تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پاک افغان سرحدی علاقے میں ایک اور امریکی ڈرون حملہ، 2 خطرناک دہشت گردوں کو ہلاک کر دیے جانے کی اطلاعات-مستونگ کے مرکزی بازارمیں دھماکے کی اطلاع-آرمی چیف کا آرمی میڈیکل سنٹرایبٹ آباد کا دورہ،ڈاکٹرزاورمیڈیکل سٹاف کی تعریف یاد گارشہداء پرحاضری اور پھول بھی چڑھائے،دہشتگردکی جنگ میں آرمی میڈیکل کورنے قیمتی جانیں ... مزید-طارق فضل چوہدری کی طرف سے وفاقی دارالحکومت میں ایمبیسی روڈ پر درختوں کی کٹائی کا نوٹس لینے پر سی ڈی اے نے رپورٹ پیش کر دی-عمران خان سیاست میں اناڑی ہیں، انہیں آرام کی ضرورت ہے ،ْ دانیال عزیز فرد جرم عائد ہونے کے بعد نیب ٹیم کون سے ثبوت تلاش کرنے کے لئے لندن گئی ہوئی ہے ،ْ میڈیا سے گفتگو ... مزید-وزیر اعظم کی قندھار میں افغان سکیورٹی اہلکاروں پر ہونے والے دہشت گردوں کے حملہ کی سخت مذمت-ایف آئی اے کی جدید بنیادوں پر تنظیم کی جائے،نئی ٹیکنالوجی سے جرائم پر قابو پانے کی صلاحیت حاصل کی جائے، انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کیلئے موثر اور عملی اقدامات اٹھائے ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے نیب کو کرپٹ ترین ادارہ قراردے دیا نیب کرپشن ختم کرنے کی بجائے کرپشن کا گڑھ بن چکا،مشرف اور بعد کے ادوارمیں نیب کو سیاسی مقاصدکیلئے استعمال ... مزید-سیکرٹری وزارتِ انسداد منشیات اقبال محمود کا اے این ایف ہیڈکوارٹر راولپنڈی کا دورہ-ن لیگ خیبرپختونخواہ دوست محمد خان نے پیپلزپارٹی میں شمولیت کا اعلان کردیا

GB News

دھماکہ خیز مواد کی برآمدگی:محتاط رہنے کی ضرورت

Share Button

پولیس اور حساس اداروں کے اہلکاروں نے سکردو بھٹو بازار میں کباڑ کا کاروبار کرنے والے شخص کے گھر پر چھاپہ مار کر بڑی مقدار میں دھماکہ خیز مواد برآمد کر لیا اور مہمند ایجنسی سے تعلق رکھنے والے ناصر خان ولد نورش خان کو گرفتار کر لیاملزم کے واش روم کے گٹر سے 200مارٹر گولوں کے خول، 60ایم ایم ، 50راکٹ لانچر کے کھوکھے، 160کے قریب دیگر ذرات سمیت 430دھماکہ خیز ذرات برآمد کر لیے اور گھر کے سربراہ کو موقع پر ہی گرفتار کر لیا گیا خفیہ اداروں کو اطلاع ملی تھی کہ ناصر خان ولد نورش خان کے گھر کے واش روم کے گٹر میں دھماکہ خیز مواد چھپایا ہوا ہے ‘پولیس اس بات کی بھی تحقیقات کر رہی ہے کہ دھماکہ خیز مواد رکھنے کے مقاصد کیا تھے؟ایس ایس پی سکردو راجہ مرزا حسن کے مطابق معاملے کی تحقیقات صاف شفاف ہوںگی کسی کو بلتستان جیسے پرامن خطے کا مثالی امن تباہ کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دیں گے عوام کی جان و مال کا تحفظ ریاست کی اولین ذمہ داری ہے ہم اپنی ذمہ داری سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔موجودہ صورتحال واضح کرتی ہے کہ دہشت گرد اپنی کوششوں میں مصروف ہیں جس شخص کو گرفتار کیا گیا ہے اس سے تفتیش کے ذریعے یہ معلوم کرنے کی کوشش کی جانی چاہیے کہ اس کے مقاصد کیا تھے اور یہ مواد کس لیے لایا گیا’ ہم جانتے ہیں کہ دشمن مسلسل سازشوں میں مصروف ہے حالانکہپاکستان ہے دہشت گردی کے خلاف یکسوئی کے ساتھ نبرد آزما ہے ہزاروں شہریوں اور سیکیورٹی اہلکاروں نے اپنی جانوں کا نذرانہ دے کر دہشت گردوں کو ناکام بنایا ہے پاکستان ہی وہ دنیا کا واحد ملک ہے جس نے دہشت گردی سے دنیا کو محفوظ بنانے کیلئے اتنی قربانیاں دی ہیں کہ جس کی مثال دنیا کی تاریخ میں نہیں ملتی دنیا میں ایک ہی ملک میں اندرونی ہجرت بھی پاکستان میں ہی ہوئی قبائلی عوام نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں قوم کو سرخرو کرنے کیلئے نہ صرف اپنی جانوں کا نذرانہ دیا بلکہ لاکھوں کی تعداد میں قبائلیوں نے اپنا گھر بار صرف اس مقصد کیلئے چھوڑا کہ دنیا میں امن قائم ہو سکے اور ان دہشت گردوں کا صفایا ہو سکے جو دشمن طاقتوں کے آلہ کار بن کر پاکستان میں دہشت گردی کے ٹھکانے بنا کر امن تباہ کرنا چاہتے تھے دنیا کے بہت سارے ملک مل کر بھی اس جنگ میں کامیابی حاصل نہیں کر سکے لیکن پاکستان کی فوج اور عوام نے مل کر یہ جنگ جیت لی ہے یہ الگ بات ہے کہ ناکام ہوتے ہوئے دہشت گرد آخری حربے کے طور پر اپنے وار کر رہے ہیں لیکن اب ان کے یہ وار بھی ناکامی کی طرف جا رہے ہیں کیونکہ سابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف کی قیادت میں جو آپریشن شروع ہوا تھا وہ اب موجودہ سپہ سالار جنرل قمر جاویدباجوہ کی پرعزم قیادت میں کامیابی کے جھنڈے گاڑھ رہا ہے آپریشن ردالفساد کے تحت جاری آپریشن سے ملک کے ننانوے فیصد حصوں میں امن قائم ہو چکا ہے باقی ایک فیصد حصے سے دہشت گردوں کا صفایا کرنے کیلئے آپریشن رد الفساد کے تحت جاری آپریشن خیبرفور پوری کامیابی سے جاری و ساری ہے ۔فاٹا میں آپریشن رد الفساد کے تحت جاری آپریشن خیبر۔فور میں پاک فوج نے بڑی کامیابیاں حاصل کی ہیںایئر فورس آرمی ایوی ایشن اور آرٹرلی کی مشترکہ کارروائیوں کے نتیجے میں دہشت گردوں کے کئی ٹھکانے تباہ کردیے گئے ‘دنیا کے امن کو بچانے کیلئے پاکستان نے اپنے حصے سے بہت زیادہ کام کیا ہے اب دنیا کے دیگر ممالک کا بھی فرض بنتا ہے کہ ان ممالک کا پیچھا کیا جائے جو پاکستان کی دہشت گردی کے خلاف جنگ کو ناکام بنانے کیلئے افغانستان کی سرزمین کا استعمال کر کے پاکستان میں نہ صرف ددہشت گردی کو فروغ دینا چاہتے ہیں بلکہ پاک چین اقتصادی راہداری منصوبے کی ناکامی کیلئے سازشیں کر رہے ہیں ،بھارت اس حوالے سے فرنٹ لائن ملک کا کردار ادا کر رہا ہے پاکستان کی قربانیوں کا اعتراف کر کے دہشت گردی کے خلاف ساتھ دینے کے بجائے افغانستان کی سرزمین سے پاکستان میں دہشت گردی پھیلانے کے نیٹ ورک کو مظبوط بنا رہا ہے افغانستان میں بھارت کے درجنوں قونصل خانے یہی ڈیو ٹی انجام دے رہے ہیں اور ان قونصل خانوں سے نہ صرف دہشت گردوں کی مالی معاونت کی جاتی ہے بلکہ دہشت گردوں کی پاکستان کے خلاف ذہن سازی کی تربیت بھی فراہم کی جاتی ہے بھارت کے اسی گھنائونے کردار کی بدولت دنیا کا امن خطر ے میں پڑ چکا ہے حالانکہ حقیقت تو یہ ہے کہ بھارت اس وقت دہشت گردوں کی جنت بن چکا ہے دنیا میں سب سے زیادہ دہشت گرد تنظیمیں بھارت میں ہی پنپ رہی ہیں اس وقت بھارت میں 67دہشت گرد تنظیمیں اپنا کام آزادی سے جاری رکھے ہوئے ہیں اور انہیں روکنے والا کوئی نہیں ہزاروں مسلمانوں کے خون سے ہاتھ رنگنے والے نریندر مودی کے ہاتھ میں بھارت کی حکومتی ڈور بھاگ آچکی ہے تو ان دہشت گرد تنظیموں اور ہندو انتہا پسندوں کو بھی شہہ ملی ہے کہ آزادانہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کو فرغ دیں ،دنیا کو ان حقائق کا ادراک کرتے ہوئے بھارت کے مکروہ چہرے کو نہ صرف عیاں کرنا چاہیے بلکہ بھارت کی اس دہشت گردی کی روک تھام کیلئے موثر اقدامات کرنے ہوں گے ۔بہر حال بھارت جتنی بھی کوششیں کرے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جیت پاکستان کی ہی ہوگی کیونکہ دنیا کی بہترین اورجذبے سے سرشار پاک فوج نے پاکستانی قوم کے تعاون سے یہ جنگ جیت لی ہے آپریشن خیبر فور کے تحت حالیوں کارروائیوں میں ملنے والی کامیابیاں اس بات کا مظہر ہیں کہ تمام تر سازشوں کے باوجود پاکستان دہشت گردی کے خلاف جنگ جیت کر سرخرو ہونے جا رہا ہے ۔ہم جانتے ہیں کہ عالمی دہشت گردی میں بھی اضافہ ہو رہا ہے اور وہ اپنے مہروں کو آگے بڑھا رہے ہیںعالمی سطح پرتازہ واقعات میں برطانیہ’ افغانستان اور ایران سمیت چند ممالک میں دہشت گرد حملے ہوئے ہیں۔ برطانیہ میں دہشت گردی کے واقعات میں مسلسل اضافہ ہوتا چلا جارہا ہے ۔ افغانستان میں حملوں میں زبردست اضافہ ہوا ہے جس میں حملہ آور پارلیمنٹ اور اہم سرکاری عمارات کو نشانہ بنانے میں کامیاب نظر آتے ہیں اور دہشت گردی کے واقعات میں ہلاک ہونیوالوں کے جنازے کو بھی حملوں کا نشانہ بنایا گیا جس سے سینکڑوں ہلاکتیں ہوئیں اور افغانستان کی موجودہ حکومت اس سلسلے میں مکمل طور پر بے بس نظر آتی ہے ۔ اسی طرح ایران میں پارلیمنٹ ہائوس اور امام خمینی کے مزار پر حملے کئے گئے جس میں درجن سے زائد ہلاکتیں ہوئی ہیں حملوں کی ذمہ داری داعش نے قبول کی تھی۔ اگر خدانخواستہ اسی طرح دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ ہوتا چلا گیا تو مستقبل میں مسلمانوں کیلئے مشکلات میں مزید اضافہ ہوگا۔ برطانیہ میں دہشت گردی وہی ملک کرارہا ہے جس کا مقصد برطانیہ کو مسلمانوں کے خلاف دہشت گردی کی نام نہاد جنگ میں اپنی مرضی کے مطابق استعمال کرنا ہے اور برطانیہ میں دہشت گردی کراکر اس کا الزام مسلمانوں پر عائد کیا جانا اسی منصوبہ بندی کا حصہ ہے جس سے مسلمانوں کیلئے یورپ برطانیہ اور امریکہ سمیت مغربی ممالک میں زمین تنگ کرنا ہے اور برطانیہ میں حالیہ حملوں کے بعد امریکہ ان مقاصد میں کامیاب ہوتا نظر آرہا ہے۔اسی طرح فرانس سمیت یورپی ممالک میں بھی حملوں کا خطرہ ہے اور ان تمام واقعات کا مقصد مسلمانوں کے خلاف عالمی اتحاد کو مزید مضبوط بنانا ہے۔اس منظرنامے میں گلگت بلتستان ہمارے دشمنوں کا بنیادی ہدف ہے امریکہ اور بھارت سی پیک کے دشمن ہیں’سی پیک پر امریکہ بھی اپنے تحفظات ظاہر کر چکا ہے اس لیے گلگت بلتستان میں زیادہ چوکنا رہنے کی ضرورت ہے۔

Facebook Comments
Share Button