تازہ ترین

Marquee xml rss feed

وزیرخارجہ شاہ محمودقریشی کی بھارتی ہم منصب سے ملاقات 27 ستمبرکونیویارک میں ہوگی-حضرت امام حسین ؓ اور ان کے خاندان کی قربانی ہمیں باطل قوتوں کے سامنے ڈٹ جانے کا درس دیتی ہے ،ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی-امام حسین کی قربانیوں کو یاد کرنے کے ساتھ پیغام پر بھی عمل کیا جائے ،سید منورحسن امام حسین ؓ سے عقیدت ومحبت کا تقاضہ ہے کہ اقتدار اور اختیار کے غلط استعمال کو روکا جائے ... مزید-وزیراعظم عمران خان کو 4 نئے ہیلی کاپٹر دینے کی پیش کش معروف کاروباری شخصیت نے وزیراعظم ہاوس کے 4 پرانے ہیلی کاپٹرز کے بدلے نئے ہیلی کاپٹر دینے کی پیش کش کردی-چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا لواری ٹنل بند ہونے کا نوٹس-بھارت نے وزیراعظم عمران خان کی ملاقات کی تجویز قبول کرلی 27 ستمبر کو جنرل اسمبلی اجلاس میں پاک بھارت وزرائے خارجہ شاہ محمود قریشی اور سشما سوراج کے درمیان ملاقات ہوگی-کے ڈی اے کو اپنے پاؤں پرکھڑا کرنا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ وزیر بلدیات سندھ ْماسٹر پلان ڈیپارٹمنٹ کا فیصلہ اور دیگرمعاملات کو غوروخوص کے بعد حل کیا جائے گا۔ سعید غنی-غربت،ناانصافی، جہالت، محرومی، جارحیت اور توسیع پسندانہ عزائم امن کے قیام میں بڑی رکاوٹیں ہیں، دنیا میں امن کے قیام کی کوششوں میں پاکستان ہراول دستے کا کردار ادا کررہا ... مزید-واقعہ کربلا صبر و تحمل، رواداری،ایثار اورقربانی کا درس دیتا ہے،حق و باطل کا یہ معرکہ مسلمانوں کو ظلم اور بربریت کیخلاف جہاد کرنے کا درس دیتاہے،وزیراعلیٰ سردار عثمان ... مزید-وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار سے مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے اراکین اسمبلی اور تحریک انصاف کے عہدیداروں کی ملاقات

GB News

بجلی کی طویل ترین لوڈشیڈنگ ، سکردو میں نظام زندگی مفلوج

Share Button

سکردو(چیف رپورٹر)بجلی کی طویل ترین لوڈشیڈنگ کے باعث سکردو میں نظام زندگی مفلوج ہو گیا ، تین روز سے سکردو شہر مکمل طور پر اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے لیکن حکومت تماشائی بن گئی ہے بجلی غائب ہونے کے باعث نشریاتی اداروں کی نشریات معطل ہو گئی ہیں اشاعتی اداروں میں امور ٹھپ ہو گئے ہیں صورتحال اس قدر خراب ہو گئی ہے کہ موبائل فون چارج کرنے کیلئے لوگوں نے جنریٹرز کرائے پر حاصل کر لیے ہیں کہا جاتا ہے کہ بجلی بحران کی بنیادی وجہ محکمہ برقیات اور واپڈا کی باہمی چپقلش سے ایک دوسرے پر الزام تراشی کے ذریعے بری الذمہ ہونے کی ناکام کوشش کر رہے ہیں دونوں کے باہمی جھگڑے نے عوام کو مسائل کے بھنور میں پھنسا دیا ہے لیکن جس شخص کو بجلی کے معاملے کو درست کرنے کی ذمہ داری سونپی گئی ہے وہ اپنی ذمہ داریوں سے بالکل ہی لاتعلق ہو گیا ہے وہ سکردو میں نجی محفلوں میں کیا کرتے ہیں کہ بجلی کے بحران کے قصور وار وہ نہیں ہیں سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ بجلی کے ناقص نظام کے قصوروار متعلقہ وزیر نہیں ہیں تو اور کون ہے؟ اگر قصور وار متعلقہ افسران ہیں تو کیا وہ وزیر کے ماتحت نہیں ہیں؟ شہری کسی بھی صورت میں بجلی بحران سے متعلق متعلقہ وزیر کی صفائی اور وضاحت کو قبول کرنے کیلئے تیار نظر نہیں آتے ہیں ان کا ایک ہی مطالبہ ہے کہ فوری طور پر بجلی بحران پر قابو پا کر ان کی مشکلات دور کی جائیں شہریوں نے پاک فوج سے اپیل کی ہے کہ وہ بجلی کے مصنوعی بحران پر قابو پانے کیلئے آگے بڑھے کیونکہ حکومت مکمل طور پر مفلوج ہو گئی ہے حکومت صرف مسائل پیدا کر رہی ہے حل کرنے کی اس میں کوئی صلاحیت نہیں ہے۔ دوسری جانب انجمن تاجران نے بجلی کی لوڈشیڈنگ پر ایک ہفتے کے اندر اندر قابو نہ پانے کی صورت میں واپڈا کے دفاتر کا گھیرائو کرنے کا اعلان کر دیا ہے اور کہا ہے کہ بجلی کے بحران پر قابو نہ پایا گیا تو حالات کی ذمہ دار حکومت ہو گی کے پی این سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اربوں روپے خرچ کرنے کے باوجود بجلی نہیں مل رہی ہے ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ واپڈا پاور ہائوس میں نصب کی جانے والی مشینری کی اعلیٰ سطح پر تحقیقات کرائی جائے ، غیرمعیاری اور دو نمبر مشینری نصب کرنے والوں کے خلاف ایکشن لیا جائے ، سکردو اس وقت مکمل طور پر اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے کہیں کوئی بجلی نہیں ہے صوبائی حکومت مفلوج ہو گئی ہے اپریل کے مہینے میں سنگین بحران کا یہ پہلا واقعہ ہے ہم امن پسند ہیں ہماری امن پسندی کا غلط فائدہ نہ اٹھایا جائے ۔ چاہتے ہیں کہ بجلی کے بحران پر فوری طور پر قابو پایا جائے بصورت دیگر صورتحال نہایت سنگین ہو جائے گی انہوں نے کہا کہ احتجاج کو موثر بنانے کیلئے عوامی ایکشن کمیٹی کے ساتھ رابطہ کیا جا رہا ہے ایکشن کمیٹی اور انجمن تاجران مشترکہ طور پر بجلی کے بحران پر لائحہ عمل طے کرے گی کسی صورت میں بھی خاموش نہیں رہیں گے انہوں نے کہا کہ سکردو کے خلاف بڑی سازش ہو رہی ہے بجلی کے طویل بریک ڈائون نے تمام چیزیں جام کر دی ہیں کاروبار زندگی ٹھپ ہو گیا ہے تاجر دیوالیہ ہو رہے ہیں مگر حکومت ٹس سے مس ن ہیں ہے اب عوام مزید صبر نہیں کریں گے ایک ہفتے کے بعد عوام واپڈا کے دفاتر کا رخ کریں گے حالات کی ذمہ دار حکومت ہو گی اگر ایک ہفتے میں بجلی کی صورتحال کو کنٹرول نہ کیا گیا تو عوام کوئی بھی قدم اٹھائیں گے جس کیلئے وہ تیاری کریں۔بجلی کے طویل ترین بریک ڈائون کے خلاف طفیل کالونی کے مکین سڑکوں پر نکل آئے سکردو کی سب سے مصروف ترین شاہراہ کو ہر قسم کی ٹریفک کیلئے بلاک کر کے احتجاجی مظاہرہ کیا مظاہرین نے صوبائی حکومت کے خلاف شدید نعرے لگائے ، مظاہرین نے کہا کہ سات روز سے علاقہ اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے لیکن ذمہ داری اٹھانے کیلئے کوئی تیار نہیں ہے ، صوبائی حکومت مکمل طور پر ناکام ہو گی ہے اس کا کام صرف ٹھیکے تقسیم کرنا رہ گیا ہے ہماری امن پسندی سے حکومت غلط فائدہ اٹھا رہی ہے اب ہمارے صبر کا پیمانہ لبریز ہو گیا صوبائی وزیر پانی و بجلی کہتے تھے کہ سکردو میں بجلی کا کوئی مسئلہ پیش نہیں آ رہا ہے بتایا جائے کہ اب وہ کہاں غائب ہیں؟ ان کی تقریریں کام نہیں آئیں، بجلی بحران پر قابو پانے کیلئے صلاحیت پیدا کرنا ہو گی جب بجلی کے معاملات کو نمٹانا اس کے بس کی بات نہیں تھی تو اکبر تابان کو وزارت پانی و بجلی قبول ہی نہیں کرنی چاہیے تھی انہوں نے کہا کہ سکردو میں ہر طرف اندھیرا ہی اندھیرا ہے طویل ترین لوڈشیڈنگ نے نظام زندگی مفلوج کر دیا ہے بجلی سے چلنے والی تمام مشینیں جام ہو گئی ہیں موبائل فون چارج کرنے کیلئے بھی بجلی دستیاب نہیں ہے انہوں نے کہا کہ بااثر لوگوں کو بجلی کی سپیشل لائنیں دی جا رہی ہیں غریب لوگوں کو ہر طرح سے دیوار سے لگایا جا رہا ہے ہم اب تنگ آ گئے ہیں حکومت کو چین سے بیٹھنے نہیں دیں گے۔ایم ڈبلیو ایم کے صوبائی سیکرٹری جنرل سید علی رضوی نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت بجلی بحران پر قابو پانے میں مکمل طور پر ناکام ہو گئی ہے لہٰذا فورس کمانڈر میجر جنرل ثاقب محمود اور کمانڈر 62بریگیڈ بریگیڈیئر اظہر منیر کاہلو آگے بڑھیں کیونکہ بجلی کے طویل ترین بریک ڈائون کے باعث حالات خراب ہونے کا خدشہ ہے ، عوام بڑی مشکل میں ہیں حکومت بجلی کے مسائل حل کرنے میں بالکل سنجیدہ نہیں ہے ۔ کے پی این سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پچھلے کئی دنوں سے سکردو اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے لیکن متعلقہ وزیر کھیل کود میں مصروف ہیں انہیں بجلی کے امور سے بالکل دلچسپی ہی نہیں ہے وہ صرف اپنے اثاثے بڑھانے کے چکر میں ہیں کیونکہ آئندہ الیکشن میں انہوں نے اول تو آنا نہیں ہے اگر آتے بھی ہیں تو بری طرح شکست سے دوچار ہو جائیں گے کیونکہ ان کی کارکردگی عوام کے سامنے ہے عوام تاریکی میں متاثر ہو رہے ہیں مگر ان کے نمائندے راولپنڈی اسلام آباد میں عیاشیاں کر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ فیصلہ کر چکے ہیں کہ عوام کے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں اور زیادیوں پر مزید خاموش نہیں رہیں گے جان دیں گے قربانی دے کر حقوق حاصل کریں گے اب گھر میں آرام و سکون کی زندگی نہیں گزاریں گے عوام اپنے حقوق کے تحفظ اور زیادتیوں کے ازالے کیلئے اٹھ کھڑے ہوں۔تحریک انصاف کے صوبائی سیکرٹری اطلاعات و سابق چیئرمین بلدیہ سکردو تقی اخونزادہ نے کہا ہے کہ سکردو مکمل طور پر اندھیرے میں ڈوبا ہوا ہے لیکن صوبائی وزیر برقیات اکبر تابان محکمہ تعمیرات عامہ میں ٹھیکے فروخت کر رہے ہیں انہیں عوام کی مشکلات کا کوئی احساس نہیں ہے ، میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ محکمہ تعمیرات عامہ اکبر تابان کی انشورنس پالیسی ہے جہاں سے وہ کمیشن لے رہے ہیں عوام کو اندھیرے میں دھکیل کر وزیر برقیات مال بنانے میں مصروف ہیں ، تین سال میں انہوں نے کروڑوں روپے کی جائیدادیں بنائی ہیں سکردو میں تاریخ کا بدترین بریک ڈائون جاری ہے جس کے باعث ہر طرف پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ، تجارتی سرگرمیاں معطل ہو گئی ہیں کاروباری طبقے تباہی کے دہانے پر پہنچ گئے ہیں۔تحریک انصاف بجلی کے مسئلے پر جلد احتجاج کرے گی ، ہڑتال کر کے حکومت کو اپنی اوقات یاد دلائے گی۔ہفتہ کے روز سکردو شہر میں صرف 9 منٹ کیلئے بجلی آئی پھر صورت دکھا کر چلی گئی جب تین روز بعد بجلی نظر آئی تو بہت سارے لوگوں نے خوشیاں منائیں ، خوشیاں منانے والے شہریوں سے دوسرے لوگوں نے کہا کہ زیادہ خوش نہ ہوں بجلی پھر واپس چلی جائے گی ، یہ صرف اپنی شکل دکھانے کیلئے آئی ہے مگر خوشیاں منانے والوں نے خوب خوشیاں منائیں اور کہا کہ بجلی نہیں جائے گی بحث مباحثے جاری ہی تھے کہ بجلی بند ہو گئی جس پر خوشیاں منانے والوں کے چہرے مرجھا گئے اور حکومت کو کوسنا شروع کر دیا ایک دوسرے سے سوال کرتے نظر آئے کہ اب بجلی کب واپس آئے گی۔

گلگت(نامہ نگار)متعلقہ محکمہ کی غفلت اورعدم توجہ کے باعث گلگت میں بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ نے عوام کاجینا محال کردیا ہے بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ سے گھریلو معمولات زندگی مفلوج ہو کر رہ گئی ہے جبکہ دوسری جانب کاروباری مراکز بھی لوڈشیڈنگ سے شدید متاثر ہورہی ہے وزیراعلیٰ اور چیف سیکرٹری نوٹس لیں گلگت کے مختلف عوامی و سماجی حلقوں نے بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ پر شدید تشویش کااظہارکرتے ہوئے کے پی این کو بتایا کہ حکومت اور محکمہ برقیات گلگت شہرمیں بجلی کی لوڈشیڈنگ کنٹرول کرنے میں ناکام ہو چکے ہیں۔علاقے میں سولہ گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہوہی ہے جبکہ متعلقہ محکمہ کے ذمہ داران خاموش تماشائی کا کردارادا کررہے ہیں بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ سے کاروباری حضرات بالخصوص نیٹ کیفے اور ورکشاپ سے وابستہ افراد کا کاروبارٹھپ ہو کر رہ گیا ہے انہوںنے کہا کہ ہر سال اپریل کے مہینے میں بجلی کی لوڈشیڈنگ مکمل طورپر ختم ہوتی تھی اب جبکہ متعلقہ محکمہ کی ناقص کارکردگی کی وجہ سے اب تک عوام کولوڈشیڈنگ کا سامنا ہے انہوںنے کہا کہ گلگت وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان کا حلقہ ہونے کے باوجود سولہ گھنٹے کی لوڈشیڈنگ حکومت کیلئے لمحہ فکریہ ہے حکومت ایک طرف خطے کی تعمیروترقی کے بلند و بانگ دعوے کررہے ہیں جبکہ لوڈشیڈنگ کو کنٹرول کرنے کیلئے حکومت کے پاس کوئی حکمت عملی موجود نہیں ہے صرف جھوٹے وعدے اور دعوے کررہی ہے انہوںنے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ بجلی کی لوڈشیڈنگ کنٹرول کرنے کیلئے اقدامات اٹھائیں۔

Facebook Comments
Share Button