تازہ ترین

Marquee xml rss feed

بحرین کے دورے کے دوران پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے بحرین ڈیفنس فورسز کے کمانڈران چیف سے ملاقات کی-ساہیوال کے پر درد واقعے نے ننھی زینب کے والد کو بھی غمزدہ کر دیا ننھی زینب کے والد امین انصاری مقتول خلیل کے یتیم بچوں کے ساتھ وقت گزارنے ان کے گھر پہنچ گئے-کنٹرول لائن کے ساتھ جندروٹ سیکٹر میں بھارتی فوج کی شہری آبادی پر بلااشتعال فائرنگ ، ایک خاتون سمیت تین شہری زخمی ہو گئے، آئی ایس پی آر-قومی اسمبلی کے اجلاس کا وقت تبدیل، (کل) صبح 11 بجے کی بجائے شام ساڑھے چار بجے ہوگا-اسلام آباد ، گاڑیوں کی آن لائن رجسٹریشن کا نظام متعارف کرا دیا گیا-ٹیکس فائلرز کیلئے بینکوں سے رقوم نکلوانے پر ود ہولڈنگ ٹیکس مکمل طور پر ختم، 1300 سی سی تک کی گاڑیاں نان فائلر بھی خرید سکے گا ، 1800 سی سی اور اس سے زائد کی گاڑیوں پر ٹیکس ... مزید-نعیم الحق نے شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر ضبط کرنے کی دھمکی دے دی شہباز شریف اور اس کے چمچوں کی اتنی جرات کہ وہ قومی اسمبلی میں وزیر اعظم پر ذاتی حملے کریں۔کیا وہ جیل میں ... مزید-وزیراعظم کا سانحہ ساہیول پر وزراء متضاد بیانات پر سخت برہمی کا اظہار آئندہ بغیر تیاری میڈیا پر بیان بازی نہ کی جائے انسانی زندگیوں کا معاملہ ہے کسی قسم کی معافی کی گنجائش ... مزید-وزیر خزانہ اسد عمر کی طرف سے قومی اسمبلی میں پیش کردہ ضمنی مالیاتی (دوسری ترمیم) بل 2019 کا مکمل متن-5 ارب روپے قرض حسنہ کیلئے مختص کرنا خوش آئند ہے، فنانس بل میں غریب آدمی کو صبر کا پیغام دیا گیا ہے امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق کی پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا ... مزید

GB News

گلگت، نابیناد افراد کی کفن پوشن احتجاجی مظاہرے کی دھمکی

Share Button

گلگت بلتستان کے نابینا افراد کی تنظیم نے مطالبات منظور نہ ہونے کی صورت میں کفن پوش احتجاج کی دھمکی دیدی ۔ گزشتہ دس مہینوں سے معذور اور نابینا افراد کو در در کے ٹھوکریں کھانے پر مجبور کیا جارہا ہے اگر جلد از جلد ہمارے مطالبات کو حل کرتے ہوئے 2فیصد معذوروں کے کوٹے پر عملدرآمد نہیں کرایا گیا تو کفن پوش دھرنا دینگے ۔ وزیراعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن اپنے ہاتھوں سے ہماری لاشیں اٹھائیگا اس کے علاوہ ہمارے پاس کوئی چارہ نہیں رہا ہے ۔ گلگت میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے نابینا افراد کی تنظیم کے رہنمائوں مصطفیٰ کمال ، فرحان بیگ اور خوش احمد نے کہا کہ گزشتہ سال اگست کے مہینے میں صوبائی حکومت کے ساتھ احتجاجی مظاہرے کے نتیجے مذاکرات ہوئے تھے جس پر وزیراعلیٰ گلگت بلتستان نے نابینا افراد کے مسائل کے حل کے لئے صوبائی وزیر قانون اورنگزیب ایڈوکیٹ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی تھی ۔ مگر اورنگزیب ایڈوکیٹ اور کمیٹی نے نابینا افراد کے مسائل حل کرنے کی بجائے نابینا افراد کے سابقہ صدر ارشاد کاظمی کو زاتی مفادات دیکر ہماری تحریک سے جدا کردیا اس کے باوجود ہمیں اورنگزیب ایڈوکیٹ کی سربراہی میں قائم کمیٹی سے توقعات وابستہ تھی لیکن بعد میں ہمیں مکمل مایوس کردیا گیا ۔ مذکورہ کمیٹی نے دس ماہ کے دورانیہ میں ایک بار بھی ہمارے ساتھ ملاقات نہیں کی اور نہ ہی کوئی اجلاس طلب کیا ہے ۔ ہمارا بنیادی مسئلہ اور مطالبہ نابینا افراد اور معذور افراد کو 2فیصد کوٹے کے مطابق میرٹ پر نوکری دینے کا ہے مگر آج تک کسی بھی محکمے میں دو فیصد کوٹے پر عملدرآمد نہیں ہوا ہے انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ گلگت بلتستان کے پاس مطالبات لیکر گئے تو انہوں نے فنڈز کی کمی کا رونا رویا جبکہ مسلم لیگ ن کی حکومت پنجاب نے 15سو سے زائد نابینا اور معذور افراد کو روزگار فراہم کیا ہے ۔ صوبائی حکومت کے ان پالیسیوں کی وجہ سے معذور اور نابینا افرادمیں مایوسی اور تشویش پھیل رہی ہے ہمارے پاس اور کوئی راستہ نہیں بچا ہے ہم اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے باوجود ڈگریاں لیکر دربدر ٹھوکریں کھارہے ہیں اب آخری راستہ کفن پوش دھرنے کا ہے جس میں یا ہمیں میرٹ اور قانون کے مطابق روزگار فراہم کردیا جائیگا یا پھر وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن ہماری لاشوں کو اپنے ہاتھوں سے اٹھائیگا۔

Facebook Comments
Share Button