تازہ ترین

Marquee xml rss feed

وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی کی بھارتی ہم منصب سے ملاقات 27 ستمبرکونیویارک میں ہوگی-حضرت امام حسین ؓ اور ان کے خاندان کی قربانی ہمیں باطل قوتوں کے سامنے ڈٹ جانے کا درس دیتی ہے ،ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی-امام حسین کی قربانیوں کو یاد کرنے کے ساتھ پیغام پر بھی عمل کیا جائے ،سید منورحسن امام حسین ؓ سے عقیدت ومحبت کا تقاضہ ہے کہ اقتدار اور اختیار کے غلط استعمال کو روکا جائے ... مزید-وزیراعظم عمران خان کو 4 نئے ہیلی کاپٹر دینے کی پیش کش معروف کاروباری شخصیت نے وزیراعظم ہاوس کے 4 پرانے ہیلی کاپٹرز کے بدلے نئے ہیلی کاپٹر دینے کی پیش کش کردی-چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا لواری ٹنل بند ہونے کا نوٹس-بھارت نے وزیراعظم عمران خان کی ملاقات کی تجویز قبول کرلی 27 ستمبر کو جنرل اسمبلی اجلاس میں پاک بھارت وزرائے خارجہ شاہ محمود قریشی اور سشما سوراج کے درمیان ملاقات ہوگی-کے ڈی اے کو اپنے پاؤں پرکھڑا کرنا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ وزیر بلدیات سندھ ْماسٹر پلان ڈیپارٹمنٹ کا فیصلہ اور دیگرمعاملات کو غوروخوص کے بعد حل کیا جائے گا۔ سعید غنی-غربت،ناانصافی، جہالت، محرومی، جارحیت اور توسیع پسندانہ عزائم امن کے قیام میں بڑی رکاوٹیں ہیں، دنیا میں امن کے قیام کی کوششوں میں پاکستان ہراول دستے کا کردار ادا کررہا ... مزید-واقعہ کربلا صبر و تحمل، رواداری،ایثار اورقربانی کا درس دیتا ہے،حق و باطل کا یہ معرکہ مسلمانوں کو ظلم اور بربریت کیخلاف جہاد کرنے کا درس دیتاہے،وزیراعلیٰ سردار عثمان ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے اراکین اسمبلی اور تحریک انصاف کے عہدیداروں کی ملاقات

GB News

سلامتی کونسل سے عالم اسلام کو کوئی امید نہیں رکھنی چاہئے، سراج الحق

Share Button

امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے حکومت کی طرف سے 11 اپریل کو سینیٹ میں پیش کیا گیا متنازع آرڈی نینس ” انسداد دہشتگردی ایکٹ میں ترمیمی آرڈی نینس نمبر 2018-2 ء جو کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف سے پاکستان میں جماعت الدعوہ پر پابندی سے متعلق ہے کے خلاف نامنظوری کا نوٹس سینیٹ میں جمع کرادیا ۔ نوٹس پر ان کے ساتھ سینیٹر مشتاق احمد خان نے بھی دستخط کیے ہیں ۔بعد ازاں پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ سلامتی کونسل سے عالم اسلام کو کوئی امید نہیں رکھنی چاہیے ۔یہ کفن چوروں کا عالمی ٹولہ اور امریکہ کی کٹھ پتلی ہے ، جبکہ حکومت آرڈی نینس کے ذریعے قانون میں ترمیم کے ذریعے اپنے ملک کو اقوام متحدہ کی غلامی میں دے رہی ہے ۔ آرڈی نینس میں ترمیم کے حکومت نے جو اغراض و مقاصد بتائے ہیں ، وہ اپنی عدالتوں پر عدم اعتماد کا اظہار ہے ۔ اپنی عدالتوں کو سلامتی کونسل کا پابند بنانا عدالتوں کی بے توقیری ہے ۔ انہوںنے کہاکہ وزیر صاحب کہتے ہیں کہ عدالتیں ثبوت مانگتی ہیں اور بعض اوقات ہمارے پاس ثبوت نہیں ہوتے جس کی وجہ سے عدالتیں ملزموں کو رہا کردیتی ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ بغیر ثبوت کے کونسا قانون اجازت دیتاہے کہ لوگو ں کو پابند سلاسل کردیاجائے۔

Facebook Comments
Share Button