تازہ ترین

Marquee xml rss feed

گوادر میں پاکستان کا سب سے بڑا اور جدید ترین ائیرپورٹ تعمیر کرنے کی تیاریاں مکمل وزیراعظم عمران خان 29 مارچ کو ساحلی شہر میں منصوبے کا سنگ بنیاد رکھیں گے، منصوبہ سی پیک ... مزید-بلاول بھٹو 26مارچ کو کراچی سے ٹرین مارچ کا آغاز کریں گے، خورشید شاہ اٹھارہویں ترمیم کی حفاظت کے لیے قانون کےدائرے میں رہ کر جو بھی کر سکتے ہیں کریں گے، بلاول بھٹو زرداری-460ارب جرمانہ ملک ریاض نے نہیں، عوام نے ادا کرنا ہے، محمود صادق ملک ریاض کوعدالت سے ڈیل میں اب بھی 700 ارب منافع ہوگا، بحریہ ٹاؤن پر دباؤ بڑھنے سے کام ٹھپ ہوا تو لوگوں نے ... مزید-مفتی تقی عثمانی پر حملہ کرنیوالے ملزمان بہت جلد قانون کی گرفت میں ہوں گے،آئی جی سندھ-آئی ایس پی آر اور پاک فضائیہ کی جانب سے یومِ پاکستان 2019 کی مناسبت سے آفیشل نغمے جاری کردیے پاکستان زندہ آباد کے عنوان سے جاری کیے گئے نغمے میں وطن کے محفافظوں کو ... مزید-فیس بک کا بغیر اجازت نامناسب تصاویر اپ لوڈ یا شیئر کرنے والے صارفین کو بلاک کے نئے اقدامات کا اعلان کسی کی نامناسب تصاویر اس کی اجازت کے بغیر شیئر کرنا نقصان دہ ہے، ہم ... مزید-وزیراعلیٰ سندھ کا مفتی تقی عثمانی پر قاتلانہ حملے میں شہید اہلکار کے نابینا بچوں کے علاج کرانے اور مفت تعلیم کا اعلان-یوم پاکستان : گورنر اور وزیراعلیٰ سندھ نے مزار قائد پر حاضری دی،ملکی سلامتی کیلئے دعاکی-سعودی ولی عہد کی مہمان نواز کرنے والے ملازمین میں ایک کروڑ اعزازی تنخواہ دیئے جانے کا انکشاف-ملائیشیا پاکستان کی دفاعی صنعت سے بے حد متاثر، پاکستان کے اینٹی ٹینک میزائل خریدنے میں دلچسپی کا اظہار گزشتہ روز ملائیشیا کے وزیراعظم نے جے ایف 17 تھنڈر جنگی طیاروں کی ... مزید

GB News

ظلم اور کفر کا معاشرہ چل سکتا ہے، ناانصافی کا نہیں: چیف جسٹس

Share Button

چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ ظلم اور کفر کا معاشرہ چل سکتا ہے، ناانصافی کا نہیں، کبھی کسی کے کام میں مداخلت نہیں کی۔لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کی جانب سے چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار کے اعزاز میں الوداعی تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں نامزد چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ بھی شریک ہوئے۔تقریب سے خطاب میں چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ میں لاہور ہائیکورٹ کا بہت مشکور ہوں، میری یہاں سے نسبت بہت پرانی ہے، میرے والد صاحب نے یہی سے پریکٹس کی۔ بڑے بڑے وکلا بغیر فیس کے اپنی خدمات سرانجام دیتے تھے۔چیف جسٹس نے کہا کہ اللہ تعالیٰ نے ہمیں بہت سے نعمتوں سے نوازا ہے، اب عوام کو وہ انصاف نہیں مل رہا جو پہلے ملا کرتا تھا، ججز سے گزارش ہے کہ اس کام کو ملازمت سمجھ کر نہ کریں۔ان کا کہنا تھا کہ میں نے نیک نیتی سے جوڈیشل ایکٹوزم کی بنیاد رکھی، کبھی کسی کے کام میں مداخلت نہیں کی جبکہ ہسپتالوں کے دوروں میں مریضوں کو میسر سہولیات کا جائزہ لیا۔ انہوں نے کہا کہ ظلم اور کفر کا معاشرہ چل سکتا ہے لیکن ناانصافی کا نہیں۔انہوں نے اعلان کیا کہ جھوٹے ریفرنسز سے ججز کو بلیک میل نہیں ہونے دیں گے، 14 جنوری کو پولیس ریفارمز کی شکل میں تحفہ دیں گے۔

Facebook Comments
Share Button