تازہ ترین

Marquee xml rss feed

بحرین کے دورے کے دوران پاک بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ظفر محمود عباسی نے بحرین ڈیفنس فورسز کے کمانڈران چیف سے ملاقات کی-ساہیوال کے پر درد واقعے نے ننھی زینب کے والد کو بھی غمزدہ کر دیا ننھی زینب کے والد امین انصاری مقتول خلیل کے یتیم بچوں کے ساتھ وقت گزارنے ان کے گھر پہنچ گئے-کنٹرول لائن کے ساتھ جندروٹ سیکٹر میں بھارتی فوج کی شہری آبادی پر بلااشتعال فائرنگ ، ایک خاتون سمیت تین شہری زخمی ہو گئے، آئی ایس پی آر-قومی اسمبلی کے اجلاس کا وقت تبدیل، (کل) صبح 11 بجے کی بجائے شام ساڑھے چار بجے ہوگا-اسلام آباد ، گاڑیوں کی آن لائن رجسٹریشن کا نظام متعارف کرا دیا گیا-ٹیکس فائلرز کیلئے بینکوں سے رقوم نکلوانے پر ود ہولڈنگ ٹیکس مکمل طور پر ختم، 1300 سی سی تک کی گاڑیاں نان فائلر بھی خرید سکے گا ، 1800 سی سی اور اس سے زائد کی گاڑیوں پر ٹیکس ... مزید-نعیم الحق نے شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر ضبط کرنے کی دھمکی دے دی شہباز شریف اور اس کے چمچوں کی اتنی جرات کہ وہ قومی اسمبلی میں وزیر اعظم پر ذاتی حملے کریں۔کیا وہ جیل میں ... مزید-وزیراعظم کا سانحہ ساہیول پر وزراء متضاد بیانات پر سخت برہمی کا اظہار آئندہ بغیر تیاری میڈیا پر بیان بازی نہ کی جائے انسانی زندگیوں کا معاملہ ہے کسی قسم کی معافی کی گنجائش ... مزید-وزیر خزانہ اسد عمر کی طرف سے قومی اسمبلی میں پیش کردہ ضمنی مالیاتی (دوسری ترمیم) بل 2019 کا مکمل متن-5 ارب روپے قرض حسنہ کیلئے مختص کرنا خوش آئند ہے، فنانس بل میں غریب آدمی کو صبر کا پیغام دیا گیا ہے امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق کی پارلیمنٹ ہائوس کے باہر میڈیا ... مزید

GB News

پاکستانی عوام سی پیک کو مکمل کرنا چاہتے ہیں، پروپیگنڈا بلاجواز ہے، چین

Share Button

چین اور چینی ذرائع ابلاغ نے سی پیک کے بارے میں امریکی اخبار نیویارک ٹائم کی رپورٹ مسترد کردی ہے اور کہا ہے کہ سی پیک کا دونوں ممالک کے دفاعی تعاون سے کوئی تعلق نہیں ہے چین کے ایک بااثر اخبار گلوبل ٹائمز نے اپنی حالیہ اشاعت میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ چین اور پاکستان کے درمیان دفاعی تعلقات معمول کا عمل ہے جسے بیلٹ اینڈ روڈ منصوبے(بی آر آئی) یا سی پیک کے ساتھ منسلک نہیں کرنا چاہیے۔اخبار نیویارک ٹائم کے اس دعوے پر ردعمل کا اظہار کررہا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ چین بی آر آئی کی آڑ میں اپنے فوجی اثرات وسیع کررہا ہے۔اخبار نے چین پاکستان تعلقات کی گہرائی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ تعلقات سی پیک اور بی آر آئی سے بالاتر ہیں۔اپنے مضمون میں گلوبل ٹائمز نے اس بات پر زور دیا ہے کہ پاکستان کا چین کے ساتھ فوجی رابطہ سٹریٹیجک شراکت داری کا حصہ ہے ۔جسے سی پیک یا بی آر آئی کے ساتھ محدود نہیں کیا جاسکتا دفاعی تعاون کے حوالے اور فوجی پہلو سے کسی قسم کے فنڈز مخصوص نہیں کیے گئے اور نہ ہی سی پیک کے تحت اس سلسلے میں کوئی طویل المیعاد منصوبہ بندی کی گئی ہے۔ہم جوکوئی دفاعی تعاون آج کل دیکھتے ہیں اس کی ایک تاریخ ہے اور اسے سی پیک اور بی آر آئی سے الگ کرکے دیکھنا چاہیے دریں اثناء گزشتہ روز اپنی معمول کی پریس کانفرنس کے دوران وزارت خارجہ کی ترجمان ہواچن ینگ نے بھی نیویارک ٹائمز کی رپورٹ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے اسے جھوٹ قرار دیا۔دریں اثناء چینی سفارتخانے کے ڈپٹی چیف آف مشن لی جیان ژائو نے بھی سی پیک پر نیویارک ٹائمز کی تنقید کو مسترد کردیا اور کہا کہ یہ مغربی ممالک ہیں جنہوں نے پاکستان کو قرضوں کے جال میں پھنسا دیا ہے۔جبکہ چین پاکستان کو قرضوں کے جال سے نکالنے کے لیے یقین دہانی کرا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان پر 95ارب ڈالر کے بین الاقوامی قرضوں میں سے چین کا صرف چھ ارب ڈالر کا قرضہ ہے۔انہوں نے ان اعدادوشمار کو بھی مسترد کردیا کہ چین کا قرضہ 23ارب ڈالر ہے ۔

Facebook Comments
Share Button