تازہ ترین

Marquee xml rss feed

اںڈے برآمد ہونے کے بعد سیکیورٹی اہلکار چوکنے ہوگئے رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ سیکیورٹی اہلکارہر بار ان سے پوچھتے ہیں کہ ان کے پاس انڈے تو نہیں ہیں-گرفتار رکن کو پنجاب اسمبلی میں لانے کیلئے شہبازشریف نے رولز میں ترمیم نہیں کی تھی‘ چودھری پرویزالٰہی سب سے زیادہ فلاحی کام ہمارے دور میں ہوئے‘باباجی خالد محمود مکی ... مزید-یکم جنوری سے تمام کمرشل ڈرائیورز کی سکریننگ اور مرحلہ وار خصوصی تربیتی کورسز کرانے کا فیصلہ 6ماہ میں ہر ڈرائیور کو اس عمل سے گزارا جائے ،آگاہی مہم جاری رکھی جائے‘عبدالعلیم ... مزید-آئی ایم ایف کی شرائط کے انتظار سے پہلے ہی معیشت کی بہتری کیلئے ازخود اقدامات کئے ‘ اسد عمر اصلاحات کے معاملے پر آئی ایم ایف اور حکومت کے درمیان اختلافات ہیں ،اقدامات ... مزید-سعودی عرب سے امداد حاصل کرنے پر پاکستان کو شرمندگی نہیں ہونی چاہیئے ہمیں شرم کرنے کا کہنے کی بجائے مغربی ملکوں کے رہنماوں کو شرم آنی چاہیے جو جمہوریت اور آزادی کی بات ... مزید-لندن میں پاکستانی تاجر کا کروڑوں کا کاروبار جل کر راکھ نسل پرستوں نے پاکستانی تاجر کی کروڑوں روپے مالیت کی گاڑیاں جلا ڈالیں-احتساب عدالت نے شوکت عزیز کیخلاف دائر ریفرنس میں شریک ملزم عارف علاؤالدین کو عدم حاضری کی بناء پر اشتہاری قرار دیدیا-جنگی حکمت عملی میں ہمیں ہائبرڈوار فئیر اور سائبر وار فئیر کے خلاف چوکنا رہنا ہے ،ْ نیول چیف ایڈمرل ظفر محمود عباسی جیو اسٹریٹجک حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے ہمیں اپنے قومی ... مزید-ْ پروٹوکول میں جو بات بتائی گئی اس میں کوئی بھی چیز یہاں موجود نہیں ،ْ چیف جسٹس ثاقب نثار-امریکہ نے پاکستان کو باعث تشویش ممالک پر عائد معاشی پابندیوں سے استثنیٰ دے دیا گذشتہ روز امریکہ نے پاکستان کو مذہبی آزادی کی خلاف ورزی کرنے والے ممالک کی فہرست میں ... مزید

GB News

پی ٹی اے گلگت بلتستان میں جلد تھری اور فور جی سروس شروع کرے، قانون ساز اسمبلی کی قرارداد

Share Button

گلگت بلتستان قانون سازاسمبلی نے ایک قرارداد کی متفقہ طورپر منظوری دی ہے جس میں پی ٹی اے سے گلگت بلتستان میں بھی تھری جی فور جی سروس شروع کرنے کا مطالبہ کیاگیا ہے۔قرارداد میں کہاگیاہے کہ گلگت بلتستان کا یہ مقتدر ایوان محسوس کرتا ہے کہ آج کے اس جدید مواصلاتی دورمیں گلگت بلتستان جیسا دور افتادہ علاقہ تھری جی اورفور جی سروس سے یکسر محروم ہے جس سے عوام کو شدید مواصلاتی مشکلات پیش آرہی ہیں جبکہ ملک کے دیگر صوبوں اور آزاد کشمیر میں تھری جی فور جی سروس دستیاب ہے اس لئے یہ مقتدر ایوان پی ٹی اے اور ایس سی او حکام سے مطالبہ کرتا ہے کہ گلگت بلتستان میں بھی تھری جی فور جی سروس کو فوراً شروع کیا جائے تاکہ گلگت بلتستان کے عوام اس جدید مواصلاتی سروس سے مستفید ہو سکیں۔یہ قرارداد جمعرات کے روز پارلیمانی سیکرٹری میجر(ر) محمد امین نے ایوان میں پیش کی قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کاچو امتیازحیدر نے کہا کہ تھری جی فور جی سروس دینا ایس سی او کے بس کی بات نہیں ہے دیگر کمپنیوں کو تھری جی فور جی کا لائسنس جاری کیا جائے انہوںنے کہا کہ ایس سی او نے آزمائشی بنیادوں پر تھری جی فورجی سروس شروع کی تھی مگر ان کی سروس انتہائی ناقص ہے ایس سی او نے ڈیٹا کا بینڈورتھ بہت کم کیا ہے جس کی وجہ سے ان کی سروس خراب ہے وزیرقانون اورنگزیب ایڈووکیٹ نے قرارداد کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ یہ قرارداد اسمبلی کیساتھ مذاق ہے۔جاوید حسین نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ جب آزاد کشمیر کوتھری جی فور جی سروس دی جاسکتی ہے تو گلگت بلتستان کو تھری جی فور جی سروس کیوں نہیں دی جاسکتی ہے۔وزیرتعلیم حاجی ابراہیم ثنائی نے قرارداد کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک عوامی مسئلہ ہے اسے ہم نظر انداز نہیں کرسکتے ہیں انہوںنے کہاکہ گلگت بلتستان میں دیگر کمپنیاں بھی تھری جی فور جی سروس شروع کرنا چاہتی ہیں مگر ایس سی او اس میں رکاوٹ بنا ہوا ہے ایس سی او کی سروس انتہائی خراب ہے ایس سی او کو اپنی سروس بہتر بنانے کی طرف توجہ دیناچاہیے۔نواز خان ناجی نے کہا کہ ایس سی او کی بہت سے شکایات سامنے آرہی ہیں نوجوان جذباتی ہیںانہوںنے کہاکہ تھری جی فور جی میںکسی بھی قسم کی کوئی رکاوٹ نہیںہے۔قرارداد کی سوائے وزیر قانون اورنگزیب ایڈووکیٹ کے کسی نے بھی مخالفت نہیں کی جس پر ڈپٹی سپیکر جعفر اللہ خان نے قرارداد کی بھاری اکثریت سے منظوری کا اعلان کرتے ہوئے اپنے ریمارکس میں کہا کہ گلگت بلتستان میں ایس سی او کی اجارہ داری بھی ہے خدمات بھی ہیںاورشکایات بھی ہیں انہوںنے کہا کہ ایس سی او کی سروس انتہائی ناقص ہے خود میرے دفتر میں ڈی ایس ایل لگا ہوا ہے کبھی چلتاہے مگر اکثر بند رہتا ہے جب شکایت کرتے ہیں تو وہ ٹھیک بھی نہیں کرتے ہیںانہوںنے کہا کہ دو سال قبل جب سابق وزیراعظم گلگت تشریف لائے تھے اور فائبر آپٹک کاسنگ بنیاد رکھنے کی تقریب تھی تو ایس سی او کے ذمہ دار حکام نے بڑی بڑی باتیں کی تھیں اور گلگت بلتستان میں انقلاب لانے کا دعویٰ کیا تھا مگر اب تک انقلاب اور تبدیلی تو دور کی بات ہے سروس کے معیار میں کچھ بھی بہتری نہیں آئی ہے ۔ابھی تک ہمیں کوئی تبدیلی اور انقلاب کہیں نظرنہیں آرہا ہے انہوںنے کہا کہ ایس سی او کی یہ ذمہ داری بنتی ہے کہ اپنی سروس کو بہتر کرے اگرسسٹم چلانے کی صلاحیت نہیںہے تو دیگر موبائل کمپنیوں کے حوالے کرے انہوںنے کہا کہ ہم اس قرارداد کے ساتھ ایس سی او کے ذمہ دار حکام کولکھیں گے کہ وہ ایک ماہ کے اندر اندر اپنی سروس کوبہتر کرے اگر ایک ماہ کے اندر اندر سروس ٹھیک نہیں کرسکتے ہیں توہمیں آگاہ کریں ہم وفاق میں ذمہ دار حکام اور پی ٹی اے سے بات کر کے متبادل انتظام کریںگے۔

Facebook Comments
Share Button