تازہ ترین

Marquee xml rss feed

GB News

سکردو میں 5سو بیڈ پر مشتمل ڈویژنل ہسپتال بنارہے ہیں،سکریٹری صحت

Share Button

سکردو( محمد اسحاق جلال )سکریٹری صحت سعید اللہ خان نیاز ی نے کہا ہے کہ سکردو میں 5سو بیڈ پر مشتمل ڈویژنل ہسپتال بنایا جارہا ہے جس سے بلتستان میں صحت کے مسائل حل ہونگے ہسپتال کی فزیبلیٹی رپورٹ تیار کر لی گئی ہے 5سوکنال آراضی پر تعمیر ہونے والا ہسپتال جدید سہولتوں سے آراستہ ہوگا کارڈیک یونٹ ،سمیت تمام شعبہ جات ہسپتال کا حصہ ہوںگے بڑھتی ہوئی آبادی کے پیش نظر ڈویژنل ہسپتال کا قیام ناگزیر ہو گیا ہے بڑے ہسپتال کے قیام کے بعد لوگوں کو صحت سے متعلق درپیش مشکلات دور ہو جائیں گی ہسپتال کا باقائدہ ماسٹر پلان بنے گا اس کا ایک بلاک اگلے سال تیار کیا جائیگا کمشنر آفس میں پریس بریفنگ دیتے ہوئے انہوں نے کہاکہ ڈاکٹرز کے مطالبات منظور کئے جارہے ہیں اب وہ ہڑتال پر نہیں جائیں گے ڈاکٹروں کا ریگولیشن ایکٹ پاس ہو گیا ہے اس کو گزٹ آف پاکستان میں شامل کیا جائیگا محکمانہ ترقیوں کا اختیار چیف سکریٹری کے پاس ہے جوں ہی نوٹیفکیشن ہوگا 100سے زائد ڈاکٹرز مستقل ہوں گے 200ڈاکٹروں کی نئی آسامیاں پیدا کرنے کی سفارشات بھیجی گئی ہیں 200نئے ڈاکٹرز آنے کے بعد سسٹم میں 700ڈاکٹرز ہوں گے 2013میں صر ف151ڈاکٹرز یہاں کام کر رہے تھے انہوں نے کہاکہ گلگت بلتستان کے ہسپتال اس وقت قتل گاہ بنے ہوئے ہیں ڈاکٹرز پرچی پر ہسپتال کے اندر موجود دوائیاں نہیں لکھتے بلکہ عام مارکیٹ میں موجود ادویات لکھ دیتے ہیں مریض مجبوراً بازار سے مہنگی ادویات خرید رہے ہیں ہمارے سٹور ز ادویات سے بھرے پڑے ہیں مگر ڈاکٹرز باہر کی ادویات کو ترجیح دیتے ہیںڈاکٹرز کو اخلاقی طورپر بھی ایسا نہیں کرنا چاہئے ڈاکٹرز مریضوں کو کلینکس میں لے جانے کے بجائے ہسپتال کے اندر بہتر سہولتیں فراہم کریں پیپر ارول کے تحت ہم کم ریٹ پر ادویات خریدنے کے پابند ہیں ہماری حکومت سے گزارش ہے کہ وہ قانون میں ترمیم کرے اور ادویات کے ریٹ بڑھائے کیونکہ کم قیمت پر معیاری ادویات نہیں خریدی جاسکتی محکمہ صحت کے حوالے سے قانون میں تھوڑی ترمیم ضروری ہونی چاہئے تاکہ مریض کسی صورت میں متاثر نہ ہوسکے خطے کے تمام سرکاری ہسپتالوں میں یکم مارچ سے ایمرجنسی کی ادویات مفت فراہم کی جائیں گی ایمرجنسی کی دوائیوں کی کوئی قیمت وصول نہیں کی جائے گی انہوں نے کہا کہ پیرا میڈیکس کیلئے سروس اسٹریکچر بنایا جارہا ہے ہم چاہتے ہیں کہ میرٹ اور قانون کے مطابق پیرا میڈیکس کو ترقیاں دی جائیں جن نرسوں کے پاس چار سالہ نرسنگ کورس کا تجربہ ہوگا انہیں ترقیوں میں فوقیت دی جائے ایسے نرسوں کو گریڈ 12میں ترقی دی جائے گی ہر شعبے میں ٹیکنیشنزکی اشد ضرورت ہے مزید ٹیکنیشنز کی خدمات حاصل کی جائیں گی گلگت بلتستان میں نیورو سرجن گائناکالوجسٹ اورکارڈیک سرجن کا بڑا فقدان ہے دیامر اور استور میں کوئی گائناکالوجسٹ اور کارڈیک سرجن نہیں ہے دونوں اضلاع گائنا کالوجسٹ سے خالی ہو گئے ہیں دیگر اضلاع میں بھی بڑے مسائل ہیں لیڈی ڈاکٹرز کی قلت سے بھی مشکلات بڑھتی جارہی ہیں ہم ڈاکٹروں کو ڈھائی لاکھ روپے کی آفر دے رہے ہیں پھربھی یہاں آنے کیلئے کتراتے ہیں ہم صحت کے مسائل کے حل کیلئے بڑے سنجیدہ ہیں انہوں نے کہاکہ ہمسایہ ملک سے 100بیڈ تحفے میں ملے تھے ان میں سے 30سکردو ہسپتال ، 30بیڈ چلاس ، 15بیڈ استور ، 15بیڈ خپلو اور10بیڈ سٹی ہسپتال گلگت کیلئے دیئے جارہے ہیں انہوں نے کہاکہ ایک ایم آر آئی مشین گلگت میں نصب کی گئی ہے سکردو کیلئے ایک ایم آر آئی مشین منگوائی گئی ہے جلد یہ مشین سکردو پہنچے گی یہ بات درست نہیں ہے کہ سکردو کیلئے آنے والی ایم آر آئی مشین گلگت میں نصب کی گئی ہے انہوں نے کہاکہ بلتستان میں محکمہ صحت کا کوئی ادھورا منصوبہ نہیں ہے تمام منصوبے وقت پر مکمل کئے گئے ہیں تمام ہسپتالوں کے آپریشنل بجٹ میں دگنا اضافہ کر دیا گیا ہے ہم کسی قسم کے سیاسی ، سماجی دباؤ میں آئے بغیر کام کر رہے ہیں پہلے صرف6کروڑ روپے کی ادویات آتی تھیں اب 20کروڑ روپے کی ادویات آرہی ہیں ادویات کی قلت کا کوئی مسئلہ نہیں ہے پہلی مرتبہ ایمرجنسی اور اوپی ڈی کو الگ کیا جارہا ہے جس سے مریضوں کو کافی ریلیف ملے گا اور بوجھ کرم ہوگا ۔

Facebook Comments
Share Button