تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پاک فوج نےالیکشن میں دھاندلی نہ ہونےکی یقین دہانی کروائی 2013ء میں بھی انتخابات دھاندلی کا شکارہوگئےتھے،کراچی میں ایم کیوایم اور پنجاب میں ن لیگ نےدھاندلی کی۔پی ٹی آئی ... مزید-کلثوم نوازکی بیماری ڈھونگ ہے،ہمارےبھی وہاں ذرائع ہیں،نعیم الحق کلثوم نوازتیزی سےصحتیاب ہورہی ہیں، ہماری دعائیں ان کیساتھ ہیں،دعا ہے کہ کلثوم نوازجلدازجلد صحتیاب ہوکر ... مزید-عوامی ورکرز پارٹی کا تحریک انصاف ،ن لیگ اور دیگر سیاسی جماعتوں کے امیدواروں کو ایک ہی پلیٹ فارم پر اپنا منشور عوام کے سامنے پیش کرنے کا چیلنج نتخابات کے موقع پر ہی نظر ... مزید-نوازشریف کے ساتھ کیا اختلافات تھے مناسب وقت پر سچ سچ بتائوں گا ، کوئی ٹکٹ کے ساتھ آئے یا بغیر ٹکٹ کے یہاں کے عوام انہیں رد کریں گے، مجھے کشمیریوں کے قاتل راج ناتھ کو جواب ... مزید-صاف پانی سیکنڈل کیس ،نیب کا شہباز شریف کیلئے 25 سے زائد سوالات پر مشتمل سوالنامہ تیار-پشاور،مزدور کسان پارٹی کا انتخابات 2018میں قومی وطن پارٹی کے امیدواروں کی مکمل حمایت کا اعلان-پی ٹی آئی ایک پاکستان کا نعرہ لگا رہی ہے اور پارٹی ٹکٹ امیروں اور سرمایہ داروں میں تقسیم کئے، آفتاب شیر پائو ہم نے پارٹی ٹکٹوں کی تقسیم میرٹ پر کی ہے اور اہل امیدواروں ... مزید-متحدہ مجلس عمل پی کے 79 کے زیر اہتمام علماء کنونشن کل ہو گا،ملک نوشاد خان-تحریک انصاف سمیت دیگرسیاسی جماعتیں ایم ایم اے کے پانچ سالہ دوراقتدارکامقابلہ نہیں کرسکتی ہیں،حاجی غلام علی-آنے والے الیکشن انتہائی اہم اور اس ملک کی تقدیر کے لئے فیصلہ کن ہیں، اسد قیصر

GB News

گلگت بلتستان ورکنگ پارٹی کا اجلاس : 3ارب 79ارب 58کروڑ روپے لاگت کی دس ترقیاتی سکیموں کی جانچ پڑتال

Share Button

گلگت(پ ر )وزیر اعلیٰ کی زیر صدارت گلگت بلتستان ورکنگ پارٹی کے اجلاس میں 3ارب 79ارب 58کروڑ روپے لاگت کی دس ترقیاتی سکیموں کی جانچ پڑتال ہوئی ،پن بجلی کی پیداوار کے 2،صحت کے سماجی نظام کے ایک،بہبود آبادی کے ایک اور ,6آمدورفت اوررسد کے منصوبوںپر غور کیاگیا،بجلی کے دو منصوبوں کی مجموعی لاگت 64کروڑ روپے سے زیادہ ہے جس کے تحت ہنزہ میں3میگاواٹ کے دو پن بجلی گھر،1بتورا گلیشیئر پر،2میگاواٹ اور چپورزن میں ایک میگاواٹ کا منصوبہ ہے ان منصوبوں کی تکمیل سے ضلع ہنزہ میں بجلی کی قلت پر قابو پانے میں مدد ملے گی حکومت گلگت بلتستان نے پہلے ہی بجلی کی ترسیل کیلئے ہنزہ میں ٹرانسمیشن لائن کا منصوبہ منظور کیا ہے جس پرعملدرآمد جاری ہے،صحت کے شعبے میں غریب گھرانوں کے علاج کو بہتر بنانے کیلئے حکومت جرمنی کے اشتراک سے 39کروڑ 31لاکھ راپے کی لاگت سے ہیلتھ پروٹیکشن کے منصوبے کو منظور کیاگیا اس منصوبے کے تحت ضلع گلگت ،ہنزہ،نگر،غذر اور گانچھے میں صحت کی سہولیات فراہم کی جائیں گی جس سے نادار اور غریب گھرانوں کو صحت کے نظام کو بہتر بنانے میں مدد ملے گی،اس منصوبے کیلئے83 فیصد رقم جرمن حکومت فراہم کریگی جبکہ باقی ماندہ رقم حکومت گلگت بلتستان کے ذریعے سے پوری ہوگی،صحت کے شعبے میں توازن برقرار رکھنے کیلئے بہبود آبادی کے ایک منصوبے پر غور کیاگیا جس کی مجموعی لاگت 43کروڑ80لاکھ روپے بنتی ہے اس منصوبے کو وفاقی حکومت کی منظوری کیلئے سفارش کی گئی،آمدورفت اور رسد کے 6اہم منصوبوں پر غور کیاگیا جس کی مجموعی لاگت 2ارب31کروڑ91لاکھ روپے بنتی ہے پہلا منصوبہ معلق پلوں کو آر سی سی میں تبدیل کرنا ہے جس کی لاگت 40کروڑ روپے ہے اس کے تحت گلگت کے 8معلق پلوں کو آرسی سی بنایا جائے گا13کروڑ 77 کی رقم سے 186میٹر سے زائد لمبائی کے پلوں کو تعمیر کیا جائے گا،ضلع غذر میں 12کروڑ 58لاکھ کی لاگت سے 8پل تعمیر کیے جائیں گے ہنزہ میں4پلوں کی تعمیر کیلئے 4کروڑ 80لاکھ سے زائد کی رقم خرچ کی جائے گی۔دیامر اوربلتستان میں اسی نوعیت کے منصوبے پہلے ہی منظور کیے جاچکے ہیں،گلگت میں210میڑ لمبا آرسی سی پل 61کروڑ 77لاکھ کی لاگت سے تعمیر کیا جائے گا اس پل کی تعمیر سے صوبائی دارلحکومت کو ضلع ہنزہ،نگر کے مضافاتی مقامات کو ملانے میں آسانی ہوگی،بلتستان ریجن میں ترقی کی رفتار کو تیز کرنے کیلئے 3اہم منصوبوں کی منظوری دی گئی،سکردو ایئر پورٹ سے کلفٹن بریج تک روڈ چونکہ این ایچ اے کریگی لہٰذا تمام مختص وسائل سے چھومک سے تھورگور پائن تک بائی پاس روڈ بنایا جائے گا،صحت انشورنس کے دائرہ کار کو ہنزہ ،نگر،غذر اور گانچھے تک بڑھایا جائیگا جس کے بعد 30ہزار گھرانے مستفید ہونگے۔

 

Facebook Comments
Share Button