تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پاک افغان سرحدی علاقے میں ایک اور امریکی ڈرون حملہ، 2 خطرناک دہشت گردوں کو ہلاک کر دیے جانے کی اطلاعات-مستونگ کے مرکزی بازارمیں دھماکے کی اطلاع-آرمی چیف کا آرمی میڈیکل سنٹرایبٹ آباد کا دورہ،ڈاکٹرزاورمیڈیکل سٹاف کی تعریف یاد گارشہداء پرحاضری اور پھول بھی چڑھائے،دہشتگردکی جنگ میں آرمی میڈیکل کورنے قیمتی جانیں ... مزید-طارق فضل چوہدری کی طرف سے وفاقی دارالحکومت میں ایمبیسی روڈ پر درختوں کی کٹائی کا نوٹس لینے پر سی ڈی اے نے رپورٹ پیش کر دی-عمران خان سیاست میں اناڑی ہیں، انہیں آرام کی ضرورت ہے ،ْ دانیال عزیز فرد جرم عائد ہونے کے بعد نیب ٹیم کون سے ثبوت تلاش کرنے کے لئے لندن گئی ہوئی ہے ،ْ میڈیا سے گفتگو ... مزید-وزیر اعظم کی قندھار میں افغان سکیورٹی اہلکاروں پر ہونے والے دہشت گردوں کے حملہ کی سخت مذمت-ایف آئی اے کی جدید بنیادوں پر تنظیم کی جائے،نئی ٹیکنالوجی سے جرائم پر قابو پانے کی صلاحیت حاصل کی جائے، انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کیلئے موثر اور عملی اقدامات اٹھائے ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے نیب کو کرپٹ ترین ادارہ قراردے دیا نیب کرپشن ختم کرنے کی بجائے کرپشن کا گڑھ بن چکا،مشرف اور بعد کے ادوارمیں نیب کو سیاسی مقاصدکیلئے استعمال ... مزید-سیکرٹری وزارتِ انسداد منشیات اقبال محمود کا اے این ایف ہیڈکوارٹر راولپنڈی کا دورہ-ن لیگ خیبرپختونخواہ دوست محمد خان نے پیپلزپارٹی میں شمولیت کا اعلان کردیا

GB News

فاٹا اور مالاکنڈ میں ٹیکس نہیں ، گلگت بلتستان میں کیوں؟ جاوید حسین

Share Button

گلگت(خصوصی رپورٹ) پی پی کے رکن اسمبلی جاوید حسین نے کہا ہے کہ فاٹا اور مالاکنڈ ڈویژن پاکستان میں شامل ہیں ان علاقوں کی قومی اسمبلی اورسینیٹ میں نمائندگی ہے اس کے باوجود ان علاقوں میں ٹیکس نافذ نہیں ہے تو گلگت بلتستان کے عوام کو قومی اسمبلی اور سینیٹ میں نمائندگی دئیے بغیر ٹیکسوں کا نفاذ کیوں کیاگیا ہے انہوں نے بدھ کے روز ٹیکسوں کے حوالے سے ایک تحریک التوا پر ایوان میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ وفاقی حکومت نے مالاکنڈ ڈویژن میں کسٹم ایکٹ لاگو کیا تو وہاں کے عوام نے احتجاج کیا جس کے بعد وفاقی حکومت نے مالاکنڈ ڈویژن سے کسٹم ایکٹ کے نفاذ کا فیصلہ واپس لیا اس کے علاوہ ملک میں کئی علاقے ایسے ہیں جو ٹیکس فری زون ہیں اس لئے گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت کے تعین تک ان علاقوں کو ٹیکس فری زون قرار دیا جائے انہوں نے کہا کہ گلگت بلتستان کو گورننس آرڈر 2009ء کے تحت جو سسٹم ملا ہے وہ پاکستان پیپلزپارٹی کی حکومت نے دیا ہے اس کی بھی تعریف ہونی چاہیے انہوں نے کہا کہ اگر سابق حکومت نے کوئی غلط فیصلہ کیا ہے تو ہماری ذمہ داری بنتی ہے کہ اسے درست کریں اور گلگت بلتستان میں ٹیکسوں کے نفاذ کے فیصلے کو واپس تبدیل کرائیں انہوں نے کہا کہ وفاق نے سترسالوں سے ان علاقوں کو متنازعہ رکھا جس کی وجہ سے امریکی وزیر دفاع نے ان علاقوں کو متنازعہ قرار دے رہے ہیں اگر وفاق گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت کا تعین کرتا تو آج دشمن کو بولنے کیلئے کچھ نہیں رہ جاتا۔

Facebook Comments
Share Button