تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پی ٹی اے نے پرانے موبائلوں کی خرید و فروخت پر ٹیکس لگا دیا پاکستان ٹیلی کمیونیشن اتھارٹی نے تاجروں کو پابند کیا ہے کہ پرانے موبائل بیچنے سے پہلے انہیں اس پر ٹیکس ادا کرنا ... مزید-آئی جی سندھ نے شہری کے پولیس کیساتھ نامناسب رویے کا نوٹس لے لیا-نواز شریف کی ضمانت پر اظہار تشکر کی قرارداد پنجاب اسمبلی میں جمع کروا دی گئی-عدالتی حکم پر من و عن عمل درآمد کیا جائے گا، ڈاکٹر شہباز گل مریم نواز کی درخواست پر کارڈیالوجی سینٹر جیل کے اندر بنایا گیا تھا ۔ کارڈیالوجی سینٹر میں 21 ڈاکٹرزاور 21 ٹیکنیشن ... مزید-نواز شریف کو ان کی ضمانت پر رہائی کے عدالتی حکم کی اطلاع جیل میں دی گئی-شکر ہے عدالت نے نواز شریف کو باہر جانے کی اجازت نہیں دی، وزیر اعظم لندن میں سیل لگی ہوئی تھی اور نواز شریف وہاں شاپنگ کرنے کے لیے مچل رہے تھے، عمران خان-تاریخی شاہی قلعہ میں واقعہ شیش محل کی سیاحت کے لئے سیاحوں پر 100 روپے مالیت کا ٹکٹ لاگو کر دیا گیا-لاہورہائی کورٹ نے اپوزیشن لیڈر شہبازشریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کا حکم دے دیا-اللہ تعالیٰ کا شکر ہے نواز شریف کو رہائی ملی ،عدالتی فیصلے کو سراہتے ہیں،شہباز شریف-وفاقی جامعہ اردو کراچی میں طلباء گروپوں کے مابین تصادم، کھڑکیاں ،دروازے توڑ دیے گئے انتظامیہ جھگڑا رکوانے میں ناکام ، پولیس اور رینجرز طلب کر لی گئی

GB News

عدالت سے نہیں تحریک انصاف کی وفاقی حکومت سے مایوس ہیں، امجد حسین ایڈووکیٹ

Share Button

سکردو (اسحاق جلال) پیپلزپارٹی کے صوبائی صدر امجد حسین ایڈووکیٹ نے کہا ہے کہ کشمیری لیڈر سردار عتیق وفاقی وزیرشیخ رشید کے کہنے پر وفاقی کابینہ نے گلگت بلتستان کوعبوری آئینی صوبہ بنانے کی تجویزمستردکی تاہم ہمیںیقین ہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان سے فیصلہ سرتاج عزیزکمیٹی کی سفارشات پرہی آئے گا۔ہم عدالت سے نہیں تحریک انصاف کی وفاقی حکومت سے مایوس ہوگئے ہیں۔سرتاج عزیز کمیٹی کی سفارشات مسلم لیگ ن نے بنائی ہیں ہم ان سفارشات کوسپورٹ کررہے ہیں۔پیپلزپارٹی اورن لیگ سفارشات کوسپورٹ کررہی ہیں توبتایاجائے مخالفت کون کررہا ہے۔کے پی این سے سبات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ تحریک انصاف نے گلگت بلتستان کوعبوری صوبہ بنانے کااعلان کیاتھا مگروزیراعظم عمران خان نے تحریک انصاف گلگت بلتستان کے لیڈروں کی باتوں کوجوتے کی نوک پررکھااورعبوری آئینی صوبہ بنانے کی تجویزمستردکردی۔عبوری آئینی صوبہ کی تجویزمستردہونے کے بعدتحریک انصاف کی مقامی قیادت کوشرم آنی چاہے۔مگریہ لوگ پھر بھی تحریک انصاف کے نام سے سیاست کررہے ہیں وزیراعظم نے تحریک انصاف گلگت بلتستان کے مطالبے کوسپورٹ کرنے کے بجائے مسلم کانفرنس کی ہاں میں ہاں ملائی۔ہماراآئینی کیس اس وقت سپریم کورٹ میں ہے مگروہاں ہماری کسی نے نمائندگی کی ہے تو وہ اعتزازاحسن ہیں انہوں نے گلگت بلتستان کے عوام کی خواہشات کے مطابق عبوری صوبہ بنانے کی سفارش کی ۔اعتزازاحسن نے سپریم کورٹ میں دوٹوک موقف اختیار کیا کہ گلگت بلتستان کوعبوری صوبہ بنانے سے مسئلہ کشمیر کوکوئی نقصان نہیں پہنچے گاحالانکہ کل تک ہمارے مخالفین اعتزازاحسن پرکڑی تنقیدکررہے تھے حکومت کی طرف سے گلگت بلتستان کے آئینی معاملے پربلائی گئی تمام میٹنگزمیں گلگت بلتستان کے کسی بندے کونہیں رکھاگیا یہاں تک کہ اب تک بننے والی کسی کمیٹی میں گورنر کو بھی نہیں بلایاگیا اس سے ثابت ہوتا ہے کہ گلگت بلتستان کے رہنمائوں کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔افسوس کی بات یہ ہے کہ پی ٹی آئی کے مقامی لیڈرپھر بھی آئینی معاملے پربڑی بڑی باتیں کررہے ہیں۔وفاقی حکومت نے ہماری مشترکہ آوازکونہ صرف سننے سے انکارکیابلکہ اس کودبانے کی کوشش کی ہے۔پی ٹی آئی کے مقامی لیڈر کے لئے یہ ڈوب مرنے کامقام تھا صوبائی سطح پر عہدے لینے کے لئے تحریک انصاف کے مقامی لیڈروفاق کی ہاں میں ہاں ملارہے ہیں اورخطے کے مفادات کاسوداکررہے ہیں۔ہم آئینی معاملے پر قانونی اورآئینی جنگ لڑرہے ہیں تحریک انصاف گلگت بلتستان کے ساتھ مخلص ہے تو وہ عبوری صوبے کے لئے آئین میں ترمیم کا بل اسمبلی میں لائے۔منافقت نہ کرے سیاست کرے،حکومت چاہتی ہے کہ دوتہائی اکثریت کابہانہ بناکرگینددوسری سیاسی جماعت کی کورٹ میں پھینکے مگرہم ایسا کرنے نہیں دیںگے۔

Facebook Comments
Share Button