GB News

سپریم کورٹ میں آرڈر کیس کی سماعت ، گلگت بلتستان کو حقوق دینا ہماری ذمہ داری ہے،چیف جسٹس

Share Button

اسلام آباد(جنرل رپورٹر)سپریم کورٹ نے گلگت بلتستان آرڈر 2018ء کے معاملے پر آئندہ سماعت پر فریقین سے حتمی تجاویز طلب کر لیں، پیر کے روز سپریم کورٹ میں گلگت بلتستان آرڈر کیس کی سماعت ہوئی، دوران سماعت چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ سپریم کورٹ نے آرڈر کو بحال کیا ہے آرڈر میں کیا ترامیم کی جائیں اس حوالے سے عدالت کو آگاہ کیا جائے، چیف جسٹس نے اعتزاز احسن کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اعتزاز صاحب آپ ہماری رہنمائی کریں، یہ ایک اہم مسئلہ ہے ، گلگت بلتستان کو حقوق دینا ہماری ذمہ داری ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ گلگت بلتستان کے بارے میں ہمیں سپریم کورٹ کے تاریخی فیصلے پر عملدرآمد کرانا ہے اور اس ضمن میں دیکھیں گے کہ وفاق کو کیا کرنا ہے اور ہم نے کیا کرنا ہے اس کیس کا ہم نے فوری فیصلہ دینا ہے ، عدالت نے کیس کو التواء میں ڈالنے کی درخواست بھی مسترد کر دی، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ التواء میں دینے سے یہ ادارہ مقدمات کے بوجھ تلے دب جائے گا گلگت بلتستان کے لوگ ملک کے دیگر شہریوں سے زیادہ محب وطن ہیں یہاں دشوار گزار پہاڑوں پر پاکستان کے پرچم بنائے گئے ہیں لوگ پاکستان سے بے حد پیار کرتے ہیں، عدالت نے گلگت بلتستان بار کونسل کی جانب سے سپریم کورٹ کے 1999ء کے فیصلے پر عملدرآمد کے حوالے سے دائر آئینی پٹیشن کو بھی باقاعدہ سماعت کیلئے مقرر کر دیا اور تمام معاملات پر 25ستمبر کو فریقین کو حتمی دلائل دینے کیلئے نوٹس جاری کر دیا دوران سماعت پاکستان بار کونسل کے وکیل سلمان اکبر راجہ نے کہا کہ گلگت بلتستان کے عوام کا مطالبہ ہے کہ انہیں پوری طرح اپنایا جائے۔گلگت بلتستان بار کونسل کی طرف سے وائس چیئرمین بار کونسل جاوید احمد ایڈووکیٹ اور سابق وائس چیئرمین منظور احمد ایڈووکیٹ نے عدالت میں نمائندگی کی عدالت نے کیس کی سماعت 2 ہفتوں کیلئے ملتوی کرتے ہوئے آئندہ سماعت پر فریقین سے تجاویز طلب کر لیں۔

Facebook Comments
Share Button