کو دہشت گردوں کی مالی معاونت کرنے والے ممالک میں شامل کرنے کا فیصلہ آج ہوگا،ترجمان ... مزید-کل جماعتی حریت کانفرنس کی طرف سے سیدعلی گیلانی کی مسلسل غیرقانونی نظربندی کی مذمت بھارت کی عدلیہ اور انتظامیہ کے عدل وانصاف کے حوالے سے مسلمانوں کے ساتھ دوہرا معیار ... مزید-چیف جسٹس نے ائیر پورٹ پر میرے ہاتھ چومے اور پھر میری ہاتھوں کو اپنی آنکھوں سے لگایا ،جاوید ہاشمی-رانا ثناءاللہ اتنی بیہودہ گفتگو کرتے ہیں کہ شرم آ جاتی ہے-نواز شریف نے ہر حال میں لندن جانے کا فیصلہ کر لیا-نواز شریف کی تقاریر پر پابندی کی بجائے انہیں الٹا لٹکا دینا چاہئے

GB News

وفاقی حکومت نے جگلوٹ سکردو روڈ منصوبے کے لئے 86کروڑ روپے جاری کردیئے

Share Button

وفاقی حکومت نے گلگت بلتستان میں جگلوٹ سے سکردو شہر تک 167 کلو میٹر سڑک کے توسیعی منصوبہ پر کام شروع کرانے کیلئے86کروڑ40 لاکھ 70ہزار روپے جاری کردیئے ہیں۔دستاویز کے مطابق وفاقی حکومت نے پبلک سیکٹر ڈو یلپمنٹ پروگرام میں شامل اہمیت کے حامل منصوبوں کیلئے جاری ترقیاتی فنڈز میں سے گلگت بلتستان میں جگلوٹ سے سکردو شہر تک 167 کلو میٹر سڑک کے توسیعی منصوبے کیلئے بھی86 کروڑ40 لاکھ 70 ہزار روپے کی ابتدائی قسط جاری کردی ہے۔جگلوٹ سکردو روڈ کے توسیعی منصوبے کیلئے رواں مالی سال 2017-18کے وفاقی بجٹ میں مجموعی طور پر 8 ارب50 کروڑ روپے مختص کیے گئے تھے جس میں سے اس منصوبہ کیلئے درکار اراضی کے حصول کیلئے1ارب 50کروڑ روپے جبکہ جگلوٹ سے سکردو تک 167 کلو میٹر سڑک کی توسیع اور بہتری کے منصوبہ کیلئے کل 7 ارب روپے مختص کیے گئے تھے۔دستاویز کے مطابق اب تک اس منصوبہ پر10 کروڑ 40 لاکھ روپے خرچ کیے جاچکے ہیں۔واضح رہے کہ قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکٹیوکمیٹی نے رواں سال جولائی میں ہونے والی اجلاس کے دوران جگلوٹ سے سکردو تک 167 کلو میٹر سڑک کی توسیع اور بہتری کے منصوبہ کیلئے مجموعی طور پر کل 32 ارب32کروڑ56 لاکھ روپے کی منظوری دیدی تھی۔تاہم دوسری طرف سات سال قبل3 نومبر 2010 کو ہونے والی قومی اقتصادی کونسل کی ایکزیکٹیو کمیٹی نے منصوبے کیلئے مجموعی طور پر 22 ارب15کروڑ40 لاکھ 37 ہزار روپے کی منظوری دیدی تھی تاہم منصوبہ پر تعمیراتی کام میں تاخیر کے باعث تخمینہ لاگت میں تقریبا 10 ارب روپے کا اضافہ ہوا ہے۔یاد رہے جگلوٹ سکردو روڑ کا توسیعی منصوبہ وہاں کے عوام کا ایک دیرینہ مطالبہ تھا کیونکہ اس سڑک کی خستہ حالی کے باعث یہاں سالانہ کئی ٹریفک حادثات پیش آتے ہیںجس کے نتیجے میں قیمتی انسانی جانیں ضائع ہونے کے ساتھ مسافروں کو دوران سفر شدید زہنی و جسمانی مشکلات کا سامنا رہتا ہے ۔سڑک کی توسیع سے نہ صرف انسانی جانیں ضائع ہونے سے بچ پائیں گی بلکہ مسافروں کیلئے سفر بھی آسان اور پرسکون ہوسکے گا اور اس کا سارا کریڈٹ مسلم لیگ نواز کی صوبائی اور وفاقی حکومت کو ملے گی۔

Facebook Comments
Share Button