تازہ ترین

Marquee xml rss feed

وزیراعلی پنجاب نے تقرر و تبادلوں پر پابندی لگا دی-حکومت کا شرعی قوانین کے تحت احتجاجی مظاہروں کیخلاف مسودہ تیار حکومت نے احتجاجی مظاہرے ’’شریعت اور قانون کی نظرمیں“ کے عنوان سے مسودہ تیارکیا ہے، مسودے کو اگلے ایک ... مزید-دھماکے میں پاکستانی قونصل خانے کا تمام عملہ محفوظ رہا، ڈاکٹر فیصل دھماکا آئی ای ڈی نصب کرکے کیا گیا، قونصل خانے کی سکیورٹی بڑھانے کیلئےافغان حکام سے رابطے میں ہیں۔ ترجمان ... مزید-جلال آباد میں پاکستان سفارت خانے کے باہر دھماکا دھماکے میں ایک سکیورٹی اہلکار سمیت 3 افراد زخمی ہوگئے، دھماکا پاکستانی سفارتخانے کی چیک پوسٹ کے 200 میٹر فاصلے پر ہوا۔ ... مزید-گلوکارہ ماہم سہیل کے گانے سجن یار کی پری سکریننگ کی تقریب کا انعقاد-پاک ہیروز ہاکی کلب کی 55 ویں سالگرہ پر ٹورنامنٹ کا انعقاد-صفائی مہم کے دوران 47 ہزار ٹن کچرا نالوں سے نکالا گیا ہے‘ وفاقی وزیر برائے بحری امور علی زیدی-مودی کے دورہ فرانس پر”انڈیا دہشتگرد“ کے نعرے لگ گئے جب کوئی دورہ فرانس پرتھا، ترجمان پاک فوج کا دلچسپ ٹویٹ، سینکڑوں کشمیری، پاکستانی اورسکھ کیمونٹی کے لوگوں کا ایفل ... مزید-حالیہ پولیو کیسز رپورٹ ہونے کے بعد بلوچستان میں خصوصی پولیو مہم شروع کی جا رہی ہے، راشد رزاق-آئی جی پولیس نے راولپنڈی میں شہری سے فراڈ کے واقعہ کا نو ٹس لے لیا

GB News

سابق ترک وزیراعظم داؤد اوغلو نئی جماعت متعارف کرانے کیلئے مستعد

Share Button

ترکی کی خبروں سے متعلق ویب سائٹ ’’اًحوال‘‘ نے ایک باخبر ذریعے کے حوالے سے بتایا ہے کہ ترکی کے سابق وزیراعظم احمد داؤد اوغلو کے حامی سیاست دانوں کا ایک گروپ ملک کے 70 صوبوں میں ایک نئی سیاسی جماعت متعارف کرانے کے واسطے پوری طرح تیار ہے۔ ترکی کے صوبوں کی کٴْل تعداد 81 ہے۔ویب سائٹ کے مطابق دائود اوغلو نے 2014 میں رجب طیب ایردوآن کے ملک کا صدر منتخب ہونے کے وقت وزارت عظمی کا منصب سنبھالا۔تاہم بعد ازاں وہ دیوار کے ساتھ لگا دیے گئے اور 2016 میں اپنے منصب سے مستعفی ہو گئے۔ مارچ میں بلدیاتی انتخابات میں حکمراں جماعت جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی کی سلسلہ وار شکستوں کے بعد داؤد اوغلو پارٹی پر اعلانیہ تنقید کرنے والی شخصیات میں سے بن گئے۔

انہوں نے فیس بک پر ایک طویل منشور بھی پوسٹ کیا۔اس وقت سے ان قیاس آرائیوں میں اضافہ ہوتا چلا گیا کہ داؤد اوغلو ایک نئی سیاسی جماعت لانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔

تاہم اوغلو نے گذشتہ ماہ کہا کہ اس نوعیت کا اقدام آخری آپشن ہو گا۔البتہ اوغلو کے ساتھ کام کرنے والی ایک اہم شخصیت نے بتایا ہے کہ نئی پارٹی نے استنبول اور انقرہ میں پہلے ہی اپنے صدر دفاتر قائم کر لیے ہیں اور 70 صوبوں میں متعارف ہونے کے لیے پارٹی کی تیاریاں مکمل ہیں۔ مذکورہ ذریعے نے شناخت ظاہر نہ کرتے ہوئے بتایا کہ داؤد اولو آئندہ ماہ عوام کے لیے ایک نیا بیان جاری کریں گے۔ذریعے نے جو ابھی تک جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی کی رکنیت کا حامل ہے بتایا کہ حکمراں جماعت نے مقامی انتخابات کے بعد بلدیاتی اداروں میں کام کرنے والے ملازمین کے نظام میں جامع ترامیم کا فیصلہ کر لیا تھا۔ تاہم پارٹی نے مذکورہ ترامیم پر عمل درامد کو مؤخر کر دیا تا کہ سابق وزیراعظم داؤد اور اولو اور ان کے سابق نائب علی بابا جان کی سربراہی میں بننے والی کسی بھی نئی سیاسی جماعت میں شمولیت کی راہ دیکھنے والے ارکان کو روکا جا سکے۔احوال ویب سائٹ کے مطابق ذریعے کا کہنا ہے کہ داؤد اولو پیشے کے لحاظ سے ایک استاد ہونے کے سبب سیاسی نظام میں بعض تبدیلیوں کے خواہاں ہیں۔ وہ چاہتے ہیں کہ ملک کا صدر اور پارٹی سربراہ دو علاحدہ شخصیات ہوں۔ مزید یہ کہ وہ پارلیمنٹ کے اختیارات میں اضافے کے خواہش مند ہیں۔ داؤد اولو یہ بھی چاہتے ہیں کہ جسٹس اینڈ ڈیولپمنٹ پارٹی دائیں بازو کی قوم پرست جماعت نیشنلسٹ موومنٹ پارٹی کے ساتھ اپنا اتحاد ختم کر دے۔ترکی میں جون 2018 میں ہونے والے قومی انتخابات کے بعد پارلیمانی نظام ایک ایگزیکٹو صدارتی نظام میں تبدیل کر دیا گیا تھا۔

Facebook Comments
Share Button