GB News

نا اہل شخص کسی سیاسی جماعت کا سربراہ بننے کا اہل نہیں ہو سکتا،سینیٹ میں قرار دادمنظور

Share Button

اسلام آباد (آئی این پی)سینیٹ(ایوان بالا) میں اپوزیشن متحد ، حکومت کو شدید جھٹکا ، کسی سیاسی جماعت کا سربراہ بننے کا اہل نہیں ہو نے کے حوالے سے قرارداد حکومتی مخالفت کے باوجود کثرت رائے سے منظور کرلی گئی ،قرار داد کے حق میں 52اور مخالفت میں 28ووٹ پڑے، قائد حزب ختلاف اعتزاز احسن نے قراداد پیش کی ، قرارداد کے متن میں کہا گیاکہ سپریم کورٹ نے ایک شخص کو نا اہل قرار دیا ہے اور یہ ایوان اس معاملے کو حل کرے کہ اس طرح کا کوئی شخص کسی سیاسی جماعت کا سربراہ بننے کا اہل نہیں ہو سکتا۔ اعتزاز احسن نے کہا کہ اس ایوان کو مسئلہ حل کرنا چاہیے کہ ایسا کوئی بھی شخص جو نا اہل قرار دیا گیا ہو اور کسی پر دہشت گردی کی دفعات ہوں ایسے شخص کو پارلیمنٹ میں داخلہ کی بھی اجازت نہیں ہونی چاہیے،وفاقی وزیر قانون زاہد حامد نے کہا کہ اس قرار دادسے اپوزیشن کیا ثابت کرنا چاہتی ہے ، اب یہ مکمل قانون بن چکا ہے اور دونوں ایوانوں سے منظور ہو چکا ہے، یہ جو قرار داد لائی گئی ہے اس کی کوئی حیثیت نہیں ہے، یہ قرار داد منظور کر کے قانون کو چیلنج کیا جا رہا ہے، اس قانون کو جو خود اس ایوان نے منظور کیا ہے۔بدھ کو سینیٹ کا اجلاس چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی کی صدارت میں ہوا ۔ اجلاس میں قائد حزب اختلاف سینیٹر اعتزاز احسن نے پارلیمنٹ کا رکن منتخب ہونے کیلئے نا اہل قرار دیئے گئے افراد سیاسی جماعتوں کا عہدیدار بننے کے امکان سے ملک میں پیدا ہونے والے خلاف معمول حالات پر قرار داد پر بحث اور منظور کرنے کے حوالے سے کہا کہ میں یہ قرار داد پیش کرتا ہوں کہ سپریم کورٹ نے ایک شخص کو نا اہل قرار دیا ہے، حکومت نے اس قرار داد کی مخافت کی اور قائد ایوان راجہ ظفر الحق نے اس پر کہا کہ اس ایوان نے الیکشن بل 2017 میں سیاسی جماعتوں سے متعلق ایکٹ میں ترمیم کی گئی اور اس ایوان نے شق 203کو کثرت رائے سے منظور کیا اور صدر پاکستان کے دستخط کے بعد اب یہ قانون بن چکا ہے، جب قانون بن چکا ہے تو اس پر قرار داد نہیں آ سکتی، سپریم کورٹ میں بھی اسے چیلنج کیا گیا ہے جو ابھی تک موخر ہے، قانون میں بننے والے قوانین پر قرار داد نہیں آ سکتی، بنیادی طور پر اس کی گنجائش نہیں بنتی کہ یہ قرار داد لائی جائے، قانون بننے کے بعد اس قرار داد سے کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔

 

Facebook Comments
Share Button