تازہ ترین

Marquee xml rss feed

اںڈے برآمد ہونے کے بعد سیکیورٹی اہلکار چوکنے ہوگئے رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ سیکیورٹی اہلکارہر بار ان سے پوچھتے ہیں کہ ان کے پاس انڈے تو نہیں ہیں-گرفتار رکن کو پنجاب اسمبلی میں لانے کیلئے شہبازشریف نے رولز میں ترمیم نہیں کی تھی‘ چودھری پرویزالٰہی سب سے زیادہ فلاحی کام ہمارے دور میں ہوئے‘باباجی خالد محمود مکی ... مزید-یکم جنوری سے تمام کمرشل ڈرائیورز کی سکریننگ اور مرحلہ وار خصوصی تربیتی کورسز کرانے کا فیصلہ 6ماہ میں ہر ڈرائیور کو اس عمل سے گزارا جائے ،آگاہی مہم جاری رکھی جائے‘عبدالعلیم ... مزید-آئی ایم ایف کی شرائط کے انتظار سے پہلے ہی معیشت کی بہتری کیلئے ازخود اقدامات کئے ‘ اسد عمر اصلاحات کے معاملے پر آئی ایم ایف اور حکومت کے درمیان اختلافات ہیں ،اقدامات ... مزید-سعودی عرب سے امداد حاصل کرنے پر پاکستان کو شرمندگی نہیں ہونی چاہیئے ہمیں شرم کرنے کا کہنے کی بجائے مغربی ملکوں کے رہنماوں کو شرم آنی چاہیے جو جمہوریت اور آزادی کی بات ... مزید-لندن میں پاکستانی تاجر کا کروڑوں کا کاروبار جل کر راکھ نسل پرستوں نے پاکستانی تاجر کی کروڑوں روپے مالیت کی گاڑیاں جلا ڈالیں-احتساب عدالت نے شوکت عزیز کیخلاف دائر ریفرنس میں شریک ملزم عارف علاؤالدین کو عدم حاضری کی بناء پر اشتہاری قرار دیدیا-جنگی حکمت عملی میں ہمیں ہائبرڈوار فئیر اور سائبر وار فئیر کے خلاف چوکنا رہنا ہے ،ْ نیول چیف ایڈمرل ظفر محمود عباسی جیو اسٹریٹجک حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے ہمیں اپنے قومی ... مزید-ْ پروٹوکول میں جو بات بتائی گئی اس میں کوئی بھی چیز یہاں موجود نہیں ،ْ چیف جسٹس ثاقب نثار-امریکہ نے پاکستان کو باعث تشویش ممالک پر عائد معاشی پابندیوں سے استثنیٰ دے دیا گذشتہ روز امریکہ نے پاکستان کو مذہبی آزادی کی خلاف ورزی کرنے والے ممالک کی فہرست میں ... مزید

GB News

مریضوں کے لواحقین کا چلاس ہسپتال کے ڈاکٹروں کیخلاف سخت احتجاج ک

Share Button

چلاس(بیورورپورٹ)ڈی ایچ کیو ہسپتال چلاس کے ڈاکٹروں کی طرف سے او پی ڈیز بند کرکے بلاجواز ہڑتال کرنے کے خلاف دیامر کے مختلف علاقوں سے اپنے مریضوں کے ساتھ آنے والے لوگوں نے چلاس ہسپتال کے ڈاکٹروں کے خلاف شاہراہ قائد اعظم بلاک کرکے سخت احتجاج کیا ۔مظاہرین نے چلاس بازار ،چلاس ہسپتال اور کے کے ایچ کو جانے والی لنک سڑکوں پر پتھر ڈال کر سڑک کو ہر طرف سے ہر قسم کی ٹریفک کیلئے بند کر دیا ،اور چلاس ہسپتال کے ڈاکٹروں کی من مانی کے خلاف شدید نعرے بازی کی ۔مظاہرین نے چلاس ہسپتال کے نااہل ڈاکٹر مردہ باد کے فلگ شگاف نعرے بھی لگائے اور محکمہ صحت کے خلاف برس پڑے۔مظاہرین نے ایک گھنٹے تک شاہراہ قائد اعظم کو بلاک رکھا اور شدید غم و غصے کا اظہار بھی کیا گیا۔مظاہرین نے کہا کہ گلگت سٹی ہسپتال کے ڈاکٹر کے ساتھ پولیس کی بدتمیزی پر چلاس ہسپتال کے ڈاکٹروں کا احتجاج بلاجواز ہے ۔چلاس ہسپتال کے ڈاکٹر بے لگام ہوچکے ہیں اور گلگت ہسپتال کے ایک ڈاکٹر کے ساتھ پولیس کی بدتمیزی کی سزا چلاس ہسپتال کے ڈاکٹر ہمارے مریضوں کو دے رہے ہیں ۔انہوںنے کہا کہ مریض لیکر صبح ٧ بجے چلاس ہسپتال پہنچے ہیں کوئی بھی ڈاکٹر مریضوں کو چیک اپ کرنے کیلئے تیار نہیں ہے ،چلاس ہسپتال کے ڈاکٹر مسیحائی کی بجائے ہمارے مریضوں کی قصائی کررہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ چلاس ہسپتال میں ظلم کی تاریخ رقم ہورہی ہے ،حکومتی رٹ کمزور ہوچکی ہے ،یہاں کے ڈاکٹروں نے حکومت اور انتظامیہ کو یرغمال بنایا ہوا ہے ،کوئی قانون نہیں ہے یہاں کے ڈاکٹر اپنی مرضی سے ڈیوٹی پر آتے ہیں اور آپنی مرضی سے چھٹی لیکر گھوم رہے ہیں ،کوئی پوچھنے والا نہیں ہر طرف اندھیر نگری چوپٹ راج ہے ۔انہوں نے کہا کہ ڈائریکٹرہیلتھ اور ایم ایس چلاس ہسپتال میں موجود نہیں ہیں اور ڈاکٹر اپنی مرضی کے مالک بنے پھرتے ہیں اور ہسپتال آنے کے بجائے کلنکوں کو سجائے بیٹھے ہیں ۔احتجاجی مظاہرین نے مزید کہا کہ خدا را وزیر علی ا ور چیف سیکرٹری ان ڈاکٹروں کا قبلہ درست کریں ،ان ڈاکٹروں نے گلگت بلتستان میں اپنی الگ حکومت قائم کی ہوئی ہے اور حکومتی رٹ کو چیلنج کررہے ہیں ،آئے روز غیر ضروری احتجاج کرکے عوام اور مریضوں کو رولا رہے ہیں یہ کہاں کا قانون اور کہاں کا انصاف ہے ۔ڈاکٹروں کے خلاف احتجاج کرنے والے مریضوں کے لواحقین اور عوام الناس چلاس سے مذکرات کرتے ہوئے ایس پی دیامر رائے اجمل نے کہا کہ مظاہرین کے مطالبات پر غور کریں گے اور چلاس ہسپتال کے ڈاکٹروں کو ہسپتال لانے کیلئے بھر پور کوشیش کی جائیگی ۔ایس پی دیامر کی یقین دہانی پر مظاہرین پرامن طریقے سے منتشر ہوگئے۔

Facebook Comments
Share Button