تازہ ترین

Marquee xml rss feed

گوادر میں پاکستان کا سب سے بڑا اور جدید ترین ائیرپورٹ تعمیر کرنے کی تیاریاں مکمل وزیراعظم عمران خان 29 مارچ کو ساحلی شہر میں منصوبے کا سنگ بنیاد رکھیں گے، منصوبہ سی پیک ... مزید-بلاول بھٹو 26مارچ کو کراچی سے ٹرین مارچ کا آغاز کریں گے، خورشید شاہ اٹھارہویں ترمیم کی حفاظت کے لیے قانون کےدائرے میں رہ کر جو بھی کر سکتے ہیں کریں گے، بلاول بھٹو زرداری-460ارب جرمانہ ملک ریاض نے نہیں، عوام نے ادا کرنا ہے، محمود صادق ملک ریاض کوعدالت سے ڈیل میں اب بھی 700 ارب منافع ہوگا، بحریہ ٹاؤن پر دباؤ بڑھنے سے کام ٹھپ ہوا تو لوگوں نے ... مزید-مفتی تقی عثمانی پر حملہ کرنیوالے ملزمان بہت جلد قانون کی گرفت میں ہوں گے،آئی جی سندھ-آئی ایس پی آر اور پاک فضائیہ کی جانب سے یومِ پاکستان 2019 کی مناسبت سے آفیشل نغمے جاری کردیے پاکستان زندہ آباد کے عنوان سے جاری کیے گئے نغمے میں وطن کے محفافظوں کو ... مزید-فیس بک کا بغیر اجازت نامناسب تصاویر اپ لوڈ یا شیئر کرنے والے صارفین کو بلاک کے نئے اقدامات کا اعلان کسی کی نامناسب تصاویر اس کی اجازت کے بغیر شیئر کرنا نقصان دہ ہے، ہم ... مزید-وزیراعلیٰ سندھ کا مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے میں شہید اہلکار کے نابینا بچوں کے علاج کرانے اور مفت تعلیم کا اعلان-یوم پاکستان : گورنر اور وزیراعلیٰ سندھ نے مزار قائد پر حاضری دی،ملکی سلامتی کیلئے دعاکی-سعودی ولی عہد کی مہمان نواز کرنے والے ملازمین میں ایک کروڑ اعزازی تنخواہ دیئے جانے کا انکشاف-ملائیشیا پاکستان کی دفاعی صنعت سے بے حد متاثر، پاکستان کے اینٹی ٹینک میزائل خریدنے میں دلچسپی کا اظہار گزشتہ روز ملائیشیا کے وزیراعظم نے جے ایف 17 تھنڈر جنگی طیاروں کی ... مزید

GB News

پی ٹی اے گلگت بلتستان میں جلد تھری اور فور جی سروس شروع کرے، قانون ساز اسمبلی کی قرارداد

Share Button

گلگت بلتستان قانون سازاسمبلی نے ایک قرارداد کی متفقہ طورپر منظوری دی ہے جس میں پی ٹی اے سے گلگت بلتستان میں بھی تھری جی فور جی سروس شروع کرنے کا مطالبہ کیاگیا ہے۔قرارداد میں کہاگیاہے کہ گلگت بلتستان کا یہ مقتدر ایوان محسوس کرتا ہے کہ آج کے اس جدید مواصلاتی دورمیں گلگت بلتستان جیسا دور افتادہ علاقہ تھری جی اورفور جی سروس سے یکسر محروم ہے جس سے عوام کو شدید مواصلاتی مشکلات پیش آرہی ہیں جبکہ ملک کے دیگر صوبوں اور آزاد کشمیر میں تھری جی فور جی سروس دستیاب ہے اس لئے یہ مقتدر ایوان پی ٹی اے اور ایس سی او حکام سے مطالبہ کرتا ہے کہ گلگت بلتستان میں بھی تھری جی فور جی سروس کو فوراً شروع کیا جائے تاکہ گلگت بلتستان کے عوام اس جدید مواصلاتی سروس سے مستفید ہو سکیں۔یہ قرارداد جمعرات کے روز پارلیمانی سیکرٹری میجر(ر) محمد امین نے ایوان میں پیش کی قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کاچو امتیازحیدر نے کہا کہ تھری جی فور جی سروس دینا ایس سی او کے بس کی بات نہیں ہے دیگر کمپنیوں کو تھری جی فور جی کا لائسنس جاری کیا جائے انہوںنے کہا کہ ایس سی او نے آزمائشی بنیادوں پر تھری جی فورجی سروس شروع کی تھی مگر ان کی سروس انتہائی ناقص ہے ایس سی او نے ڈیٹا کا بینڈورتھ بہت کم کیا ہے جس کی وجہ سے ان کی سروس خراب ہے وزیرقانون اورنگزیب ایڈووکیٹ نے قرارداد کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ یہ قرارداد اسمبلی کیساتھ مذاق ہے۔جاوید حسین نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ جب آزاد کشمیر کوتھری جی فور جی سروس دی جاسکتی ہے تو گلگت بلتستان کو تھری جی فور جی سروس کیوں نہیں دی جاسکتی ہے۔وزیرتعلیم حاجی ابراہیم ثنائی نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک عوامی مسئلہ ہے اسے ہم نظر انداز نہیں کرسکتے ہیں انہوںنے کہاکہ گلگت بلتستان میں دیگر کمپنیاں بھی تھری جی فور جی سروس شروع کرنا چاہتی ہیں مگر ایس سی او اس میں رکاوٹ بنا ہوا ہے ایس سی او کی سروس انتہائی خراب ہے ایس سی او کو اپنی سروس بہتر بنانے کی طرف توجہ دیناچاہیے۔نواز خان ناجی نے کہا کہ ایس سی او کی بہت سے شکایات سامنے آرہی ہیں نوجوان جذباتی ہیںانہوںنے کہاکہ تھری جی فور جی میںکسی بھی قسم کی کوئی رکاوٹ نہیںہے۔قرارداد کی سوائے وزیر قانون اورنگزیب ایڈووکیٹ کے کسی نے بھی مخالفت نہیں کی جس پر ڈپٹی سپیکر جعفر اللہ خان نے قرارداد کی بھاری اکثریت سے منظوری کا اعلان کرتے ہوئے اپنے ریمارکس میں کہا کہ گلگت بلتستان میں ایس سی او کی اجارہ داری بھی ہے خدمات بھی ہیںاورشکایات بھی ہیں انہوںنے کہا کہ ایس سی او کی سروس انتہائی ناقص ہے خود میرے دفتر میں ڈی ایس ایل لگا ہوا ہے کبھی چلتاہے مگر اکثر بند رہتا ہے جب شکایت کرتے ہیں تو وہ ٹھیک بھی نہیں کرتے ہیںانہوںنے کہا کہ دو سال قبل جب سابق وزیراعظم گلگت تشریف لائے تھے اور فائبر آپٹک کاسنگ بنیاد رکھنے کی تقریب تھی تو ایس سی او کے ذمہ دار حکام نے بڑی بڑی باتیں کی تھیں اور گلگت بلتستان میں انقلاب لانے کا دعویٰ کیا تھا مگر اب تک انقلاب اور تبدیلی تو دور کی بات ہے سروس کے معیار میں کچھ بھی بہتری نہیں آئی ہے ۔ابھی تک ہمیں کوئی تبدیلی اور انقلاب کہیں نظرنہیں آرہا ہے انہوںنے کہا کہ ایس سی او کی یہ ذمہ داری بنتی ہے کہ اپنی سروس کو بہتر کرے اگرسسٹم چلانے کی صلاحیت نہیںہے تو دیگر موبائل کمپنیوں کے حوالے کرے انہوںنے کہا کہ ہم اس قرارداد کے ساتھ ایس سی او کے ذمہ دار حکام کولکھیں گے کہ وہ ایک ماہ کے اندر اندر اپنی سروس کوبہتر کرے اگر ایک ماہ کے اندر اندر سروس ٹھیک نہیں کرسکتے ہیں توہمیں آگاہ کریں ہم وفاق میں ذمہ دار حکام اور پی ٹی اے سے بات کر کے متبادل انتظام کریںگے۔

Facebook Comments
Share Button