تازہ ترین

Marquee xml rss feed

شیریں مزاری نے ایران میں سیاہ برقع کیوں پہنا؟ ایران میں خواتین کا سر کو ڈھانپ کر رکھنا سرکاری طور پر لازمی ہے، اس قانون کا اطلاق زوار، سیاح مسافر خواتین، غیر ملکی وفود ... مزید-وفاقی وزیر برائے تعلیم کا پاکستان نیوی کیڈٹ کالج اورماڑہ اور پی این ایس درمان جاہ کا دورہ-پاکستانی لڑکیوں سے کئی ممالک میں جس فروشی کروائے جانے کا انکشاف لڑکیوں کو نوکری کا لالچ دیکر مشرق وسطیٰ لے جا کر ان سے جسم فروشی کرائی جاتی ہے، اہل خانہ کی جانب سے دوبارہ ... مزید-جدید بسیں اب پاکستان میں ہی تیار کی جائیں گی، معاہدہ طے پا گیا چینی کمپنی پاکستان میں لگژری بسوں اور ٹرکوں کا پلانٹ تعمیر کرے گی، 5 ہزار نوکریوں کے مواقع پیدا ہوں گے-وفاقی وزارتِ مذہبی امور نے ملک میں ایک ساتھ رمضان کے آغاز کے لیے صوبوں سے قانونی حمایت مانگ لی ملک بھر میں ایک ہی دن رمضان کے آغاز کے لیے وزارتِ مذہبی امور نے صوبائی اسمبلیوں ... مزید-جہانگیر ترین یا شاہ محمود قریشی، کس کے گروپ کا حصہ ہیں؟ وزیراعلی پنجاب نے بتا دیا میں صرف وزیراعظم عمران خان کی ٹیم کا حصہ ہوں، کسی گروپنگ سے کوئی تعلق نہیں: عثمان بزدار-اسلام آباد میں طوفانی بارش نے تباہی مچا دی جڑواں شہروں راولپنڈی، اسلام آباد میں جمعرات کی شب ہونے والی طوفانی بارش کے باعث درخت جڑوں سے اکھڑ گئے، متعدد گاڑیوں، میٹرو ... مزید-گورنر پنجاب چوہدری سرور کی جانب سے اراکین اسمبلی،وزراء اور راہنماؤں کے لیے دیے جانے والے اعشائیے میں جہانگیرترین کو مدعونہ کیا گیا 185میں سے صرف 125اراکین اسمبلی شریک ہوئے،پرویز ... مزید-بھارت کی جوہری ہتھیاروں میں جدیدیت اور اضافے سے خطے کا استحکام کو خطرات لاحق ہیں،ڈاکٹر شیریں مزاری جنوبی ایشیاء میں ہتھیاروں کی دوڑ سے بچنے کیلئے پاکستان کی جانب سے ... مزید-وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے ضلع کرم میں میڈیکل کالج کے قیام اور ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال کی اپ گریڈیشن کا اعلان کردیا ضلع کرم میں صحت اور تعلیم کے اداروں کو ترجیحی بنیادوں ... مزید

GB News

قومی اسمبلی: اسد قیصر سپیکر ، محمد قاسم خان سوری ڈپٹی سپیکر منتخب

Share Button

اسلام آباد(آن لائن)قومی اسمبلی میں پاکستان تحریک انصاف اور اتحادیوں کے امیدوار اسد قیصر 176ووٹ لیکر نئے سپیکر جبکہ محمد قاسم خان سوری 183 ووٹ لے کر نئے ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہوگئے ہیں ،سپیکر کیلئے متحدہ اپوزیشن کے امیدوار سینئر رہنما سید خورشید شاہ نے 146ووٹ ،ڈپٹی سپیکر کے امیدوار اسد محمود نے 144 لے کر دوسرے نمبر پر رہے ۔قومی اسمبلی کا اجلاس بدھ کے روز سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق کی صدارت میں ہوا،اجلاس کا ایجنڈا سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کا انتخاب تھا،تمام پارلیمانی جماعتوں کے ممبران نے سپیکر کے انتخاب میں بڑے جوش و جذبے سے حصہ لیا، سپیکر انتخاب کیلئے کل330ووٹ ڈالے گئے جن میں سے8ووٹ مسترد ہوئے۔ تحریک انصاف اور اتحادیوں کے امیدوار اسد قیصر176ووٹ لیکر قومی اسمبلی کے نئے سپیکر جبکہ محمد قاسم خان سوری 183 ووٹ لے کر نئے ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہوگئے انکے مدمقابل د خورشید شاہ نے 146ووٹ حاصل کئے ۔تحریک انصاف کے امیدوار برائے سپیکر اسد قیصر کی کامیابی کا اعلان ہوتے ہی مسلم لیگ(ن) نے ایوان کے اندر شدید نعرے بازی شروع کردی اور سپیکر ڈائس کے سامنے مسلم لیگ(ن) اور پی ٹی آئی کے اراکین اسمبلی آپس میں گھتم گھتا ہوگئے۔ن لیگ کے ممبران نے ایوان کے اندر نوازشریف کی تصاویر پوسٹر اٹھا رکھے تھے اور ووٹ کو عزت دو،ظلم کے ضابطے ہم نہیں مانتے،خلائی مخلوق کی پیداوار،ووٹ کی چوری بند کرو،شرم کرو حیاء کرو نوازشریف کو رہا کرو ،کے نعرے لگاتے رہے جبکہ چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان خاموشی سے اپنی سیٹ پر بیٹھے رہے جبکہ پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری اور آصف علی زرداری بھی اپنی نشستوں پر خاموشی سے بیٹھے رہے۔ن لیگ کے صدر شہبازشریف اور دوسرے ن لیگ کے اراکین کے ساتھ سپیکر کے ڈائس کے سامنے نعرے بازی کرتے رہے اور نعرے چیئرمین پی ٹی آئی کے سامنے کھڑے ہوکر لگاتے رہے اور پی ٹی آئی کی قیادت عمران خان ،شاہ محمود قریشی،ڈاکٹر شیریں مزاری ودیگر خاموشی سے بیٹھے رہے جبکہ پی ٹی آئی کے رکن اسمبلی عامر لیاقت (ن) لیگ کے اراکین کو جواب دینے کی بہت کوشش کرتے رہے لیکن پی ٹی آئی کی قیادت نے ان کو ایسا کرنے سے روکے رکھا،اس شورشرابے کے دوران ہی اسد قیصر سے سردار ایاز صادق سے حلف لیا اور سپیکر کی کرسی پر براجمان ہوگئے ،ہنگامہ آرائی کی وجہ سے سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اجلاس کو مزید نہ چلا پائے اور کارروائی 15منٹ کیلئے کیلئے معطل کردی جس کے بعد ن لیگ اور پی ٹی آئی کے اراکین اپنی نشستوں پر بیٹھ گئے ۔اجلاس دوبارہ شروع ہوا تو سید خورشید شاہ،شاہ محمودقریشی ا ور ایاز صادق نے خطاب کیا جس کے بعد نومنتخب سپیکر اسد قیصر نے دپٹی سپیکر کا انتخاب کرایا جس میں پی ٹی آئی او ر و اتحادیوں کے امیدوار رکن اسمبلی محمد قاسم خان سوری 183 ووٹ لے کر نئے ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی منتخب ہوگئے ان کے مخالف امیدوار اسد محمود نے 144 لے کر دوسرے نمبر پر رہے۔ جبکہ کل ووٹ 328 ڈالے گئے تھے جن میں سے ایک ووٹ مسترد ہوا ہے۔ قومی اسمبلی کا اجلاس بدھ کے روز سپیکر ایاز صادق کی سربراہی میں شروع ہوا۔ اجلاس کا ایجنڈا سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کا انتخاب تھا۔ تمام پارلیمانی جماعتوں کے ممبران نے ڈپٹی سپیکر کے انتخاب میں بڑے جوش اور جذبے سے حصہ لیا۔ محمد قاسم خان سوری کامیابی کا اعلان ہوتے ہی تحریک انصاف اور ان کے اتحادیوں نے ڈائس بجانا شروع کردیئے اور آئی آئی پی ٹی آئی کے نعرے لگانے شروع کردیئے۔ نئے منتخب ہونے والے ڈپٹی سپیکر محمد قاسم خان سوری اپنی کامیابی کا اعلان سننے کے بعد ارکان اسمبلی سے ملتے رہے اور ان کا شکریہ ادا کرتے رہے مولانا فضل الرحمن کے بیٹے اور بلوچستان سے تعلق رکھنے والے ارکان اسمبلی سے ملے اور تصویریں بنائیں۔ پیپلزپارٹی کے خورشید شاہ’ مسلم لیگ (ن) کے سابق سپیکر ایاز صادق و دیگر سے ملتے رہے اور تصویریں بنواتے رہے اور اس کے بعد سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نے ان سے ڈپٹی سپیکر کے عہدے کا حلف لیا۔ جس میں ان کی زبان پھسل ہوگئی جس میں وہ اثر انداز کو نظر انداز کہہ گئے جس پر ایوان میں قہقہے لگ گئے۔ لیکن وہ انہوں نے قہقہوں کو نظر انداز کرتے ہوئے اپنے حلف لینے کے عمل کو جاری رکھا۔

Facebook Comments
Share Button