تازہ ترین

Marquee xml rss feed

عمران خان اور بشریٰ مانیکا کی شادی، ایک روز بعد ہی علیحدگی ہو جانے کی پیشن گوئی بھی کر دی گئی-چیئرمین چکوال پریس کلب خواجہ بابر سلیم کی سی آر شمسی کوقومی روز نامہ سماء اسلام آباد کا ریزیڈنٹ ایڈیٹر مقرر ہونے پر مبارکباد-سعداحسن قاضی اسلامی جمعیت طلبہ حیدرآباد کے ناظم منتخب-تحصیل ہیڈ کوارٹر حضرو میں ہفتہ صحت میلہ کے حوالے سے کیمپ لگایا گیا،افتتاح انجینئر اعظم خان اور احسن خان نے کیا-ایم فل ڈگری پروگرامز 2018ء کے تحت داخلے کے لیے ٹیسٹ میں کامیاب امیدواروں کے انٹرویوز 26 فروری کو ہوں گے-ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر عمر جہانگیر کا ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال چکوال کا اچانک معائنہ،مریضوں کے مسائل دریافت کیے-اپنا چکوال اور شان پروڈکشن کی مشترکہ پیش کش مزاحیہ ڈارمہ عقل وڈی کے مج مکمل فروری کی شب اپنا چکوال چینل پر پیش کیا جائیگا-مقدمات کی تفتیش کے مد میں 55 لاکھ روپے جاری کردیئے گئے-پٹرولنگ پولیس دلیل پور نے کار میں غیر قانونی اور غیر معیاری سی این جی سلنڈر نصب کرنے پر ڈرائیور کوگرفتار کر لِیا-ڈاکٹر خادم حسین قریشی کا ٹنڈو الہیار ، ٹنڈو جام ، شاہ بھٹائی اسپتال لطیف آباد ، تعلقہ اسپتال قاسم آباد ، نوابشاہ اور ہالا میں ہیپاٹائٹس سینٹر ز کا دورہ

GB News

ناقص اور دو نمبر اشیاء کی بھرمار

Share Button

راولپنڈی اسلام آباد کے نجی ہسپتالوں میں گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے 23 افراد کے دل کے آپریشن کئے گئے، رواں سال بڑی تعداد میں لوگ دل کے عارضے میں مبتلا ہونے کے باعث اسلام آباد لائے گئے ہیں، ان میں اکثریت کو ادویات دی جارہی ہیں، گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے بلڈ پریشر، گردے، معدے، دمے، کینسر اور ہارٹ کے مریضوں سے بھر گئے ہیں،ناقص اشیائے خورونوش اور ادویات کی بھرمارکی وجہ سے گلگت بلتستان میں پیچیدہ امراض خاص طور پر امراض قلب میں خوفناک حد تک اضافہ ہوگیا ہے، جب تک ناقص ادویات اور اشیائے خورونوش پر پابندی عائد نہیں ہوگی تب تک پیچیدہ امراض پر قابو نہیں پایا جاسکتا’دولت کے پجاری طویل عرصے سے لوگوں کی زندگیوںسے کھیلتے ہوئے ناقص و دونمبر اشیاء کی فروخت جاری رکھے ہوئے لاکھوں شہریوں میں کھلے عام موت کا بیو پار کر رہے ہیں مضر صحت اور خطرناک تیزابی اجزا کی آمیزش سے تیار کردہ ملاوٹی اشیا جن میں مرچ ،ہلدی ،فاسٹ فوڈ ،مصالحہ جات ،مربہ جات ،جوس ،گھی ،کوکنگ آئل ،سلانٹی آٹا ،سگریٹ ،صابن ،سوئٹس ،بچوں کی ٹافیاں ،مشروبات وغیرہ شامل ہیں جبکہ بعض درندہ صفت مینو فیکچرز مردہ جانوروں کی ویسٹ اور چربی سے بھی گھی ،آئل ،مکھن وغیرہ تیار کرتے ہیں کھلے عام تھوک وپرچون فروخت کی جا رہی ہیں اور بیشتر طاقتور با اثر جعلساز سرکاری مشینری کے خصوصی تعاون سے ان ملاوٹی اور انسانی صحت کی قاتل اشیاء کو ملٹی نیشنل اور معیاری کمپنیوں کی جعلی پیکنگ میں پیک کر کے فروخت کر نے کے دھندے میں ملوث ہیں اور اس مکروہ دھندے کو حقیقت کا رنگ دینے کیلئے انہوں نے باقاعدہ طور پر اصلی کمپنیوں کی جعلی مہریں ،سٹکرز ،مونو گرام اور کیش میمو بھی بنوا رکھے ہیں جبکہ یہ ملاوٹی اور دو نمبر اشیاء روزانہ کے حساب سے بڑی مقدار میں خریدو فروخت کیلئے لائی جاتی ہیں اور اس میں کئی معروف سرمایہ دار ،تاجر ملوث ہیں ان جعلسازوں نے متعدد سیلز مین کمیشن ایجنٹ ،بروکر اور رکھے ہوئے ہیں جنہیں تنخواہ کی بجائے سیلز پالیسی کے تحت بھاری کمیشن دیا جاتا ہے اور اس بات کا بالکل خیال نہیں کیا جاتا کہ لوگ ان کے استعمال سے موذی و مہلک بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں اس لیے ان عناصر کے خلاف سخت اقدامات کی ضرورت ہے تاکہ یہ لوگوں کی زندگیوں سے کھیلنے میں کامیاب نہ ہو سکیں۔

Facebook Comments
Share Button