تازہ ترین

Marquee xml rss feed

چونیاں واقعہ:وزیراعلیٰ کا ملزمان کی نشاندہی کرنیوالےکونقد انعام دینےکا اعلان جوبھی ملزمان کی نشاندہی کرے گا اس کو 50 لاکھ روپے انعام دیا جائے گا، معطل افسران کی پوسٹنگ ... مزید-تبدیلی کے نام نہاد دعویداروں نے کینسر کے مریضوں کی دوائیاںبند کردی‘پرویز ملک کینسر کی دوائی نہ ملنے کیوجہ سے مرنیوالے 4 مریضوں کے قتل کا مقدمہ وزیر صحت کیخلاف درج کیا ... مزید-آئی جی پنجاب سے کینیڈین ہائی کمیشن کے تین رکنی وفد کی سنٹرل پولیس آفس میں ملاقات دوران ملاقات منشیات فروشوں کے نیٹ ورک کے خلاف آپریشنز کیلئے انفارمیشن شیئرنگ کو مزید ... مزید-آئی جی سندھ سے چین کے قونصل جنرل کی ملاقات ، سیکیورٹی اقدامات سمیت باہمی دلچسپی کے امورپرتفصیلی تبادلہ خیال-اثاثہ جات کیس، خورشید شاہ کو پولی کلینک ہسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا-مہنگائی کی صورتحال آئندہ دو سال تک ایسی ہی رہے گی، ڈپٹی گور نر اسٹیٹ بینک-وزیراعلی سندھ کا پوری صفائی کا کام دستاویزی طریقے سے کرنے کا حکم ہر ضلع صاف کرکے ڈی ایم سی کے حوالے کرنا ہے ، ڈیم ایم سی کو چاہیے پھر صفائی کو برقرار رکھیں،مراد علی شاہ ... مزید-Careem اور MicroEnsure کے باہمی اشتراک سے انشورنس ایپ متعارف کروا دی گئی کریم اور MicroEnsure کے اشتراک سے کریم ایپ کے تمام صارفین (بشمول کریم کپتان اور مسافر) کے لیے ایسی سہولیات متعارف ... مزید-سوشل میڈیا پر اپنے خاوند کے خلاف شکایت کرنے والی فیشن بلاگر آمنہ عتیق اگلے ہی روز مردہ حالت میں پائی گئی آمنہ عتیق نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بُک پر اپنے شوہر کے ناروا ... مزید-حکومت اورعوام کو تیل اورگیس کے ذخائرکی بڑی خوشخبرمل گئی گولارچی میں خام تیل اورگیس کے 2 بڑے ذخائردریافت، تیل اورگیس کے ذخائرکی تعداد 8 ہوگئی، علاقے میں تیل اور گیس کے ... مزید

GB News

مقبوضہ کشمیر: کرفیو کو 3ہفتے مکمل، کشمیریوں کے عزم و حوصلے بلند

Share Button

سرینگر(آئی این پی+ ماینٹرنگ ڈیسک)مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈائون اور کرفیو کو 3ہفتے مکمل ہو گئے بھارتی فوج وحشیانہ طاقت استعمال کرنے کے باوجود کشمیری عوام کو جھکانے میں ناکام ہے، جیسے جیسے مظالم بڑھ رہے ہیں کشمیریوں کے عزم و حوصلے بھی بلند ہوتے جا رہے ہیں جبکہ قابض فوجی درندگی کی نئی داستانیں رقم کر رہے ہیں ، تازہ واقعہ میں بھارتی فوج نے احتجاج کرنے والے نوجوانوں کو آگ لگا دی جبکہ احتجاجی مظاہرین پر فائرنگ اور شیلنگ کی جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے، حریت رہنما سید علی گیلانی نے 5نکاتی لائحہ عمل کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی فوج مارنے اور کشمیری عوام احتجاج کیلئے تیار ہیں عوام محاصرے توڑیں ، پاکستان اور سملم امہ سے مدد کیلئے آگے آئے جبکہ کشمیر کے نوجوانوں نے احتجاج کیلئے شیڈول کا اعلن کر دیا ہے اور وادی میں جگہ جگہ شیڈول کے حوالے سے پوسٹر آویزاں کر دیئے گئے ہیں، آج پیر کو لال چوک اور کل منگل کو حضرت بل پہنچنے کی کال دی گئی ہے ادھر اقوام متحدہ نے بھارت کو قابل شرم ممالک کی فہرست میں شامل کر لیا ہے،مقبوضہ کشمیر میں کرفیو اور لاک ڈا ون 21ویں روز بھی جاری رہا ، جگہ جگہ بھارتی فوجی تعینات رہے، کشمیریوں کا کہنا ہے وہ تمام رکاوٹیں توڑ کر آزادی حاصل کر کے ہی رہیں گے، حریت قیادت کی جانب سے مظاہرے جاری رکھنے کے اعلان کے بعد جگہ جگہ مظاہرے شروع ہو گئے۔وادی میں آزادی کے نعرے گونجتے رہے، کشمیریوں میں بھارتی مظالم کے خلاف ڈٹے رہنے کا عزم ہے، دھڑا دھڑ گرفتاریوں کے باوجود کشمیریوں کے حوصلے چٹان کی طرح مضبوط ہیں۔کرفیو اور لاک ڈان کی وجہ سے نظام زندگی مفلوج ہو کر رہ گیا ہے۔ بھارت سب کچھ نارمل ہونے کا پروپیگنڈا کر رہا ہے لیکن مقبوضہ وادی میں سکول کالج، کاروباری مراکز اور ٹرانسپورٹ بند ہے۔کشمیری عوام کو خوراک اور ادویات کی قلت کا سامنا ہے جس کے سبب حریت قیادت نے بھارت کے خلاف مظاہرے جاری رکھنے کا علان کیا ہے۔مقبوضہ کشمیر میںسفاکیت کی انتہا کرتے ہوئے بھارتی مظالم کے خلاف احتجاج کرنے والے کشمیری نوجوان کو قابض اہلکاروں نے آگ لگادی ۔سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ قابض بھارتی فوجی کس طرح نہتے نوجوان کو تشدد کا نشانہ بناتے ہیں جس کے باعث وہ شدید زخمی ہوجاتا ہے اسی دوران ایک بھارتی فوج نوجوان کو آگ لگادیتا ہے۔بزرگ حریت رہنما سید علی شاہ گیلانی نے کشمیریوں کو متحدہ رہنے کی اپیل کرتے ہوئے 5 نکاتی لائحہ عمل کا اعلان کردیا ہے جبکہ پاکستان سے مدد کی درخواست بھی کردی ہے۔سید علی گیلانی نے کشمیری عوام کولکھے گئے خط میں کہا کہ آج کشمیر کی تالا بندی ہے جسے ایک جیل میں تبدیل کردیا گیا ہے۔ مقبوضہ وادی میں بھارتی حکومت کی جانب سے نافذ کرفیو کی وجہ سے مواصلاتی نظام بندہے جبکہ احتجاج کرنے والے ہزاروں نوجوانوں کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔حریت رہنما نے کہا کہ بھارت وحشیانہ ظلم و ستم کی اطلاعات بیرونی دنیا تک پہنچنے سے روک رہا ہے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ کشمیریوں پر یکطرفہ فیصلہ مسلط کر دیا گیا ہے اور یہاں قابض فوج کی تعداد میں بھی اضافہ کردیا گیا ہے جبکہ کشمیری اپنے گھروں میں قید ہو کر رہے گئے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ بھارت کو تاریخ کبھی معاف نہیں کرے گی، ہر خالی صفحہ چیخ چیخ کر تاریخی حقائق بتائے گا۔سید علی گیلانی نے عالمی سطح پر مسئلہ کشمیر اجاگر ہونے سے متعلق کہا کہ بھارت کی سرتوڑ کاوشوں کے باوجود جس طرح مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں اٹھا پہلے کبھی نہیں ہوا۔ عالمی میڈیا جس انداز میں کشمیریوں کی حالت زار کو اجاگر کر رہا ہے وہ بھی پہلے کبھی دیکھنے میں نہیں آیا۔ انہوں نے انتباہ دیا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر کا جغرافیہ، اس کی ہیت اور آبادی کا مذہبی تناسب تبدیل کرنا چاہتا ہے جبکہ اس کے یہ اقدامات عالمی قوانین اور سلامتی کونسل کی قراردادوں کے منافی ہیں۔حریت کانفرنس کے سربراہ نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کی دو حصوں میں تقسیم، جمہوریت کیساتھ مذاق ہے، ان لوگوں پر نفسیاتی جنگ مسلط کردی گئی ہے۔سید علی گیلانی نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کی نظر بندی سے متعلق کہا کہ بھارت نواز کشمیریوں کے سوداگروں کو بھی نظر بند کردیا گیا ہے۔اپنی بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آج بھارت نواز رہنما بھی یہ حقیقت جان گئے کہ نئی دہلی کے نزدیک کشمیریوں کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔انہوں نے باور کروایا کہ آج وقت آ گیا ہے کہ بھارت نواز قیادت بھی بھارتی قبضے کے خلاف اور مقبوضہ وادی کی مکمل آزادی کے لیے کشمیریوں کا ساتھ دے۔حریت رہنما نے مزید کہا کہ آج کشمیریوں، حریت قیادت اور مقبوضہ وادی میں جاری حق خودارادیت کی جدوجہد کا موقف سچ ثابت ہوگیا۔انہوں نے بھارتی عزائم کا تذکرہ کرتے ہوئے اپنے خط میں واضح کیا کہ بھارت کشمیری عوام نہیں بلکہ کشمیر کی سرزمین چاہتا ہے۔سید علی گیلانی نے کشمیری عوام کو پیغام دیا کہ بہادری، صبر اور تنظیم جیسے ہتھیار کی مدد سے بڑی سے بڑی طاقت کو شکست دی جا سکتی ہے۔بھارتی غاصبانہ اقدامات کے خلاف سید علی شاہ گیلانی نے 5 نکاتی لائحہ عمل دیتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام بہادری سے بھارتی مظالم کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں۔حریف رہنما نے مظلوم کشمیروں سے مطالبہ کیا کہ تمام لوگ اپنے اپنے علاقوں میں بڑے پیمانے پر بھارت کے خلاف پرامن مظاہرے اور احتجاج کریں۔اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ ‘بھارتی فورسز مارنے کے لیے تیار ہیں، لیکن پھر بھی آپ پر امن رہیں۔سید علی گیلانی نے کشمیری حکام، بیوروکریٹس اور پولیس کے حکام کو پیغام دیتے ہوئے کہا کہ سرکاری اداروں میں موجود لوگ جان لیں کہ نئی دہلی کو ان پر بھی کوئی اعتماد نہیں ہے۔انہوں نے باور کروایا کہ پولیس کو غیر مسلح کرکے سیکیورٹی کے تمام اختیارات فوج اور نیم فوجی دستوں کو دے دیئے گئے ہیں۔سید علی گیلانی نے سرکاری حکام سے بھی احتجاج میں شامل ہونے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ اگر وہ احتجاج میں شامل نہیں ہوئے تو بھارت نواز سیاستدانوں کی طرح غیر ضروری ہوجائیں گے۔سید علی گیلانی نے مقبوضہ کشمیر سے باہر بیٹھے کشمیریوں سے بھی اپیل کی کہ وہ کشمیر کے سفیر بنیں، وادی کے تمام معاملات سے واقف رہیں اور اپنے احتجاج ریکارڈ کروائیں۔اپنے خط میں انہوں نے تمام کشمیریوں کو مشورہ دیا کہ بھارتی غاصبانہ قبضے، ظلم و ستم کو اجاگر کرنے کے لیے وہ کشمیر کی تاریخ اور حالات سے واقفیت رکھیں۔سید علی گیلانی نے اپنے خط میں پاکستان کو پکارتے ہوئے کہا کہ پاکستان، پاکستانی عوام اور مسلم امہ کشمیریوں کی فوری مدد کے لیے آئیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان، اس کے عوام اور پوری مسلم امہ مسئلہ کشمیر کے اہم فریق ہیں۔انہوں نے کشمیری عوام پر زور دیا کہ یہ اتحاد اور عمل کا وقت ہے، اگر آج حقیقی عمل نہ ہوا تو نہ صرف تاریخ بلکہ آئندہ نسلیں بھی آپ کو معاف نہیں کریں گی۔سید علی گیلانی نے کشمیری قیادت پر زور دیا کہ سیاسی و سفارتی رابطے تیز کیے جائیں اور بھارت کی اس دھوکہ دہی کو پوری دنیا کے سامنے اجاگر کیا جائے۔انہوں نے پوری کشمیری عوام سے مطالبہ کیا کہ بھارت کے اس زہر آلود منصوبے کو کامیاب نہیں ہونے دینا جو نہ صرف کشمیریوں بلکہ لداخ کے بدھ مت، کارگل کے مسلمانوں اور پیربنجال کے خلاف ہیں۔سید علی گیلانی نے کہا کہ بھارت ہماری زمین ہی نہیں بلکہ مشترکہ شناخت اور بھائی چارے کی تباہی چاہتا ہے تاہم ہمیں اپنی زندگیاں، املاک اور شناخت بچانے کے لیے متحد ہو کر کھڑا ہونا ہوگا۔انہوں نے عزم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بھارت جان لے کہ 10 لاکھ نہیں بلکہ پوری فوج بھی لے آئے تب بھی کشمیری اپنے حق سے دستبردار نہیں ہوں گے۔ اقوام متحدہ نے بھارت کو قابل شرم ممالک کی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔جنرل سیکرٹری انٹونیو گوٹیریز کی جانب سے جاری کی گئی رپورٹ کے مطابق فہرست میں ایسے ممالک کو رکھا کیا گیا ہے جہاں انسانی حقوق کی خاطر کام کرنے والوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔اقوام متحدہ کی فہرست میں مجموعی طور پر 38 ممالک شامل ہیں جن میں سے 29 کو پہلی بار درج کیا گیا ہے۔اس فہرست میں جن ممالک کو رکھا گیا ہے وہاں انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والوں کو قتل، تشدد، بد سلوکی، مجرمانہ سلوک، الزام اور گرفتاریوں کا سامنا ہے۔انٹونیو گوٹیریز نے اپنی رپورٹ میں لکھا کہ ہم ان بہادر لوگوں کی خدمات کو سراہتے ہیں جنہوں نے مشکلات کے باجودہ ہمیں آگاہ رکھا۔سیکرٹری جنرل نے لکھا کہ اقوام متحدہ کے ساتھ کام کرنے والوں کوسزائیں دینا ایک قابل شرم عمل ہے اور اسے ختم ہونا چاہیے۔جن ممالک کو قابل شرم قرار دیا گیا ہے وہاں اقوام متحدہ کے نمائندوں پر بیرونی طاقتوں کے آلہ کار ہونے کا الزام بھی لگایا جاتا ہے۔رپورٹ کے مطابق قومی سلامتی اور انسداد دہشت گردی کی آڑ میں کمیونٹی اور سول سوسائٹی کا اقوام متحدہ سے رابطہ ختم کرنا ایک پریشان کن بات ہے۔اقوام متحدہ کے ساتھ کام کرنے والی خواتین کو جنسی زیادتی اور آن لائن ہراساں کرنے کی دھمکیاں دی جاتی ہیں۔اسسٹنٹ سیکرٹری انڈریو گیلمور کے مطابق رپورٹ میں جن واقعات کا ذکر کیا گیا ہے وہ اصل حقائق سے بہت کم ہیں جب کہ ہمیں سیاسی، قانونی اور انتظامی مشکلات کا بھی سامنا ہے۔یو این کی فہرست میں جن ممالک کو رکھا گیا ہے ان میں بھارت، روس، میانمار، مالدیپ، اسرائیل، ہنگری، فلپائن، تھائی لینڈ، وینزویلا، روانڈا، مصر، کانگو، کیوبا، کولمبیا اور دیگر شامل ہیں۔

Facebook Comments
Share Button