تازہ ترین

Marquee xml rss feed

پاکستان میں فحش ویب سائٹس دیکھنے کی رجحان میں کمی واقع پاکستان میں فحش مواد اپ لوڈ ہونے کے شواہد نہیں ملے، جبکہ انٹرنیٹ پر فحش مواد دیکھنے کے رجحان میں بھی واضح کمی ہوئی ... مزید-علیم خان پھر سے پنجاب کی کابینہ میں واپسی کیلئے تیار تحریک انصاف کے سینئر رہنما کو جلد پنجاب کی کابینہ میں شامل کر لیا جائے گا، ممکنہ طور پر سینئر وزیر کی وزارت ہی سونپی ... مزید-مجھے اپنی عزت کا بھی خیال ہے، میرا مزاج ایس نہیں ہے کہ زیادہ شور شرابا کر سکوں اب جو وزارت سونپی گئی ہے اس کیلئے مشاورت نہیں کی گئی، تاہم وزیراعظم کا فیصلہ قبول کرتا ہوں: ... مزید-نامور وکیل کی مشرف کے خلاف غداری کیس میں پیش ہونے سے معذرت-مریم صفدر کے ہوتے ہوئے شر یف فیملی کو کسی د شمن کی ضرور ت نہیں‘ شہباز شریف ساتھی کی گرفتاری پربو کھلاہٹ کا شکار ہو کر بیان بازی کرر ہے ہیں ، غلام محی الدین دیوان-وزیر اعظم قوم کو بتائیں کہ وہ کیا ایجنڈا لیکر امریکہ جارہے ہیں،سینیٹرسراج الحق ایجنڈا افغانستان سے امریکی افواج کی بحفاظت واپسی کا ہے یا قوم کی مظلوم بیٹی ڈاکٹر عافیہ ... مزید-عوام سے جینے کا حق چھیننے کے بعد اب کفن اور قبر پر ٹیکس لگا کر موت بھی مہنگی کر دی گئی ہے ، سینیٹر سراج الحق اس وقت میں ملک میں جھوٹوں کی حکومت ہے ،جماعت اسلامی اقتدار ... مزید-ریکوڈک کیس میں 6 ارب ڈالرز جرمانے کا معاملہ، اب پریشان ہونے کی ضرورت نہیں، چین پاکستان کی مدد کیلئے میدان میں آگیا چین ریکوڈک منصوبے کا کنٹرول خود سنبھال کر چلی اور کینیڈا ... مزید-رینجرز کی شہر کے مختلف علاقوں میں کارروائیاں، 5 ملزمان گرفتار-دائودی بوہرہ جماعت کے سربراہ ڈاکٹر سیدنا مفدل سیف الدین کراچی پہنچ گئے

GB News

کوئٹہ میں بم دھماکہ: 4 افراد شہید ، 11 زخمی ،کالعدم تحریک طالبان نے ذمے داری قبول کر لی

Share Button

بلوچستان کے دارالحکومت کے علاقے سیٹلائٹ ٹاون میں واقع مسجد کے باہر ہونے والے دھماکے میں 4 افراد شہید جبکہ 11 زخمی ہوئے

کالعدم تحریک طالبان نے کوئٹہ بم دھماکے کی ذمے داری قبول کر لی، بلوچستان کے دارالحکومت کے علاقے سیٹلائٹ ٹاون میں واقع مسجد کے باہر ہونے والے دھماکے میں 4 افراد شہید جبکہ 11 زخمی ہوئے۔ تفصیلات کے مطابق صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں پولیس حکام کے مطابق پیر کی رات سیٹلائٹ ٹاﺅن کے علاقے میں منی مارکیٹ کے قریب دھماکہ ہوا ہے جس میں چار پولیس اہلکار شہیدجبکہ 11 افراد زخمی ہوئے ہیں۔پ ولیس حکام کے مطابق دھماکہ اس وقت ہوا جب یہ اہلکار ایک مسجد میں نماز تراویح کے دوران سکیورٹی کی غرض سے موجود تھے۔ دھماکے کے فوراً بعدپولیس اور فرنٹیئر کور نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا جبکہ شہید اور زخمی ہونے والے افراد کو ایدھی، چھیپا اور نجی ایمبولینس کے ذریعے سول ہسپتال اور گیلانی ہسپتال پہنچایا گیا۔

کالعدم تنظیم تحریک طالبان نے میڈیا کو ایک پیغام میں اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

ڈی آئی جی آپریشن پولیس عبدالرزاق چیمہ نے ذرائع ابلاغ کو بتایا کہ دھماکے میں چار اہلکار شہید اور 11 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ ان کے بقول دھماکہ خیز مواد موٹر سائیکل میں نصب کیا گیا تھا جس کا نشانہ پولیس اہلکار تھے۔ پولیس نے ابتدائی اطلاعات کے مطابق بتایا کہ پولیس وین کے قریب دھماکہ خیز مواد رکھا گیا تھا۔ واقعے کے فوراً کے بعد پولیس اور دیگر فورسز نے سٹیلائٹ ٹاﺅن اور ملحقہ علاقوں میں سرچ آپریشن شروع کر دیا۔دھماکہ اتنا شدید تھا کہ آس پاس کی عمارتوں اور مین سٹیلائٹ ٹاﺅن چوک پر کھڑی گاڑیوں کو نقصان پہنچا۔ دھماکے کے بعد سیکرٹری صحت بلوچستان نے کوئٹہ کے تمام ہسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کرکے زخمیوں کو بہتر طبی سہولیات فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔ اس سلسلے میں بلوچستان کے وزیر میر ضیاءلانگو نے میڈیا کو بتایا کہ دھماکہ خیز مواد کو پولیس وین کے قریب نصب کیا گیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ کوئٹہ سمیت بلوچستان بھر میں امن امان کی صورتحال کو کسی کو خراب کرنے نہیں دیا جائے گا۔

Facebook Comments
Share Button