تازہ ترین

Marquee xml rss feed

GB News

امریکی معاشی مسائل کی جڑ مرکزی بنک ہے، ڈونلڈ ٹرمپ

Share Button

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا فیڈرل ریزرو کے خلاف بیان بازی کا سلسلہ جاری ہے اور اب انہوں نے امریکی معیشت کو درپیش مسائل کی جڑ امریکی سینٹرل بینک کو قرار دے دیا۔پیر کو بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ اور قانون سازوں کے درمیان معاہدے کی ناکامی کے بعد امریکا میں رواں سال کا تیسرا شٹ ڈائون جاری ہے اور ہفتے کی شب سے تمام اہم ایجنسیوں کا کام بند ہو گیا تھا۔واضح رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے امریکا کی میکسکو کے ساتھ سرحد پر دیوار کی تعمیر کے لیے 5 ارب ڈالر کا مطالبہ کیا گیا لیکن ڈیموکریٹس کی جانب سے اس کی مخالفت کی گئی اور دونوں فریقین کے درمیان کوئی معاہدہ نہ ہونے پر درجنوں ایجنسیوں کے لیے وفاقی فنڈز ختم ہوگئے اور شٹ ڈائون ہوگیا۔اس شٹ ڈان کے اعداد و شمار بہت خراب صورتحال ظاہر کرتے ہیں کیونکہ 8 لاکھ وفاقی ملازمین کرسمس کی چھٹیوں پر اپنی تنخواہیں وصول نہیں کر سکے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکا کے موجودہ معاشی مسائل خصوصا شٹ ڈان کا ذمہ دار فیڈرل ریزرو یا سینٹرل بینک کو قرار دیا ہے۔انہوں نے ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ ‘ہماری معیشت کا واحد مسئلہ فیڈرل ریزرو ہے، انہیں مارکیٹ کا احساس نہیں، وہ ضروری تجارتی جنگ یا مضبوط ڈالر یا سرحدوں پر ڈیموکریٹس شٹ ڈائون کو نہیں سمجھتے۔’وال اسٹریٹ پر اسٹاکس پہلے سے ہی گرے ہوئے تھے لیکن ٹرمپ کی ٹوئٹ کے بعد صورتحال مزید ابتر ہو گئی اور وہ مزید تیزی سے گرنا شروع ہو گئے۔چین کے ساتھ جاری تجارتی جنگ، گرتی ہوئی عالمی معیشت اور وائٹ ہائوس میں جاری افراتفری کے سبب امریکی معیشت کو ایک دہائی میں بدترین صورتحال کا سامنا ہے۔ٹرمپ کی تازہ ٹوئٹ سے صورتحال مزید ابتر ہو گئی ہے اور اگر امریکی صدر نے فیڈرل ریزرو کے چیئرمین جیروم پاول کو ہٹانے کی کوشش کی تو معیشت مزید غیر مستحکم ہو سکتی ہے۔امریکی معاشی ماہر پیٹر کونٹی برون نے کہا کہ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ٹرمپ مکمل معاشی جنگ چھیڑنا چاہتے ہیں اور ہم نے ایسا آج تک نہیں دیکھا، یہ سینٹرل بینک، امریکی صدر اور ہمارے ملک کی معیشت کے لیے تباہ کن ہے۔فیڈرل ریزرو دراصل امریکی صدر اور وائٹ ہاس کی پابندیوں سے آزاد ہوتا ہے لیکن ٹرمپ بینک کی شرح سود پر پالیسی کو خراب قرار دیتے ہوئے اسے مستقل تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں اور اسی لیے ریزرو بینک کی اس آزادی کو سلب کرنا چاہتے ہیں۔

Facebook Comments
Share Button