تازہ ترین

Marquee xml rss feed

وزیر اعظم عمران خان کی روضہ رسول ﷺ پر حاضری، سعودی حکام کی جانب سے روضہ رسولﷺ کے دروازے خصوصی طور پر کھول دیئے گئے-آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی چین کے سنٹرل ملٹری کمیشن کے وائس چیئرمین جنرل یانگ یوشیا سے ملاقات کی، دہشتگردی کے خاتمے، ہتھیاروں و سازوسامان کی ٹیکنالوجی اور ٹریننگ ... مزید-ڈاکٹر بننے کا خواب دیکھنے والی خاتون نے ٹرک چلانا شروع کر دیا ناگرپارکر سے تعلق رکھنے والی خاتون مالی مشکلات کی وجہ سے ڈاکٹر نہیں بن سکی تھی-موسمیاتی تغیرات کے اس دور میں بجلی پیدا کرنے کیلئے ایٹمی توانائی کا استعمال امید افزاء آپشن ہے، ہم پاکستان میں نیوکلیئر ٹیکنالوجی کے پرامن استعمال کے فروغ کیلئے آئی ... مزید-سعودی عرب اور پاکستان کے درمیان دوستانہ اور تاریخی تعلقات قائم ہیں، وزیراعظم عمران خان کا دورہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے،سعودی عرب اور پاکستان دنیا میں اسلام کی حقیقی ... مزید-کیا کل نواز شریف اور مریم نواز کی سزا معطل کی جا رہی ہے؟ نیب عدالت کو مطمئن نہیں کر پا رہی اس سے اندازہ ہو رہا ہے کہ معاملات کس طرف جا رہے ہیں،ملزمان کا پلڑہ بھاری نظر آ ... مزید-اسد عمر اور اسحاق ڈار میں کوئی فرق نہیں اسد عمر نے بھی اعدادو شمار کا ہیر پھیر کر کے اسحاق ڈار والے کام کیے-پی ٹی آئی نے جو منشور دیاتھا اور جو اعلانات کیے ، ان پر عملدرآمد حکومت کا امتحان ہے ‘سراج الحق عوام نے انہیں گیس ، بجلی اور پٹرول مہنگا کرنے کے لیے نہیں، سستا کرنے کے ... مزید-اہل بیت کی عظم قربانی درحقیقت پوری امت مسلمہ کے لئے درخشاں مثال ہے‘چوہدری محمد سرور اللہ کی رسی کو مضبوطی سے تھامے رکھنا اور فرقہ واریت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا وقت کی ... مزید-وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان کا وزیراعلیٰ سیکریٹریٹ کے مختلف شعبوں کا معائنہ

GB News

چھومک ہو تو تھنگ خالصہ سرکار ہے، وزیراعلیٰ

Share Button

وزیر اعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن نے کہاہے کہ بلتستان کو سو ارب کے منصوبے دیئے گئے ہیں اور یہاں وزیر اعظم آکر جتنے اعلانات کئے ہیں ان سب پر عمل درآمد کیا گیا ہے اس کے باوجود بعض لوگ منفی پروپیگنڈے کر رہے ہیں ہمیں کرسیوں سے کوئی دلچسپی نہیں ہے اصلاحات سے غرض ہے کون خوش ہوتا ہے کون ناراض ہوتا ہے ہمیں اس کی کوئی پرواہ نہیں ہے ہم حلف کی پاسداری کر رہے ہیں اختیارات عوام کیلئے استعمال کریں گے افسوس ہوتا ہے کہ آرڈر 2018کی معطلی پر وکلاء نے مٹھائیاں بانٹیں ایک دوسرے کو مبارک باد دی حالانکہ انکو یہ نہیں پتہ کہ آرڈر سے علاقے کو فائدہ ہوا ہے آرڈر سے پہلے ججز کی تنخواہ اور پنشن کی مد میں علاقے کو 39کروڑ روپے کا نقصا ن ہوا ہے حالانکہ 90فیصد کیسز التواء کا شکار ہیں ریٹائرہونے والے ججز دس دس کروڑ روپے پنشن لے کر گئے ہیں 39کروڑ روپے ان لوگوں نے لئے ہیں جنہوں نے گلگت بلتستان کیلئے کوئی کام نہیں کیا ہے پھر بھی لوگ ہمیں گالیاں دیتے ہیں ہم سنتے ہیں اور گزر جاتے ہیں ان خیالات کا اظہار انہوں نے پریس کلب سکردو اور بلتستان یونین آف جرنلسٹس کے نومنتخب عہدیداروں کی تقریب حلف برداری اور یوم دفاع کے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ ہم میں سے ہر ایک کو اپنی ذمہ داری ادا کرنا ہوگی اور اپنے عہدے کے ساتھ وفاداری نبھانا ہوگی انصاف کے تقاضے پورے کرنا ہونگے ورنہ آخرت کے روز ضرور سوال ہوگا جو لوگ حق ملکیت کی بات کر رہے ہیں وہ علاقے میں بڑے منصوبوں کو روکنا چاہتے ہیں چھومک ہوتونگ تھنگ خالصہ سرکارہے اس زمین پر تین فریقین کے درمیان تنازعہ چل رہا ہے ہم چاہتے ہیں کہ اس زمین کو عوام کے مفاد میں استعمال کیا جائے اسی مقصد کیلئے لینڈ ریفارمز کمیشن بنایا گیا ہے کمیشن کی رپورٹ دو سے تین ماہ میں تیار کی جائے گی ہم نے گلگت بلتستان میں ایک لاکھ کنال زمین آباد کر کے لوگوں کو فراہم کی ہیں گانچھے میں 7ہزار کنال آباد کر کے لوگوں کے حوالے کی گئی ہیں پہلے وفاقی حکومت براہ راست زمینیں الاٹ کرتی تھی اب آرڈر 2018 کے بعد یہ اختیار صوبائی حکومت کو مل گیا ہے لیکن ہمارے لوگ 2018کے آرڈر کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں انہوں نے کہاکہ صحافت ریاست کا چوتھا ستون ہے اس کی ترقی کیلئے اپنی بساط کے مطابق کام کریں گے انہوں نے کہاکہ دشمن طریقے اور راستے بدل کر ہمارے اوپر حملہ آور ہو رہے ہیں ہمیں مختلف قومیتوں اور مسلکوں کی بنیاد پر لڑایا جارہا ہے انتہا پسندی خطرناک ہے ہمیں انتہاپسندی کی لعنت سے باہر نکلنا ہوگا 2005سے 2018تک گلگت بلتستان میں 650لوگ شہید کر دیئے گئے ہیں کبھی کسی کو مذہب کے نام پر گمراہ کیا گیا کسی کو علاقے کے نام پر گمراہ کیا جارہا ہے ہمیں تمام قسم کے تعصبات سے بالاتر ہو کر علاقے کی تعمیر وترقی کیلئے سوچنا ہوگا ورنہ بعد میں ہم سے ضرور پوچھا جائے گا حقوق کی بات ضرور کریں لیکن یہ ہماری آزادی سے ہر گز بالاتر نہیں اپنے بچوں کو صاف ستھرا پاکستان دینا ہے انہوں نے کہاکہ تاریخ میں پہلی مرتبہ ہم میڈیا پالیسی بنا رہے ہیں صحافیوں کو ہیلتھ انشورنس اور لائف انشورنس دی جائے گی اخبارات کے تمام سابقہ بقایا جات ادا کر دیئے گئے ہیں اشتہارات کو ملازمین کی تنخواہوں سے مشروط کر دیا گیا ہے انتہائی افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ بہت سارے اخبارات ایسے ہیں جن کے رپورٹر موجود نہیں ہیں دوسرے تیسرے اخبارات سے خبریں چرا کر پیسٹ کر لیتے ہیں آئندہ یہ سلسلہ نہیں چلے گا سینئر وزیر حاجی اکبر تابان نے کہا کہ صحافت ایک مقدس پیشہ ہے اس سے منسلک تمام صحافیوں کی مشکلات دور کرنے کیلئے صوبائی حکومت اپنی بھرپور کوشش کرے گی ہمیں اپنے صفوں میں اتحاد واتفاق پید اکرنے کی ضرورت ہے کمشنر بلتستان ڈویژن حمزہ سالک نے کہا کہ وطن عزیز کیلئے ہم نے بے شمار قربانیاں دی ہیں ضرورت پڑی تو مزید قربانیاں دیں گے وطن عزیز کی حفاظت کیلئے جن لوگوں نے جانوں کی قربانی دی ہے انہیں خراج عقیدت پیش کرتے ہیں غازیوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں دریں اثناء وزیر اعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن سینئر وزیرحاجی اکبر تابان اور دیگر نے یادگار شہداء پر پھولوں کی چادر چڑھائی اور پرچم کشائی کی ۔

Facebook Comments
Share Button