تازہ ترین

Marquee xml rss feed

چونیاں واقعہ:وزیراعلیٰ کا ملزمان کی نشاندہی کرنیوالےکونقد انعام دینےکا اعلان جوبھی ملزمان کی نشاندہی کرے گا اس کو 50 لاکھ روپے انعام دیا جائے گا، معطل افسران کی پوسٹنگ ... مزید-تبدیلی کے نام نہاد دعویداروں نے کینسر کے مریضوں کی دوائیاںبند کردی‘پرویز ملک کینسر کی دوائی نہ ملنے کیوجہ سے مرنیوالے 4 مریضوں کے قتل کا مقدمہ وزیر صحت کیخلاف درج کیا ... مزید-آئی جی پنجاب سے کینیڈین ہائی کمیشن کے تین رکنی وفد کی سنٹرل پولیس آفس میں ملاقات دوران ملاقات منشیات فروشوں کے نیٹ ورک کے خلاف آپریشنز کیلئے انفارمیشن شیئرنگ کو مزید ... مزید-آئی جی سندھ سے چین کے قونصل جنرل کی ملاقات ، سیکیورٹی اقدامات سمیت باہمی دلچسپی کے امورپرتفصیلی تبادلہ خیال-اثاثہ جات کیس، خورشید شاہ کو پولی کلینک ہسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا-مہنگائی کی صورتحال آئندہ دو سال تک ایسی ہی رہے گی، ڈپٹی گور نر اسٹیٹ بینک-وزیراعلی سندھ کا پوری صفائی کا کام دستاویزی طریقے سے کرنے کا حکم ہر ضلع صاف کرکے ڈی ایم سی کے حوالے کرنا ہے ، ڈیم ایم سی کو چاہیے پھر صفائی کو برقرار رکھیں،مراد علی شاہ ... مزید-Careem اور MicroEnsure کے باہمی اشتراک سے انشورنس ایپ متعارف کروا دی گئی کریم اور MicroEnsure کے اشتراک سے کریم ایپ کے تمام صارفین (بشمول کریم کپتان اور مسافر) کے لیے ایسی سہولیات متعارف ... مزید-سوشل میڈیا پر اپنے خاوند کے خلاف شکایت کرنے والی فیشن بلاگر آمنہ عتیق اگلے ہی روز مردہ حالت میں پائی گئی آمنہ عتیق نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ فیس بُک پر اپنے شوہر کے ناروا ... مزید-حکومت اورعوام کو تیل اورگیس کے ذخائرکی بڑی خوشخبرمل گئی گولارچی میں خام تیل اورگیس کے 2 بڑے ذخائردریافت، تیل اورگیس کے ذخائرکی تعداد 8 ہوگئی، علاقے میں تیل اور گیس کے ... مزید

GB News

06ستمبر:یوم دفاع پاکستان

Share Button

6 ستمبر1965ء ہماری عسکری تاریخ کا انتہائی اہم ترین دن ہے۔ یہ دن ہمیں جنگ ستمبر کے اْن دنوں کی یاد دلاتا ہے جب پاکستان کی مسلح افواج اورپوری قوم نے بھارتی جارحیت کے خلاف اپنی آزادی اورقومی وقار کا دفاع کیا تھا۔ اس دن محب وطن پاکستانی شہریوں نے اپنی مسلح افواج کے ساتھ یکجہتی کا بے مثال مظاہرہ کیا اور یہ جنگ پاکستانی قوم اور مسلح افواج کی مشترکہ جدوجہد تھی جوآنیوالی نسلوں کے لئے مشعلِ ر اہ کاکام کرتی رہے گی۔ اس تاریخی دن کے ساتھ ایسی انمٹ یادیں اورنقوش وابستہ ہوچکے ہیں جنہیں زمانے کی گرد بھی نہ دھندلاسکے گی۔ یہ دن جہاں ہماری پاکستانی قوم کے لئے بڑی آزمائش کا دن تھا وہاں پر نڈر اور بہادر افواج کے لئے بھی انتہائی کڑا وقت تھا۔ اس دن پوری قوم اورمسلح افوج کے افسروں،جوانوں نے مل کر رفاقت کے سچے جذبے کے ساتھ بزدل ،مکار وعیار دشمن کے ناپاک اورگھنائونے عزائم کو خاک میں ملادیا تھا۔ ان فرزندانِ پاکستان کی بے مثال اورلازوال قربانیوں کی بدولت آج ہمیں تاریخ میں ایک باوقار مقام حاصل ہے۔ یہ ایک مسلمہ حقیقت ہے کہ قوم کے جذبہ ایمان، کردار،ہمت اور خلوص کا امتحان جنگ سے ہواکرتا ہے۔ 6ستمبر1965ء کی جنگ اس کی زندہ مثال ہے۔ جس میں پاکستانی قوم اورافواجِ پاکستان نے ثابت کردیا کہ ان کا دل اللہ کی یاد سے لبریز ،حبِ رسولۖ سے مامور ، دین کی محبت سے آباد اور وطن کی آزادی و حرمت پر مر مٹنے کے جذبے سے سرشار ہے۔ یہی وہ سرمایہ تھا جس کے بل بوتے پر اس نے اپنے سے تعداد اور اسلحہ میں کئی گنا بڑی طاقت کے سارے خواب بکھیر دیئے اور سارے منصوبے اورغرور خاک میں ملا دیئے۔6ستمبر ان شہیدوں اور غازیوں کو سلامی پیش کرنے کا دن ہے جنہوں نے سیالکوٹ سیکٹر میں چونڈہ کے مقام پر بھارت کے آرمرڈ اور تین دوسرے ڈویژنوں جن میں پانچ سوٹینک تھے کی یلغار کو اللہ کے فضل و کرم سے صرف ایک ڈویژن اور ایک آمرڈ فارمیشن سے پسپا کر دیا تھا۔پاکستان کی عسکری اور دفاعی تاریخ کے روشن باب سے ہر دور کے افراد قوم کا آگاہ ہونا ضروری ہے کہ پاکستان کا ازلی دشمن بھارتی کس طرح رات کی تاریکی میں پاکستان پر چڑھ دوڑا تھا۔ بلاشبہ 6ستمبر 1965ء ایک ایسا دن تھا جس نے پاکستان کے ایک ایک فرد کو جھنجھوڑ کر جگا دیا تھا۔آج پاکستان کو اسی 1965ء والے جذبے کی اشد ضرورت ہے، آج بھی پاک فوج کو بطور قوم ہماری ضرورت ہے، قومی یکجہتی کی ضرورت ہے، ملک سے بیرونی عناصر کو نکالنے کی ضرورت ہے اور سب سے بڑھ کر ستمبر1965ء والے قومی و اجتماعی جذبے کی ضرورت ہے۔ کیوں کہ دفاع وطن کے تقاضوں کو آج بڑے بڑے چیلنجوں کا سامنا ہے۔وزیراعظم عمران خان، اْن کی ٹیم،آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور اْن کی ٹیم ان چیلنجز سے نمٹنے کے لیے دن رات کوشاں ہیں۔پاکستان جو خود اپنی تاریخ کے ایک نازک ترین دور سے گزررہا ہے کی افواج دفاع وطن کے لیے اندرونی اور بیرونی سرحدوں پر ڈٹی ہوئی ہیں۔ایک محاذ پر اسے بھارت جیسے شاطر اور کم ظرف دشمن کا سامنا ہے تو دوسری جانب اسے بیرونی اور اندرونی خلفشار کا بھی سامنا ہے۔
پاک فوج سرحدوں کے دفاع کے ساتھ ساتھ اندرونی محاذ پر دہشت گردی کے خلاف نبرد آزما ہے جو خدانخواستہ اس پاک سرزمین کی سرحدوں کو کھوکھلا کرنے کے درپے ہے۔بھارت نے ہم پر 65ء کی جنگ مسلط کی تو اس کے جواب میں صدر محمد ایوب خان نے قوم سے اپنے خطاب میں کلمہ طیبہ پڑھ کر جہاد کا اعلان کیا تھا۔ ان کا وہ خطاب بہت اہم اور تاریخی تھا۔ اللہ کے نام سے انہوں نے اپنی افواج اور قوم کا حوصلہ بڑھاتے ہوئے بھارت کو للکارا تھا۔ ہماری مسلح افواج کے افسروں اور جوانوں نے ہر فیلڈ میں بھارت کا مقابلہ کیا اور اسے ناکوں چنے چبوا دیے۔ کھیم کرن، لاہور اور چونڈا کے محاذوں پر جو تاریخی قربانیاں دی گئیں، وہ آج بھی یادگار ہیں۔ ان شہداء کے کارناموں کو ہر پاکستانی فخر کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ بھارت کا بنیّا ہمیشہ قوت کے سامنے ڈھیر ہوتا ہے۔ اس کے ساتھ جو بھی نرم رویہ اختیار کرے وہ اس پر چڑھ دوڑتا ہے۔65ء کی جنگ کے دوران وطن عزیز میں ایسی فضا بن گئی تھی کہ جہادی ترانوں سے پوری قوم جھوم اٹھی تھی۔چونڈا میں بھارتی ٹینکوں کو جس انداز میں پاک فوج کے افسروں وجوانوں نے اپنی قیمتی جانوں کی قربانیاں دے کر روکا تھا، اس پر پوری دنیا ان غازیوں اور شہداء کے کردار سے متاثر ہوئی تھی۔ یہ اسلام اور ایمان کی برکت ہے۔ پاک فوج کا شعار ”ایمان، تقویٰ اور جہاد فی سبیل اللہ” اس قدر ایمان افروز ہے کہ اس کی بازگشت جہاں بھی سنائی دے،یا اس کی تحریر جہاں بھی لکھی ہوئی نظر آئے، ہر ایک مخلص مسلمان دل و جان سے اس کی تائید کرتا ہے۔ مسلمان کسی پر ظلم نہیں ڈھاتا، مگر ظالم کے سامنے سرنگوں بھی نہیں ہوتا۔65ء کی جنگ کے دوران صدر ایوب خان نے تمام سیاسی و دینی جماعتوں کو اعتماد میں لیا۔افسوس اس بات کا ہے کہ 65ء کی جنگ میں ہم نے میدان جنگ میں جو کچھ حاصل کیا،بد قسمتی سے اسے معاہدہ تاشقند کی صورت میں برباد کر دیا گیا۔ اس وقت کا بھارتی وزیراعظم لال بہادر شاستری خوشی سے اس قدر پھولا کہ کئی تجزیہ نگاروں نے کہا اسی کے نتیجے میں اس کی موت واقع ہوگئی۔ آج پھر بھارت میں اسلام دشمن اور انسانیت کش ہندو نریندرا مودی وزیراعظم ہے۔ اس کی پوری تاریخ خونخواری پر مبنی ہے۔ یہ ایک بار پھر پاکستان کو اشتعال دلا کر جنگ میں جھونکنا چاہتا ہے۔ اسے سب سے زیادہ جرات اس بات سے ملتی ہے کہ پاکستان کے اندر حالات کی کشیدگی،بدامنی اور دہشت گردی کی وجہ سے پاک فوج داخلی مسائل و معاملات میں مصروف ہوگئی ہے۔ بھارت کو یہ معلوم ہونا چاہیے کہ قوم کے اندر ہزار اختلافی موضوعات ہوں، اگر دشمن نے جنگ چھیڑی تو ساری قوم اسی جذبے سے میدان میں نکلے گی جو 65ء میں پوری دنیا نے دیکھا تھا۔ بھارت پاک چائنہ اقتصادی راہداری کو ناکام بنانے کے لیے ہماری سرحدوں پر یہ ساری خباثتیں اور شرارتیں کر رہا ہے۔ کئی بار ملک کے مختلف مقامات سے ”را” کے ایجنٹ پکڑے گئے ہیں جن کا مقصد اقتصادی راہداری منصوبے کو تباہ کرنا تھا۔ساری قوم کو ایک بار پھر یک جہتی کی ضرورت ہے،افسوس ہے کہ آج بھی سیاستدان انتشار کا شکار ہیں، حکمران خودسری کا مظاہرہ کر رہے ہیں اور اپوزیشن بھی سیاسی پختگی کا مظاہرہ کرنے سے قاصر نظر آتی ہے۔65ء کی جنگ میں جہاں سیاسی جماعتوں کے درمیان مکمل یک جہتی پیدا ہوئی،عوام الناس ملکی دفاع کے لیے ہر خدمت سرانجام دے رہے تھے، وہیں پاکستانی میڈیا بھی مکمل طور پر جہاد کے رنگ میں رنگ گیا تھا۔ میدان جنگ میں اپنی جانیں قربان کرنے والے افسران اور جوان اس فضا سے بہت مطمئن تھے اور ان کے حوصلے کسی محاذ پر پست نہ ہوئے۔ ہر فوجی کو یقین تھا کہ ساری قوم کی حمایت اور دعائیں اس کے ساتھ ہیں۔ آج بھی ضرورت اس بات کی ہے کہ میڈیا ملکی دفاع اور سالمیت کے لیے فضا بنائے۔ یہ دراصل تجدیدِ عہد کا دن ہے جو جہادی جذبوں کو جلا بخشنے کا ذریعہ بنتا ہے۔ شہداء کی یادیں تازہ ہوتی ہیں اور ان کے کارناموں سے بچہ بچہ واقفیت حاصل کرکے دفاع ِ وطن کے لیے اپنے دل میں ولولوں کو تازہ پاتا ہے۔ اس دن پاکستان کے شہیدوں’ جری جوانوں نے اپنی سرحدوں کے بہادر اور غیور پاسبانوں کی فہرست میں اپنا نام رقم کیا۔ ان کا تن، من، دھن دیس پر قربان تھا۔ اب ہر سپاہی ناقابلِ شکست فصیل تھا، جس نے دشمن کی پیش قدمی روک دی۔ ان کی شجاعت کے ناقابلِ یقین کارناموں کی کوئی نظیر پیش نہیں کی جا سکتی۔

Facebook Comments
Share Button