تازہ ترین

Marquee xml rss feed

وزیراعظم عمران خان نے پولیس افسر طاہر خان داوڑ کے اغواءاور قتل کی تحقیقات کا حکم دیدیا خیبرپختونخوا حکومت اور اسلام آباد پولیس مشترکہ تحقیقات کریں گی‘وفاقی دارالحکومت ... مزید-ایس پی طاہر داوڑ کی افغنستان حوالگی میں ان کے دوست سہولت کار ثابت ہوئے ملزم دوستوں نے جس وقت طاہر داوڑ کو غیر ملکی قوتوں کے حوالے کیا تو اُس وقت وہ نیم بیہوشی کی حالت میں ... مزید-امریکا کی سول اور فوجی قیادت افغان تنازع کے غیر عسکری حل پر یقین رکھتی ہے . ترجمان سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ افغانستان میں جاری جنگ میں 6 ہزار 3 سو 34 امریکی اور 1ہزار سے زیادہ اتحادی ... مزید-سندھ سے گرفتار خواجہ سعد رفیق کے پارٹنرقیصر امین بٹ کا سفری ریمانڈ سابق رکن اسمبلی نیب میں پیراگون کیس شروع ہونے کے بعد سے روپوش تھے-افغانستان نے ایس پی طاہر داوڑ کو قتل کر کے جنرل رزاق کا بدلہ لیا افغانستان میں قونصلیٹ کے اندر باقاعدہ ویڈیو موجود ہے جس میں شہید طاہر داوڑ پر تشدد کیا جا رہا ہے اور کہا ... مزید-سید علی گیلانی کا غیر قانونی طور پر نظر بند کشمیریوں کی حالت زار پر اظہار تشویش نظر بندوں کو بڑے پیمانے پر سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا جا رہا ہے، حریت چیئرمین-بھارتی تحقیقاتی ادارے نے خاتون کشمیری رہنمائوںکے خلاف 4ماہ 10دن کی نظربندی کے بعد فرد جرم عائدکردی آسیہ اندرابی، فہمیدہ صوفی اور ناہیدہ نسرین ٹیوٹر، فیس بک، یو ٹیوب کے ... مزید-حقیقی زندگی کے ''ویر زارا'' جو اپنی محبت حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے ہندو خاتون اور پاکستانی شہری گذشتہ 24 سال سے دبئی میں مقیم خوشگوار زندگی گزار رہے ہیں-صدیق الفاروق نواز شریف کے قدموں میں گر پڑے نواز شریف کی احتساب عدالت میں پشی کے موقع پر قائد سے ملتے ہوئے صدیق الفاروق گر پڑے، دیگر لوگوں نے سہارا دے کر اٹھایا-کیمرے کی آنکھ نے عدالت میں بیماری کے بہانے کرنے والے ڈاکٹر عاصم کو پارک میں پکڑ لیا لاٹھی کے سہارے عدالت میں پیش ہونے والے ڈاکٹر عاصم ویڈیو میں بلکل ہشاش بشاش نظر آئے،ویڈیو ... مزید

GB News

گلگت بلتستان کے عوام کو سیاسی و معاشی حقوق کی فراہمی یقینی بنائیں گے،تحریک انصاف کا انتخابی منشور

Share Button

اسلام آباد(لیاقت علی انجم سے)تحریک انصاف نے اپنے انتخابی منشور میں جہاں ایک کروڑ ملازمتیں دینے اور 50لاکھ سستے مکانات بنانے کا وعدہ کیا گیا ہے وہاں خصوصی طور پر گلگت بلتستان کو واضح اہمیت دی گئی ہے ، انتخابی منشور میں کہا گیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف گلگت بلتستان کے عوامکی پاکستان کے ساتھ وابستگی کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے جو کہ مثالی اور قربانیوں کی تاریخ سے عبارت ہے ، ہم گلگت بلتستان کے عوام کو سیاسی و معاشی حقوق کی فراہمی یقینی بنائیں گے، انتخابی منشور میں اس بات کا بھی اعتراف کیا گیا ہے کہ گلگت بلتستان کو گوناں گوں مسائل کا سامنا ہے جن میں معاشی ترقی کا فقدان، اقتصادی راہداری منصوبے یعنی سی پیک میں محدود شرکت ، مرکزیت کی حامل نوکر شاہی اور پہلے ہی سے قدرے بے اختیار قانون ساز اسمبلی جیسے مسائل شامل ہیں۔ یہ مسائل گلگت بلتستان کے عوام کیلئے ان کی قدرتی اہلیت و قابلیت اور وسائل کے مناسب استعمال کی راہ میں بڑی رکاوٹ ہیں، انتخابی منشور میں آگے چل کر وعدہ کیا گیا ہے کہ ہم قانون ساز اسمبلی کو خودمختاری دے کر گلگت بلتستان کے عوام کو بااختیار بنائیں گے ، سیاحت ، معدنیات اور قابل تجدید توانائی میں سرمایہ کاری کے ذریعے خطے میں بڑی معاشی سرگرمی کی راہ ہموار کریں گے ، انتخابی منشور میں کہا گیا ہے کہ ہم راہداری منصوبے میں مقامی آبادی کی شمولیت کے ساتھ گلگت بلتستان کے عوام کو منصوبے سے مستفید ہونے کے ٹھوس مواقع بھی فراہم کریں گے ، انتخابی منشور میں سیاحت فروغ دینے کا بھی وعدہ کیا گیا ہے تحریک انصاف کے منشور میں گلگت بلتستان کو خاص اہمیت دینے سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ پی ٹی آئی کی مرکزی قیادت گلگت بلتستان کے مسائل سے آگاہ ہے دوسری طرف اس کی ایک وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے کہ صوبائی قیادت کی جانب سے پارٹی کی مرکزی قیادت کوخطے کے مسائل سے باخبر رکھا ہوا اور تفصیلی طور پر بریف کیا گیا ہو دونوں صورتوں میں خوش آئند پہلو موجود ہے اس سے پہلے پیپلزپارٹی نے اپنے منشور میں گلگت بلتستان کو مزید بااختیار بنانے کا وعدہ کیا تھا دوسری جانب مسلم لیگ ن کے انتخابی منشور میں گلگت بلتستان کو نکال دینے سے کئی سوالات جنم لے رہے ہیں پاکستان کی سب سے بڑی پارٹی جس نے پنجاب میں مسلسل دس سال او وفاق میں پانچ سال کامیابی سے مکمل کیے ہوں اس پارٹی کو گلگت بلتستان سے دلچسپی نہ ہونے کی وجہ کیا ہو سکتی ہے؟ سیاسی ماہرین کے مطابق چونکہ مسلم لیگ ن اس وقت بحرانی کیفیت سے گزر رہی ہے پارٹی کی سیاسی آکسیجن کا دارومدار عدالتوں کے فیصلوں پر منحصر ہے اس لئے یہی وجہ ہو سکتی ہے کہ گلگت بلتستان کو اپنے منشور میں شامل کرنے کی فرصت ہی نہ ملی ہو ، تاہم اس سے صوبائی قیادت کی نااہلی عیاں ہوتی ہے ، انہیں چاہیے تھا کہ انتخابی منشور میں گلگت بلتستان کو شامل کرنے کیلئے مرکزی قیادت کو قائل کرتے اور انہیں تفصیلی بریفنگ دی جاتی، ن لیگ کی صوبائی قیادت کی جانب سے الفاظ کی جادوگری کے ذریعے عوام کے سامنے لاکھ تاویلیں پیش کریں لیکن سیاسی مخالفین اس معاملے کو ہر صورت کیچ کریں گے اور یہ مسلم لیگ ن گلگت بلتستان کے مستقبل کیلئے کوئی نیک شگون نہیں ہو گا۔

Facebook Comments
Share Button