تازہ ترین

Marquee xml rss feed

لاہور، جو لوگ محض ذاتی مفادات کی خاطر اپنی وفاداریاں بدل کر ہر موسم میں لوٹا کریسی کامظاہرہ کرتے ہیں،حافظ محمد ادریس وہ جانوروں سے بھی بدتر ہیں ، اگر عوام میں نچلی سطح ... مزید-کوئٹہ،نیشنل پارٹی کے سربراہ وسینیٹر میر حاصل خان بزنجو نے نیشنل پارٹی کے انتخابی منشور 2018 کا اعلان کر دیا تمام ریاستی اداروں کو پارلیمنٹ کے موثر کنٹرول میں لایا جائے ... مزید-کوئٹہ،تحریک انصاف عوام کے دلوں کی دھڑکن بن کی چکی، فیصل خان کاکڑ عوام کے ووٹوں کی طاقت سے کامیاب ہو کر ایوان میں پہنچ کر مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرینگے، پی بی25 سے ... مزید-کوئٹہ ،عید الفطر کی چھٹیاں ختم ہونے کے بعد عام انتخابات کی سر گرمیاں شروع پشتونخوامیپ بلوچستان نیشنل پارٹی ،نیشنل پارٹی ، ایم ایم اے ، عوامی نیشنل پارٹی، بلوچستان عوامی ... مزید-اکابرین کے نقش قدم پر چل کرملکی آئین کے تحت پشتونوں اور دیگر اقوام کے حقوق کے لئے اپنا کردار ادا کرینگے،انجینئر زمرک خان اچکزئی-ژوب کے عوام کے حقوق کے لئے ہر دور کا مقابلہ کیا ہے ،شیخ جعفر مندوخیل-پیپلز پارٹی اقتدار میں آکر بلوچستان سے احساس محرومی ختم کریگی،وحید بلوچ-قلات اور گرد و نواح میں تیز ہوائوں اور گرد و غبار سے معمولات زندگی متاثر-پچیس جولائی کو انشاء اللہ پاکستان پیپلز پارٹی کی جیت ہوگی،سردار محمد عمرگورگیج-انتخابات میں ان سیاسی قو توںکا ڈٹ کر مقابلہ کرینگے جنہوں نے اقتدارمیں آکر بلوچ کاز کو نقصان پہنچایا ،میر اسداللہ بلوچ عوام کے ساتھ کئے گئے تمام وعدوں کو پایہ تکمیل تک ... مزید

GB News

سکاٹ لینڈ کے خلاف بھی سو فیصد کارکردگی دکھانا ہوگی، سرفراز احمد

Share Button

قومی کر کٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا ہے کہ ٹی 20فارمیٹ میں کوئی ٹیم آسان نہیں ہوتی، ہمیں بھی اسکاٹ لینڈ کیخلاف سو فیصد کارکردگی دکھانا ہوگی، حریف ٹیم میں کئی اچھے کھلاڑی موجود ہیں لہذا سخت مقابلے کی توقع ہے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کپتان سرفراز احمد نے کہا کہ لارڈز ٹیسٹ میں شاندار کارکردگی کے بعد ہمارے پاس انگلینڈ میں سیریز جیتنے کا سنہری موقع تھا مگر ایسا نہ ہو سکا جس پر بیحد مایوسی ہوئی، لیڈز ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں بیٹنگ لائن بری طرح ناکام ہوئی جس کا میچ پر بہت زیادہ اثر پڑا، خسارے کا شکار ہونے کے بعد ہمارے بیٹسمین دوسری باری میں بھی اچھا کھیل پیش نہ کر سکے ، انھوں نے کہا کہ اس نتیجے سے ہٹ کر دیکھیں تو انگلینڈ کی مشکل کنڈیشنز میں سیریز سے ہمارے نوجوان کھلاڑیوں کو بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا جس سے مستقبل میں فائدہ ہوگا۔ایک سوال پر سرفراز احمد نے کہا کہ لیڈز ٹیسٹ میں ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ مجھ سمیت پوری ٹیم مینجمنٹ کا تھا، میں اب بھی اسے غلط نہیں سمجھتا،کنڈیشنز بیٹنگ کیلیے اچھی تھیں، انگلش کپتان کا بھی یہی کہنا تھا کہ وہ بھی پہلے اپنے بیٹسمینوں کو ہی آزماتے، ہماری بیٹنگ اچھی نہیں رہی اس لیے ناکام رہے، اسی کے ساتھ میزبان بولرز کو بھی کریڈٹ دینا چاہیے جنھوں نے بہترین لائن و لینتھ پر بولنگ کی۔اوپنرز کی کارکردگی کے حوالے سے سرفراز احمد نے کہا کہ گوکہ توقعات کے مطابق آغاز نہیں ملا لیکن اظہر علی نے لارڈز ٹیسٹ میں نصف سنچری بنائی، وہ ہمارے اہم ترین بیٹسمین ہیں، امید ہے اگلی سیریز میں زیادہ اچھا پرفارم کریں گے، اسی طرح امام الحق ابھی نئے نئے ٹیسٹ ٹیم میں آئے ہیں، انھوں نے آئرلینڈ کیخلاف ڈیبیو پر 74 رنز ناٹ آٹ بنا کر صلاحیتوں کا اظہار کر دیا تھا، مجھے یقین ہے کہ تجربہ ملنے کے ساتھ ان کی بیٹنگ میں مزید نکھار آ جائے گا۔اسد شفیق کے بھی توقعات پر پورا نہ اترنے کے سوال پر کپتان نے کہا کہ سینئر بیٹسمین نے آئرلینڈ اور پھر لارڈز ٹیسٹ میں بھی ففٹیز بنائیں، ان کی کارکردگی کو بھی مایوس کن قرار نہیں دیا جا سکتا،بابر اعظم نے بھی اچھی بیٹنگ کی مگر بدقسمتی سے ان فٹ ہو گئے، اسی طرح حارث سہیل نے بھی بہتر کھیل پیش کیا، ویسے انگلش کنڈیشنز میں بیٹنگ آسان نہیں تھی۔آپ دیکھیں انگلینڈ سے پوری سیریز میں دونوں ٹیموں کا کوئی بھی بیٹسمین سنچری نہیں بنا سکا،لارڈز کی فتح میں اظہر اور اسد کی اننگز کا اہم کردار تھا، دونوں کو اندازہ ہے کہ زیادہ بڑا اسکور نہیں کر سکے اور مجھے یقین ہے اگلی سیریز میں بھرپور انداز میں سامنے آئیں گے۔سرفراز احمد نے اعتراف کیا کہ ان کی اپنی بیٹنگ کارکردگی اچھی نہیں رہی، انھوں نے کہا کہ میں پوری کوشش کروں گا کہ غلطیوں سے سبق سیکھتے ہوئے بڑی اننگز کھیلوں، اہم دورے میں بطور کپتان سب کی نظریں مجھ پر تھیں، بعض لوگ یہ بھی باتیں کر رہے تھے کہ ہم تینوں ٹیسٹ ہار جائیں گے مگر ہم نے آئرلینڈ کو مات دی اور پھر انگلینڈ سے بھی سیریز برابر کر لی، گوکہ بطور بیٹسمین میں ناکام رہا مگر ٹیم کی کارکردگی اچھی رہی جس پر مجھے فخر ہے۔ایک سوال پر سرفراز احمد نے کہا کہ شاداب خان نے بہترین بیٹنگ کی ، ہم نے پہلے ہی سوچا ہوا تھا کہ 5 بولرز کے ساتھ کھیلیں گے اور جب ضرورت پڑی تو بطور اسپنر شاداب کو آزمایا جائے گا،یہ درست ہے کہ وہ زیادہ وکٹیں نہ لے پائے مگر بہتری کی جانب سفر جاری رہا، لیڈز میں شاداب نے اچھی بولنگ کی، وہ مختصر طرزکے میچز کھیلتے چلے آ رہے اور ٹیسٹ کرکٹ ان کیلیے نئی ہے۔انگلینڈ میں اگر اسپنر تجربہ کار نہ ہو تو زیادہ وکٹیں ملنا بیحد دشوار ہوتا ہے، حسن علی کے ساتھ بھی ایسا ہی ہے، وہ بھی محدود اوورز میں اپنی صلاحیتیں منوا چکے اور اب ٹیسٹ میں ٹیم بھی سیٹ ہونے لگے، حالیہ سیریز سے شاداب اور حسن دونوں کو ٹیسٹ کرکٹ کا اچھا سبق مل گیا ہوگا، دونوں کو مزید چار روزہ میچز بھی کھیلنے چاہئیں تاکہ طویل طرز کا تجربہ حاصل ہو سکے۔محمد عامرکے بارے میں سوال پر کپتان نے کہا کہ میں ان کی بولنگ سے مطمئن ہوں، انھوں نے خصوصا لارڈز میں بہترین کھیل پیش کیا، اسی طرح محمد عباس نے سب کو بیحد متاثر کیا، ان کا مستقبل روشن ہے۔

Facebook Comments
Share Button