تازہ ترین

Marquee xml rss feed

GB News

آئینی حقوق کیلئے احتجاج کا اعلان

Share Button

وزیر تعمیرات عامہ ڈاکٹر محمد اقبال نے کہا ہے کہ ہمیں اب کسی بھی سیاسی پارٹی اور کسی بھی ادارے سے کو ئی امید نہیں ہے اب ہم نے یہ فیصلہ کرلیا ہے کہ تمام ممبران اسمبلی ملکر اپنے حقوق کے لئے پارلیمنٹ کے باہر احتجاج کریں اور دھرنا دینگے۔انہوں نے کہا آئینی حقوق کے حوالے سے پی پی پی نے موقع گنوادیا اسی طرح پی ٹی آئی نے بھی آئینی حقوق کے حوالے سے موقع گنوا دیااور کشمیریوں کی دھمکی پر یو ٹرن لے لیا۔ ہم اب مایوس ہو چکے ہیں ہر طر ف سے ما یوسی ملی ہے تمام امیدیں دم توڑ گئی ہیںانہوں نے کہا کہ کمیٹیوں کا ہمیں علم ہے اس سے قبل بھی آئینی حقوق کے حوالے سے کمیٹیاں بنیں لیکن ان کمیٹیوں کا کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوا۔بلاشبہ گلگت بلتستان کے آئینی حقوق کے ضمن میں کی جانے والی پیشرفت اور کوششوں کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوا جس کے منطقی نتیجے میں لوگ یہ سوچنے پر مجبور ہیں کہ ہمارے سسٹم میں قانونی وآئینی طریقے سے پرامن جدوجہد سے حقوق ملنا مشکل ہیں چنانچہ صوبائی حکومت کے وزیر تعمیرات یہ کہنے پر مجبور ہوئے ہیں کہ وہ اپنے حقوق کیلئے پارلیمنٹ کے باہر احتجاج کریں گے کیونکہ وہ یہ سمجھتے ہیں کہ ہمارا مزاج اوپر کی سطح پر یہ بن چکا ہے کہ جب تک اپنے مطالبات کیلئے سڑکوں پر آ کر احتجاج نہ کیا جائے شنوائی نہیں ہوتی’ ماضی میں عوامی ایکشن کمیٹی نے احتجاج ہی کے ذریعے اپنے مطالبات منوائے تھے۔کون نہیں جانتا کہ وفاق میں آنے والے حکمرانوں نے کشمیری قیادت کو فوقیت دیتے ہوئے برسوں سے حقوق کے منتظر عوام کو مایوسی سے دوچار کیا حالانکہ ببانگ دہل یہ یقین دہانیاں کرائی جاتی رہیں کہ برسر اقتدار آنے کے بعد گلگت بلتستان کو آئینی حقوق دیے جائیں گے لیکن ایسا نہ ہوا اور موجودہ حکومت بھی کسی نئے پیکج پر عور کر رہی ہے جو عوام کا مطالبہ ہرگز نہیں ہے۔ تحریک انصاف نے بھی یہ ثابت کیا ہے کہ وہ بھی خود کو اس حوالے سے کشمیری قیادت کے سامنے بے بس محسوس کر رہی ہے حالانکہ اسے حقوق کے منتظر گلگت بلتستان کے عوام کو فوقیت دینا چاہیے تھی مگر بدقسمتی سے ایسا نہ ہو سکا جس پر تنگ آمد بجنگ آمد کی صورتحال پیدا ہو رہی ہے۔

Facebook Comments
Share Button