تازہ ترین

Marquee xml rss feed

بچے کی ولادت دوہری خوشی لائے گی بچے کی ولادت پر ماں کے لیے 6 اور باپ کے لیے 3 ماہ کی چھٹیوں کا بل سینیٹ میں پیش کر دیا گیا-وزیر اعظم عمران خان 21 نومبر کو ملائشیا کے دورے پر روانہ ہوں گے وزیر اعظم ، ملائشین ہم منصب سے ملاقات کے علاوہ کاروبای شخصیات سے ملاقاتیں کریں گے-متعدد وزراء کی چھٹی ہونے والی ہے 100 روز مکمل ہونے پر 5,6 وفاقی وزراء اور متعدد صوبائی وزراء اپنی ناقص کارکردگی کے باعث اپنی وزارتوں سے ہاتھ دھو بیٹھیں گے-نوازشریف،مریم نوازاورکیپٹن(ر)صفدرکی رہائی کےخلاف نیب اپیل کامعاملہ سپریم کورٹ نے نیب اپیل پر لارجر بنچ تشکیل دینے کا حکم جاری کردیا-ڈیرہ اسماعیل خان میں جشن عید میلاد النبی ؐکی تیاریاںعروج پرپہنچ گئیں-آئی جی سندھ نے حیدرآباد میں واقع مارکیٹ میں نقب زنی کا نوٹس لے لیا-عمر سیف سے چیئرمین پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کا اضافی چار ج واپس لے لیا گیا-پنجاب کے 10ہزار فنکاروں کے لئے 4لاکھ روپے مالیت کے ہیلتھ کارڈ جاری کئے جائیں گے‘فیاض الحسن چوہان صوبے میں 200فنکاروں اور گلوکاروںمیں ان کی کارکردگی,اہلیت اور میرٹ کی ... مزید-پاکستان میں امیر اور غریب کے درمیان طبقاتی فرق اضافہ ہوگیا ہے ،ْ دن بدن فرق بڑھتا جارہاہے ،ْ ورلڈبینک-وزیراعظم جنوبی پنجاب صوبے سے متعلق جلد اہم اقدامات کا اعلان کرینگے جنوبی پنجاب صوبے کے قیام کیلئے وزیراعظم عمران خان اتحادی جماعتوں اور اپوزیشن ارکان پر مشتمل کمیٹی ... مزید

GB News

صوبائی حکومت کم از کم متاثرین سیلاب کو بلیک میل نہ کرے،اجہ جلال حسین مقپون

Share Button

سکردو ( چیف رپورٹر )ایم ڈبلیو ایم کے صوبائی سیکرٹری جنرل سید علی رضوی اور پاکستان تحریک انصاف کے صوبائی صدر راجہ جلال حسین مقپون نے کہاہے کہ متاثرین سیلاب کو وزیر اعلیٰ کے خلاف بیان دینے کے جرم میں معاوضے نہ دینے کا فیصلہ ہوا ہے جو جمہوریت کے ساتھ بڑا مذاق ہے وزیر اعلیٰ کے میڈیا کوآرڈینیٹر ہر جگہ کہتے پھر رہے ہیں کہ حفیظ الرحمن متاثرین سیلاب گیول اور سدپارہ کو معاوضے دینے کیلئے بالکل تیار ہی ہو گئے تھے مگر متاثرین کی جانب سے ان کے خلاف کئی بیانات دیئے گئے جس پر وزیر اعلیٰ ناراض ہو گئے اور متاثرین کو معاوضے نہ دینے کا فیصلہ کرلیا ہے اگر متاثرین نے اپنا بیان واپس لیا تو انہیں وزیر اعلیٰ جلد معاوضے دیں گے انہوں نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعلیٰ کے کوارڈینیٹرکا دعویٰ ہے کہ کھرمنگ کے سیلاب متاثرین کو ایک ماہ کے اندر اند رمعاوضے ادا کر دیئے گئے ہیں کیونکہ انہوں نے وزیر اعلیٰ کے خلاف کوئی بیان نہیں دیا تھا مگر متاثرین سیلاب گیول اور سدپارہ آئے روز وزیر اعلیٰ کے خلاف اخبارات میں بیانات دے رہے ہیں اس لئے انہیں معاوضہ دینے ممکن نہیں ہے انہوں نے کہا کہ متاثرین سیلاب کی مشکلات اور مجبوریوں سے فائدہ اٹھا کر صوبائی حکومت انہیں بلیک میل کر رہی ہے اور انہیں اپنا بیان واپس لینے کیلئے مسلسل دباؤ ڈال رہی ہے دنیا میں کہیں نہیں دیکھا ہے کہ احتجاج کرنے والوں کو حقوق نہ دیئے گئے ہوں یہ گلگت بلتستان ہی ہے جہاں مسلم لیگ ن کی حکومت متاثرین سیلاب کو مسلسل ذہنی اذیت پہنچا رہی ہے ہم صوبائی حکومت کو متنبہ کرنا چاہتے ہیں کہ وہ کم از کم متاثرین سیلاب کو بلیک میل نہ کرے انہوں نے کہاکہ وزیر اعلیٰ حفیظ الرحمن تعصبات کو ہوا دے رہے ہیں انہیں شرم آنی چاہئے کہ وہ محض اس لئے متاثرین سیلاب کو معاوضے دینے کیلئے تیار نہیں ہیں کیونکہ انہوں نے اپنے حق کیلئے آواز اٹھائی تھی اور وزیر اعلیٰ کے جھوٹ کا بھانڈا پھوڑ دیا تھااگر حفیظ الرحمن کا گھر سیلاب کی زد میں آتا اور وہ بے گھر ہو جاتے تو انہیں بے گھر افراد کی مشکلات کا احساس ہو جاتا وہ کرپشن کے پیسوں سے بڑے محل میں رہتے ہیں اسی لئے انہیں متاثرین کی مشکلات اور مسائل سے کوئی سروکار نہیں ہے ۔

Facebook Comments
Share Button