تازہ ترین

Marquee xml rss feed

عمران خان کے لیے راستہ صاف، سابق وفاقی وزیر نے این اے 131لاہور سے کاغذات نامزدگی واپس لے لیے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کرنے والے ہمایوں اختر نے عمران خان کے ... مزید-سندھ کے عوام کو وڈیروں نے اپنی طاقت کے زور سے نسل درنسل غلام بنائے رکھا، عائشہ گلالئی پیپلز پارٹی نے سندھ کو 10 میں بہتر بنانے کے بجائے مزید خراب کردیا، ضلع سجاول میں ... مزید-سندھ پولیس کی سطح پر شجرکاری مہم کا فوری طور پر آغاز کیا جائے ، آئی جی سندھ کی ہدایات-شاہ عبدالطیف بھٹائی انسائیکلوپیڈیا کی تین جلدیں شائع ہونا تھیں جن میں سے آج پہلی جلد شائع ہوگئی، نگراں وزیراعلیٰ سندھ شاہ عبداللطیف بھٹائی انسائیکلو پیڈیا سندھی ... مزید-پی پی پی کے حلقہ پی بی 25سے امیدوار شریف خلجی (کل) پریس کانفرنس کرینگے-سندھ کو پیپلزپارٹی اور ایم کیو ایم نے مل کر تباہ کردیا ہے، عوام بنیادی مسائل حل نہ ہونے سے پریشان ہیں، مصطفی کمال سندھ میں اگلا وزیر اعلیٰ پی ایس پی کا یا پھر ہمارا حمایت ... مزید-ایم ایم اے کے انتخابی دفتر پر پولیس کی فائرنگ پولیس اہلکار کو معطل کر کے واقعے کی مزید انکوائری کا حکم دے دیا گیا، پولیس-حکومت اور اس کے کارندوں نے 80 سالہ بزرگ پنشنرز کو عمر کے آخری دور میں بھی شدید عذاب میں مبتلا کررکھا ہے، جنرل سیکریٹری ایمپلائز ایسوسی ایشن چیف جسٹس کے ریمارکس عدالت ... مزید-عابد باکسر نے شہباز شریف کے لیے نئی مصیبت کھڑی کردی جائیداد ہتھیانے کے لیے مجھ سے قتل کروایا گیا،بعد میں مجھے ہی کیسسز میں ملوث کروا کر جعلی مقابلے میں قتل کروانے کی کوشش ... مزید-بلاول بھٹو زرداری انتخابات میں شفافیت پر بات کرنے سے قبل نواز شریف کا ساتھ دینے پر قوم سے معافی مانگیں ،ْفواد چوہدری بلاول کی جانب سے کسی نام نہاد سازش کی جانب اشارہ ... مزید

GB News

گلگت بلتستان کے عوام کو سیاسی و معاشی حقوق کی فراہمی یقینی بنائیں گے،تحریک انصاف کا انتخابی منشور

Share Button

اسلام آباد(لیاقت علی انجم سے)تحریک انصاف نے اپنے انتخابی منشور میں جہاں ایک کروڑ ملازمتیں دینے اور 50لاکھ سستے مکانات بنانے کا وعدہ کیا گیا ہے وہاں خصوصی طور پر گلگت بلتستان کو واضح اہمیت دی گئی ہے ، انتخابی منشور میں کہا گیا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف گلگت بلتستان کے عوامکی پاکستان کے ساتھ وابستگی کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے جو کہ مثالی اور قربانیوں کی تاریخ سے عبارت ہے ، ہم گلگت بلتستان کے عوام کو سیاسی و معاشی حقوق کی فراہمی یقینی بنائیں گے، انتخابی منشور میں اس بات کا بھی اعتراف کیا گیا ہے کہ گلگت بلتستان کو گوناں گوں مسائل کا سامنا ہے جن میں معاشی ترقی کا فقدان، اقتصادی راہداری منصوبے یعنی سی پیک میں محدود شرکت ، مرکزیت کی حامل نوکر شاہی اور پہلے ہی سے قدرے بے اختیار قانون ساز اسمبلی جیسے مسائل شامل ہیں۔ یہ مسائل گلگت بلتستان کے عوام کیلئے ان کی قدرتی اہلیت و قابلیت اور وسائل کے مناسب استعمال کی راہ میں بڑی رکاوٹ ہیں، انتخابی منشور میں آگے چل کر وعدہ کیا گیا ہے کہ ہم قانون ساز اسمبلی کو خودمختاری دے کر گلگت بلتستان کے عوام کو بااختیار بنائیں گے ، سیاحت ، معدنیات اور قابل تجدید توانائی میں سرمایہ کاری کے ذریعے خطے میں بڑی معاشی سرگرمی کی راہ ہموار کریں گے ، انتخابی منشور میں کہا گیا ہے کہ ہم راہداری منصوبے میں مقامی آبادی کی شمولیت کے ساتھ گلگت بلتستان کے عوام کو منصوبے سے مستفید ہونے کے ٹھوس مواقع بھی فراہم کریں گے ، انتخابی منشور میں سیاحت فروغ دینے کا بھی وعدہ کیا گیا ہے تحریک انصاف کے منشور میں گلگت بلتستان کو خاص اہمیت دینے سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ پی ٹی آئی کی مرکزی قیادت گلگت بلتستان کے مسائل سے آگاہ ہے دوسری طرف اس کی ایک وجہ یہ بھی ہو سکتی ہے کہ صوبائی قیادت کی جانب سے پارٹی کی مرکزی قیادت کوخطے کے مسائل سے باخبر رکھا ہوا اور تفصیلی طور پر بریف کیا گیا ہو دونوں صورتوں میں خوش آئند پہلو موجود ہے اس سے پہلے پیپلزپارٹی نے اپنے منشور میں گلگت بلتستان کو مزید بااختیار بنانے کا وعدہ کیا تھا دوسری جانب مسلم لیگ ن کے انتخابی منشور میں گلگت بلتستان کو نکال دینے سے کئی سوالات جنم لے رہے ہیں پاکستان کی سب سے بڑی پارٹی جس نے پنجاب میں مسلسل دس سال او وفاق میں پانچ سال کامیابی سے مکمل کیے ہوں اس پارٹی کو گلگت بلتستان سے دلچسپی نہ ہونے کی وجہ کیا ہو سکتی ہے؟ سیاسی ماہرین کے مطابق چونکہ مسلم لیگ ن اس وقت بحرانی کیفیت سے گزر رہی ہے پارٹی کی سیاسی آکسیجن کا دارومدار عدالتوں کے فیصلوں پر منحصر ہے اس لئے یہی وجہ ہو سکتی ہے کہ گلگت بلتستان کو اپنے منشور میں شامل کرنے کی فرصت ہی نہ ملی ہو ، تاہم اس سے صوبائی قیادت کی نااہلی عیاں ہوتی ہے ، انہیں چاہیے تھا کہ انتخابی منشور میں گلگت بلتستان کو شامل کرنے کیلئے مرکزی قیادت کو قائل کرتے اور انہیں تفصیلی بریفنگ دی جاتی، ن لیگ کی صوبائی قیادت کی جانب سے الفاظ کی جادوگری کے ذریعے عوام کے سامنے لاکھ تاویلیں پیش کریں لیکن سیاسی مخالفین اس معاملے کو ہر صورت کیچ کریں گے اور یہ مسلم لیگ ن گلگت بلتستان کے مستقبل کیلئے کوئی نیک شگون نہیں ہو گا۔

Facebook Comments
Share Button