GB News

سکردو سٹی ہسپتال کے قیام کی فزیبلٹی رپورٹ پر عملدرآمد نہ ہو سکا

Share Button

سکردو(محمد اسحاق جلال) سکردو میں سٹی ہسپتال کے قیام کیلئے تیار کی گئی فزیبلٹی رپورٹ پر تاحال عمل درآمد نہ ہو سکی فزیبلٹی رپورٹ کی تیاری پر 50لاکھ اڑائے گئے اور کنسلٹنٹ کی خدمات حاصل کی گئی تھیں لیکن فزبیلٹی رپورٹ کہاں دفن ہو گئی تاحال کسی کو اتہ پتہ نہ چل سکا سٹی ہسپتال کے فزیبلٹی رپورٹ میں ڈی ایچ او آفس کی جگہ کو موزوں قرار دیا گیا تھا لیکن رپورٹ پر عملدآمد نہ ہو نے کے باعث عوامی حلقوں میں تشویش پیدا ہو گئی ہے اور کہاہے کہ حکومت بلتستان میں صحت کے شعبے کی ترقی پر توجہ دینے کیلئے سنجیدہ نہیں ہے پیپلزپارٹی کے ڈویژنل صدر غلام شہزاد آغا نے کہا ہے کہ سٹی ہسپتال کی فزیبلٹی رپورٹ پر لاکھوں روپے خرچ کئے گئے لیکن تاحال یہ رپورٹ کہاں ہے کس حالت میں ہے کسی کو پتہ نہیں ہے ہم جاننا چاہتے ہیں کہ سٹی ہسپتال کے قیام کے لئے تیار کی گئی فزیبلٹی رپورٹ کہاں ہے ؟ اور اس پر کئی سال گزرنے کے باوجود کیوں عملدآمد نہیں کیا گیا ہے ؟ فزیبلٹی رپورٹ پر جان بوجھ کر عملدرآمد نہیں کیاجارہا ہے انجمن تاجران کے صدر غلام حسین اطہر نے کہاہے کہ بلتستان میں صحت کی سہولتیں ناپید ہو گئی ہیں سکردو ہسپتال پر چار اضلاع کا بوجھ ہے حکومت نے کبھی صحت کے مسائل کے حل کی طرف کوئی توجہ نہیں دی ڈویژنل ہسپتال کے قیام کی باتیں بھی عبث ہیں پہلے سٹی ہسپتال کے قیام کو یقینی بنایا جائے پھر ڈویژنل ہسپتال کی بات کی جائے بلتستان کو مکمل طورپر نظر انداز کیا جارہا ہے تحریک انصاف کے جنرل سکریٹری غلام حیدر نے کہاہے کہ بلتستان کے ہسپتالوں کو اپ گریڈ کیا جائے اور ان کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کیا جائے لوگ صحت کے مسائل میں مبتلا ہیں پیپلزپارٹی کے رہنماء نجف علی نے کہا ہے کہ بے نظیر ہسپتال گمبہ سکردو کو اپ گریڈ کر کے 50بیڈ کا ہسپتال بنایا جائے یہاں مریضوں کا بڑا رش ہے اپ گریڈ نہ ہونے سے مریضوں کو مشکلات پیش آرہی ہیں بے نظیر ہسپتال کو اپ گریڈ کرنے سے ڈسٹرک ہیڈ کوارٹر ہسپتال پر بوجھ کم ہوگا حکومت اس بارے میں سنجیدگی دکھائے ۔

Facebook Comments
Share Button