GB News

جہانگیر ترین نااہلی کیس، زرعی زمینوں کی لیز کاریکارڈ طلب

Share Button

سپریم کورٹ نے جہانگیر ترین سے زرعی زمین کی آمد ن ،لیززمین کی ادائیگیاور زمین لیزپرلینے کاخسرہ گردواری ریکارڈ طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت آئندہ ہفتے منگل تک ملتوی کردی ۔ دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ عدالت نے معاملہ کوایمانداری کے اعتبارسے پرکھناہے ، کسی غلط بیانی کی صورت میں عدالت آرٹیکل 184/3کے مقدمہ میں کاروائی کااختیاررکھتی ہے،جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیئے کہ جولوگ زرعی آمدن زیادہ بتاتے ہیں وہ کالا دھن سفید کرتے ہیں، جہانگیرترین نے اتنی زرعی آمدن کیوں بتائی اس سے شک پیداہوتاہے دوران سماعت جسٹس عمر عطاء بندیال نے ریمارکس دیئے کہ چوراس ملک میں آزاد گھوم رہے ہوتے ہیں ،چوروں کوبیرون ملک سے بھاری رقوم تحفہ میں ملتی ہیں ،ہمارے ملک میں اکثریت ٹیکس ادانہیں کرتی ،ٹیکس ادا کرنے والوں کو تحفط ملنا چاہیے،ٹیکس ادا کرنے والوں کو معمولی غلطی پر سزا دی تو وہ ریلیف کے لیے کہاں جائیں گے ؟ چیف جسٹس نے کہا کہ دیکھ رہے ہیں الیکشن کمیشن کوآمدن سے کم رقم بتائی گئی ،ایف بی آر کورقم زیادہ بتائی گئی ،اس پر جہانگیر ترین نے کہا کہ میرے موکل بارے اس قسم کے شکوک وشبہات کااظہارکیاگیاہے چیف جسٹس نے کہا کہ کہیں زیادہ آمدن بتاکرکالادھن سفید تونہیں کیاگیااس پر سکندر بشیر نے کہا کہ آمدن کے معاملات متعلقہ فورم پرزیرسماعت ہے ،آمدن میں تضاد پرمتعلقہ فورم نے جہانگیرترین کی وضاحت کوتسلیم کیا ،جہانگیرترین کے کاغذات کے ساتھ ٹیکس گوشواروں کی تفصیل موجود تھی ،عدالت میں تمام گوشواروں کاریکارڈ جمع کرادیاہے ،جہانگیرترین نے اپنی زرعی آمدن میں کچھ نہیں چھپایا

Facebook Comments
Share Button