تازہ ترین

Marquee xml rss feed

نعیم الحق نے شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر ضبط کرنے کی دھمکی دے دی شہباز شریف اور اس کے چمچوں کی اتنی جرات کہ وہ قومی اسمبلی میں وزیر اعظم پر ذاتی حملے کریں۔کیا وہ جیل میں ... مزید-وزیراعظم کا سانحہ ساہیول پر وزراء متضاد بیانات پر سخت برہمی کا اظہار آئندہ بغیر تیاری میڈیا پر بیان بازی نہ کی جائے انسانی زندگیوں کا معاملہ ہے کسی قسم کی معافی کی گنجائش ... مزید-5 ارب روپے قرض حسنہ کیلئے مختص کرنا خوش آئند ہے، فنانس بل میں غریب آدمی کو صبر کا پیغام دیا گیا ہے امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق کی پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا ... مزید-فنانس بل سے متوسط طبقہ کو ریلیف ملا ہے، عوام کا پیسہ عوام پر خرچ ہو گا، اپوزیشن کے پاس بات کرنے کو کچھ نہیں وفاقی وزیر آبی وسائل فیصل واوڈا کی پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا ... مزید-صوبائی اسمبلی کے حلقہ پی ایس94 کے ضمنی الیکشن کے موقع پر سیکورٹی کو غیرمعمولی بنایا جائے، آئی جی سندھ-وزیر خزانہ اسد عمر کی طرف سے قومی اسمبلی میں پیش کردہ ضمنی مالیاتی (دوسری ترمیم) بل 2019 کا مکمل متن-جنوری کو ہونے والے ضمنی انتخابات کراچی کی سیاست میں نئی راہیں متعین کرے گا،مصطفی کمال پی ایس پی کسی فرد یا گروہ کا نام نہیں ہے بلکہ ایک تحریک کا نام ہے جو مظلوم و محکوموں ... مزید-ملک کا اقتصادی مستقبل کراچی کی معاشی ترقی میں مضمر ہے۔گورنر سندھ-سی پیک پاکستان اور چین کے مابین تعلقات کو مزید گہرا کرنے کے لئے مستحکم بنیاد، خطے کو منسلک کرنے میں اہم کردارادا کر رہا ہے، سی پیک تمام خطے میں امن و استحکام لانے میں ... مزید-احتساب عدالت اسلام آباد میں اسحاق ڈار کیخلاف آمدن سے زائد اثاثوں کے مقدمے میں دو مزید گواہوں کے بیانات ریکارڈ

GB News

ناقص اور دو نمبر اشیاء کی بھرمار

Share Button

راولپنڈی اسلام آباد کے نجی ہسپتالوں میں گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے 23 افراد کے دل کے آپریشن کئے گئے، رواں سال بڑی تعداد میں لوگ دل کے عارضے میں مبتلا ہونے کے باعث اسلام آباد لائے گئے ہیں، ان میں اکثریت کو ادویات دی جارہی ہیں، گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے بلڈ پریشر، گردے، معدے، دمے، کینسر اور ہارٹ کے مریضوں سے بھر گئے ہیں،ناقص اشیائے خورونوش اور ادویات کی بھرمارکی وجہ سے گلگت بلتستان میں پیچیدہ امراض خاص طور پر امراض قلب میں خوفناک حد تک اضافہ ہوگیا ہے، جب تک ناقص ادویات اور اشیائے خورونوش پر پابندی عائد نہیں ہوگی تب تک پیچیدہ امراض پر قابو نہیں پایا جاسکتا’دولت کے پجاری طویل عرصے سے لوگوں کی زندگیوںسے کھیلتے ہوئے ناقص و دونمبر اشیاء کی فروخت جاری رکھے ہوئے لاکھوں شہریوں میں کھلے عام موت کا بیو پار کر رہے ہیں مضر صحت اور خطرناک تیزابی اجزا کی آمیزش سے تیار کردہ ملاوٹی اشیا جن میں مرچ ،ہلدی ،فاسٹ فوڈ ،مصالحہ جات ،مربہ جات ،جوس ،گھی ،کوکنگ آئل ،سلانٹی آٹا ،سگریٹ ،صابن ،سوئٹس ،بچوں کی ٹافیاں ،مشروبات وغیرہ شامل ہیں جبکہ بعض درندہ صفت مینو فیکچرز مردہ جانوروں کی ویسٹ اور چربی سے بھی گھی ،آئل ،مکھن وغیرہ تیار کرتے ہیں کھلے عام تھوک وپرچون فروخت کی جا رہی ہیں اور بیشتر طاقتور با اثر جعلساز سرکاری مشینری کے خصوصی تعاون سے ان ملاوٹی اور انسانی صحت کی قاتل اشیاء کو ملٹی نیشنل اور معیاری کمپنیوں کی جعلی پیکنگ میں پیک کر کے فروخت کر نے کے دھندے میں ملوث ہیں اور اس مکروہ دھندے کو حقیقت کا رنگ دینے کیلئے انہوں نے باقاعدہ طور پر اصلی کمپنیوں کی جعلی مہریں ،سٹکرز ،مونو گرام اور کیش میمو بھی بنوا رکھے ہیں جبکہ یہ ملاوٹی اور دو نمبر اشیاء روزانہ کے حساب سے بڑی مقدار میں خریدو فروخت کیلئے لائی جاتی ہیں اور اس میں کئی معروف سرمایہ دار ،تاجر ملوث ہیں ان جعلسازوں نے متعدد سیلز مین کمیشن ایجنٹ ،بروکر اور رکھے ہوئے ہیں جنہیں تنخواہ کی بجائے سیلز پالیسی کے تحت بھاری کمیشن دیا جاتا ہے اور اس بات کا بالکل خیال نہیں کیا جاتا کہ لوگ ان کے استعمال سے موذی و مہلک بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں اس لیے ان عناصر کے خلاف سخت اقدامات کی ضرورت ہے تاکہ یہ لوگوں کی زندگیوں سے کھیلنے میں کامیاب نہ ہو سکیں۔

Facebook Comments
Share Button