تازہ ترین

Marquee xml rss feed

معشیت میں بہتری آ رہی ہے ، وزیر ریلوے شیخ رشید احمد کی نجی ٹی وی پروگرام میں گفتگو-گورنر پنجاب چوہدری محمدسرور نے آئی سی آئی میں مورینگاڈیری مصنوعات کے نئے پلانٹس کاافتتاح کر دیا-گور نر پنجاب چوہدری محمدسرور سے وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید احمد کی ملاقات-کسی احتجاجی تحر یک سے کوئی خطر ہ نہیں، حکومت اپنی آئینی مدت پوری کر ے گی، ملکی اور معاشی مضبوطی کیلئے کر پشن کے کینسر کو ختم کر نا لازم ہو چکا ہے، کر نٹ اکائونٹس خسارے ... مزید-پاکستان ایک امن پسند ملک ہے‘مودی سرکار نے مقبوضہ کشمیر میں ظلم،بربریت اورسفاکیت کے ذریعے امن کو روند ڈالا ہے‘ بین الاقوامی برادری کو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق ... مزید-وزیراعلیٰ سندھ کا ایک مہینہ طویل ’’کلین مائے کراچی‘‘ مہم شروع کرنے کا فیصلہ 600 سے زائد ڈمپرز ، شاولز ، ٹریکٹرز اور 400 ورکرز شہر بھر میں جاری مہم میں حصہ لیں گے-وزیر اعلیٰ سردار عثمان بزدار کی چونیاں آمد، مقتول بچوں کے اہل خانہ سے ملاقات، گلے لگا کر دلاسہ دیا سانحہ چونیاں کے ذمہ داروں کے بارے میں اطلاع دینے والے کیلئے حکومت ... مزید-تکنیکی تعلیم کی فراہمی سے ہیومن ریسورس کو بہتر بنایا جاسکتا ہے ،جام کمال خان پولی ٹیکنک کے شعبے میں بہتری سے ہم اپنی صنعت کو بہتر اور اعلی تعلیم یافتہ افرادی قوت فراہم ... مزید-سید مراد علی شاہ نے کراچی میں متعین چین کے سبکدوش ہونے والے قونصل جنرل وانگ یو Wang Yu سے وزیراعلیٰ ہاؤس میں ملاقات ین کی حکومت کا پاکستان کے کشمیر کے حوالے سے مؤقف کی حمایت ... مزید-میجر عدیل شاہد اور سپاہی فراز حسین مادر وطن کی عزت اور حفاظت پر قربان ہوگئے ‘شہباز شریف ہمارے شہید قوم کے سر کی چادر ہیں ان کا شوق شہادت اور جذبہ ایمانی ہی ہماری اصل قوت ... مزید

GB News

میں پرانی سیاست اور منافقوں کے اشاروں پر نہیں چل سکتی، ثوبیہ مقدم

Share Button

گلگت(پ ر) برطرف صوبائی وزیر ثوبیہ جے مقدم نے کہا ہے کہ دیامر کی محرومیوں، وزیر اعلٰی کی عدم دلچسپی، جھوٹے وعدوں اور ہوائی اعلانات کے خلاف اعلان بغاوت کرنے کی مجھے سزا دینے کی ناکام کوشش کی گئی ہے۔اپنے ایک بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ اقتدار کی کُرسی کو ٹھوکر مار کر جمہور اور جمہوری اصولوں کی بالادستی قائم کی ہے۔ میری یہ قربانی دیامر باالخصوص اور گلگت بلتستان باالعموم کے آنے والی نسلوں کیلئے ہے۔ میں نے دیامر کی 70 سالہ محرومیوں کی آواز بن کر وزارت کو جوتی کی نوک پر رکھ کر یہ پیغام دیا ہے کہ میں گلگت بلتستان کی خواتین اور نوجوان نسل کو باوقار، بااختیار اور باعزت دیکھنا چاہتی ہوں۔اگر میرا قصور یہ ہے اور اسی گناہ کی مجھے سزا دی گئی ہے تو میں یہ جُرم بار بار کروں گی بلکہ مرتے دَم تک کرتی رہوں گی۔ میں ایک نوجوان عوامی لیڈر ہوں اور گلگت بلتستان کی نوجوان نسل کی اُمیدیں ہم سے وابستہ ہیں۔ میری سیاست عوام کیلئے ہے۔ میں پُرانی سیاست اور منافقوں کے اشاروں پر نہیں چل سکتی، شُکر الحمداللہہ کرپٹ اور مافیاز کا حصّہ نہیں بنی۔ پچھلے ایک سال سے کہتی آئی ہوں کہ میں کٹھ پُتلی وزارتوں کے قائل نہیں ہوں۔ مجھے عوام کی خدمت اور عزت چاہیئے۔ میرا مقصد اور تھیم پاکستان، گلگت بلتستان اور عوام ہیں۔ میرا سوال حفیظ الرّٰحمان صاحب سے ہے، قاری صاحب!”مجھے کیوں نکالا”؟میرا قصور کیا ہے۔ میرے حلقے کے لوگ، ضلع دیامر اور گلگت بلتستان کے عوام کو جواب چاہئے۔؟؟آپ کو جواب دینا ہوگا اور انشائاللّٰلہ جی بی کے غیور عوام آپ سے جواب لے کے رہیں گے۔ آپ نے مجھے عورت اور کمزور سمجھ کر وار کیا ہے۔ عورت ماں، بہن اور بیٹی کے روپ میں سب سے طاقتور ہوتی ہے اور گلگت بلتستان کے غیور عوام اور دیامر کے قبائل آپ سے آپ کی اس ناانصافی اور زاتی عناد کا بدلہ لیں گے۔اجازت کے بغیر بیرون ملک کے دورے کرنے کا مجھ پر جھوٹا اور من گھڑت الزام لگا کر وزیر اعلیٰ نے اپنی زہنی پستی کا اظہار کیا ہے اور تمہاری پست سوچ گلگت بلتستان کے عوام کے سامنے اب کُھل کر آئی ہے۔ جھوٹے اور من گھڑت الزام لگا کر وزارت اعلٰی کے منصب پر رہنے کا اخلاقی جواز آپ کھو چُکے ہو ۔ہم آپ کے استفعٰی کا مطالبہ کرتے ہیں اور تم عزت دار ہیں تو استفعٰی دیں۔ حفیظ الرّٰحمان صاحب آپ نے پچھلے مہینے میں چلاس کے پولو میچ کے شائقین سے اپنے خطاب میں داریل اور تانگیر کے اضلاع کا اعلان کیا تھا اور ایک مہینہ میں نوٹیفکیشن کا وعدہ کیا تھا۔ اب ایک مہینہ ہو چُکا ہے، کہاں گیا آپ کا وعدہ اور نوٹیفکیشن؟دیامر کے عوام آپ سے پوچھ رہے ہیں اور منتظر ہیں۔میں تحریک حمایت مظلومین کے قائدین خصوصًا آغا راحت الحسینی اور دیگر اکابرین کا جنہوں نے کل کی اپنی احتجاجی ریلی میں دیامر کے حقوق کیلئے بھرپور آواز اُٹھا کر میرے مؤقف کی تائید کی اور میرے ساتھ ہونے والی ناانصافی کی بھی کُھل کر مزمت کی۔ میں اپنی طرف سے اور دیامر کے عوام کی طرف سے ریلی کے شُرکاء اور قائدین کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتی ہوں اور اُمید کرتی ہوں کہ آئندہ بھی دیامر کی محرومیوں اور حقوق کے حصول تک آپ اپنی مدد اور تائید جاری و ساری رکھیں گے۔

Facebook Comments
Share Button