تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پی ٹی آئی کے رکن پنجاب اسمبلی مظہر عباس انتقال کر گئے مظرہ عباس راں کو گذشتہ روز صحت کی خرابی پر پنجاب اسمبلی سے اپستال منتقل کیا گیا تھا-حکومت پاکستان کا رواں برس حج پر 40 ہزار روپے سبسڈی دینے پر غور سبسڈی کی منظوری کے بعد فی کس حج اخراجات 4 لاکھ 20 ہزار روپے ہو جائیں گے-خاتون کو شادی کی تقریب میں اپنے کزن نذیر احمد کو کھانے کی پلیٹ دینا مہنگا پڑ گیا شکی شوہر نے بیوی پر کاروکاری کا الزام دیا، بھائیوں کے ساتھ مل کر خاتون کو قتل کرنے کی کوشش ... مزید-اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کو بیرون ملک جانے کی اجازت مل گئی حمزہ شہباز نے نام بلیک لسٹ میں ڈالنے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کیا تھا-امریکی گلوکار ایکون بھی پاکستان میں ڈیمز کی تعمیر کی حمایت میں سامنے آ گئے پاکستانی مہمند فنڈ میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔ ایکون نے اپنے ویڈیو پیغام میں دنیا بھر کے پاکستانیوں ... مزید-سندھ سے پیپلز پارٹی کا صفایا ہونے والا ہے ، فاطمہ بھٹو کو گورنر لگایا جائے گا پیپلزپارٹی سے متعلق سینئیر صحافی چوہدری غلام حسین نے بڑی خبر دے دی-وزیراعظم نے ندیم افضل چن کو اپنا ترجمان مقرر کرنے سے پہلے کیا ہدایت کی؟ وزیراعظم عمران خان نے مجھے ہدایت کی ہے کہ لہجے میں عاجزی و انکساری لاؤ متکبرانہ رویہ نہیں ہونا ... مزید-خان صاحب آپ سے ایک بات کرنی ہے میرا بچہ بیمار ہے لیکن اس کے لیے یہاں بیڈ موجود نہیں ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے بے نظیر بھٹو شہید اسپتال انتظامیہ کو فوراََ روتے ہوئے باپ ... مزید-سپریم کورٹ آف پاکستان نے اٹھارہویں ترمیم سے متعلق محفوظ شدہ فیصلہ سنا دیا سپریم کورٹ نے اٹھارہویں ترمیم سے متعلق سندھ حکومت کی درخواست مسترد کر دی-پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے لیے خطرے کی گھنٹی بج گئی اتحادی اختر مینگل کا اپوزیشن کے اجلاس میں جا کر بیٹھنا موجودہ حکومت کے لیے سیاسی خطرہ ہے۔ عامر متین

GB News

جون سے قبل بلدیاتی انتخابات منعقد کرا کر عوام سے کیے ہوئے وعدوں کی تکمیل کریں گے،وزیراعلیٰ

Share Button

اسلام آباد(پ ر)2018ء جون سے قبل گلگت بلتستان میں بلدیاتی انتخابات کا مرحلہ مکمل کریں گے بلدیاتی انتخابات منعقد کرانے میں کچھ تکنیکی اور قانونی وجوہات درپیش تھیں لیکن قومی مردم شماری کے نتائج آنے کے بعد یہ تکنیکی رکاوٹیں دور ہوں گی۔ انشاء اللہ اگلے سال جون سے قبل بلدیاتی انتخابات منعقد کرا کر عوام سے کیے ہوئے وعدے کی تکمیل کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کو ملک کے دیگر شہروں سے منسلک کرنے کیلئے صرف ایک شاہراہ قراقرم تھی یہ مسلم لیگ ن کا ہی کارنامہ ہے کہ اب گلگت بلتستان ٹو وے بن چکا ہے اس حوالے سے ہماری حکومت کی اولین کوشش ہے کہ بابوسر روڈ کو آل ویدر بنا کر گلگت بلتستان کو مواصلاتی حوالوں سے ترقی کی طرف گامزن کریں اس کے علاوہ ہماری حکومت کی ترجیحات میں یہ بھی شامل ہے کہ گلگت غذر چترال اور شونٹر ٹنل کے ذریعے گلگت بلتستان کو فور وے بنائیں وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے مزید کہا کہ ہماری حکومت نے گلگت بلتستان میں تعلیمی اصلاحات کیلئے اہم اقدامات کیے تعلیمی شعبے کو کرپشن ، اقرباء پروری اور میرٹ کی پامالی سے پاک کرنے کیلئے این ٹی ایس نظام لاگو کیا۔ قراقرم یونیورسٹی کے کیمپس کو اضلاع تک وسعت دی اور حال ہی میں ایک نئی یونیورسٹی بلتستان یونیورسٹی کیلئے فنڈز بھی جاری ہو گئے ، اسی طرح گلگت بلتستان میں پہلا میڈیکل کالج نواز شریف میڈیکل کالج پی سی ون منظور ہو چکا ہے ، صحت کے شعبے کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ صحت کے شعبے میں انقلابی تبدیلی لانے کیلئے حکومت کوشاں ہے اس حوالے سے گلگت بلتستان میں پہلی دفعہ پنجاب حکومت کے تعاون سے ایم آر آئی مشین کی تنصیب ہو چکی ہے ہماری حکومت آنے سے پہلے ہسپتالوں میں ادویات کے لئے بجٹ محض پانچ کروڑ روپے تھا ہم نے بجٹ بڑھا کر 40کروڑ تک پہنچایا۔ صوبے میں پہلے کینسر ہسپتال اور کارڈیالوجی ہسپتال اور اس کے علاوہ کئی منصوبے پائپ لائن بھی ہیں جنہیں انشاء اللہ اپنے دور حکومت میں مکمل کریں گے انہوں نے کہا کہ پاک چین اقتصادی راہداری محض ایک سڑک کا نام نہیں بلکہ یہ ترقی کی ضمانت ہے سی پیک میں گلگت بلتستان کیلئے 100 ارب روپے کے منصوبے ہیں سی پیک سے ترقی کے دروازے کھلیں گے۔ ادھر گلگت بلتستان حکومت اور واپڈا کے درمیان ایک اہم اعلیٰ سطحی اجلاس آج منعقد ہوا جس کی صدارت وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمان نے کی چیئرمین واپڈا جنرل(ر) مزمل حسین کے ساتھ ان کا وفد جبکہ گلگت بلتستان کے سینئر وزیر اکبر تابان اور دیگر سیکرٹریز بھی اجلاس میں شریک تھے اجلاس میں صوبائی حکومت اور واپڈا کے باہمی اشتراک سے چلنے والے اہم توانائی کے منصوبوں پر میسر حاصل گفتگو کی گئی اور مسائل حل کرنے کیلئے اقدامات کرنے پر زور دیا گیا اجلاس میں ہرپو پاور پراجیکٹ سدپارہ ڈیم اور دیامر بھاشہ ڈیم جیسے بڑے منصوبوں کے حوالہ سے درپیش مسائل پر چیدہ چیدہ گفتگو کی گئی اور حل کیلئے تجاویز اور سفارشات کا تبادلہ کیا گیا فیصلہ کیا گیا کہ ان بڑے پاور پراجیکٹس پر کام شروع کرنے سمیت تمام اہم معاملات میں عوام اور عوامی نمائندوں کی تجاویز اور سفارشات کا خاص خیال رکھا جائے گا، ہرپو پاور پراجیکٹ پر رواں سال دسمبر تک کام شروع ہو جائے گا جبکہ سدپارہ ڈیم اور اس ق سے متعلق پیدا ہونے والے مسائل کا مستقل حل نکالا جائے گا ، دیامر بھاشہ ڈیم کے حوالے سے اجلاس میں بتایا گیا کہ متاثرین کو 98فیصد رقم کی ادائیگی کر دی گئی ہے اور متاثرین کی آبادکاری کے لئے اقدامات کی ضرورت ہے اس ضمن میں وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کا کہنا تھا کہ دیامر بھاشہ ڈیم کے حوالے سے موجود معمول کے تنازعے کو حل کرنے کیلئے صوبائی حکومت ٹھوس اقدامات کر رہی ہے جبکہ متاثرین کی باعزت اور قدیم روایات کو مدنظر رکھ کر آبادکاری کیلئے واپڈا کا بھرپور تعاون درکار ہے جبکہ دیامر بھاشہ ڈیم کے متاثرین کے پڑھے لکھے نوجوانوں کو روزگار کے مواقع فراہم کرنے کیلئے اقدامات کی ضرورت ہے ڈیم کے حوالے سے پیدا ہونے والی ملازمتوں میں بھی متاثرین کیلئے قابل قبول کوٹہ دینا ضروری ہے جبکہ ڈیم کی زد میں آ کر متاثر ہونے والے صحت اور تعلیمی مراکز کی بحالی اولین ترجیح ہونی چاہیے چونکہ یہ ضلع ان دونوں حوالوں سے ویسے بھی کافی پسماندگی کا شکار ہے جبکہ دیامر میں بننے والے کیڈٹ کالج پر بھی کام کی رفتار کو تیز کرنا ہو گا وزیراعلیٰ نے اجلاس میں بتایا کہ صوبائی حکومت اور واپڈا کی ذمہ داری ہے کہ دیامر بھاشہ ڈیم جیسے میگا منصوبوں پر کام ہونے سے گلگت بلتستان میں ماحولیاتی آلودگی پیدا نہ ہو اس مقصد کیلئے گرین پاکستان جیسے منصوبوں پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

Facebook Comments
Share Button