تازہ ترین

Marquee xml rss feed

ایک سال کے دوران پاکستان میں غربت میں اضا�� ن�یں بلک� کمی �وئی 40 لاکھ لوگوں کے غربت کی لکیر سے نیچے چلے جانے کی باتیں بے بنیاد �یں، عالمی بینک نے رپورٹ جاری کر دی-وزیراعظم کا کشمیریوں کے ساتھ اظ�ار یکج�تی م�م جاری رکھنے کا �یصل� مودی اب خو�زد� �ے ک� کر�یو اٹھے گا تو خون ریزی �و گی، مودی کشمیریوں کو محکوم بنانے کے لیے طاقت کا استعمال ... مزید-�ندو مذ�ب کے ت�وار�ولی،دیوالی پر عام تعطیلات،قبل ازوقت تنخوا� ادائیگی کیس ،درخواست قابل سماعت �ونے پر �یصل� مح�وظ-مریم او رنگزیب کی شا�د خاقان عباسی سے ملاقات کی درخواست منظور ، ملاقات کی اجازت دیدی گئی-جج ارشد ملک کے بیان حل�ی میں مجھ پر لگائے گئے الزامات من گھڑت اور بے بنیاد �یں، ناصر بٹ نے جواب �ائی کورٹ میں جمع کرادیا جج ارشد ملک نے میری ان سے ملاقات کی آڈیو وڈیو ... مزید-شا�د خاقان عباسی کو جیل میں س�ولیات �را�م کرنے سے متعلق درخواست پر �یصل� مح�وظ-مولانا �ضل الرحمن مذاکرات کے دروازے بند ن� کریں شیخ رشید پ�لے ج�اں کشمیر کی بات �ور�ی تھی اب مولانا کی بات �ور�ی �ے، ان سے ک�وں گا ی� وقت احتجاج کا ن�یں �ے میڈیاسے گ�تگو-۲ این ای52کی یونین کونسل نمبر 8تمیر اسلام آباد میں کی چئیرمین شپ، راج� عمران خضر ایڈووکیٹ کو ٹکٹ جاری-ا* موجود� سلیکٹڈ حکومت میں اداروں کو متنازع� بنادیا گیا،بلاول بھٹو 4سی پیک پرکام رک گیا �ے،حکومت کومزید وقت دینا ملک کی سالمیت سے کھیلنے کے متراد� �ے، وقت گیا سلیکٹڈ حکومت ... مزید-عدالتوں میں زیرسماعت سرکاری مقدمات کی مؤثر اور مکمل پیروی کریں تاک� ریاست کے م�اد کا بھرپور طریقے سے د�اع کیا جا سکے،ڈپٹی کمشنر حیدرآباد

GB News

کرپشن ملک میں آنے والی سرمایہ کاری میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے،وزیراعظم

Share Button

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ان کی خواہش ہے کہ وہ چینی صدر شی جن پنگ کی مثال پر عمل کرسکیں اور پاکستان میں 500 کرپٹ لوگوں کو جیل میں ڈال دیں۔بیجنگ میں عالمی تجارت کے فروغ کے لیے قائم چائنہ کونسل میں پاکستان اور چین کے درمیان تجارت اور سرمایہ کاری کے مواقع پر منعقدہ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے چین کے 70 ویں قومی دن پر وہاں کے عوام کو مبارک بات پیش کی۔انہوں نے کہا کہ ہم نے دیکھا کہ چین نے کس طرح جدوجہد کی اور اپنی غلطیوں سے سیکھا اور آج چین دنیا کی تیزی سے ترقی کرتی معیشت میں سے ایک ہے۔عمران خان کا کہنا تھا کہ چین نے ایک وقت میں پاکستان سے سیکھا تھا لیکن اب وقت ہے کہ پاکستان، چین سے سیکھے، ذاتی طور پر مجھے جس چیز نے چین سے متاثر کیا وہ 30 سال میں 70 کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالنا تھا، یہ انسانی تاریخ میں کبھی نہیں ہوا۔بات کو جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کو سب سے اہم چیز جو چین سے سیکھنے کی ضرورت ہے وہ یہ کہ کس طرح انہوں نے لوگوں کو غربت سے نکالا اور جو میں اب تک سمجھا ہوں وہ یہ ہے کہ چین نے کاروبار کو دولت بنانے کی اجازت دی، انہوں نے اپنے خصوصی اقتصادی زونز، برآمدات پر توجہ دی، باہر سے سرمایہ کاری لائے اور دولت بنائی جسے معاشرے کے غریب طبقے پر خرچ کیا جبکہ ہم بھی پاکستان میں اسی طریقے پر عمل کرنا چاہتے ہیں۔اپنے خطاب میں عمران خان کا کہنا تھا کہ چین سے میں نے دوسری چیز جو سیکھی وہ بدعنوانی سے نمٹنا تھا، صدر شی جن پنگ کی سب سے بڑی جنگ کرپشن کے خلاف ہے، گزشتہ 5 برسوں میں انہوں نے وزارتوں کی سطح کے تقریباً 400 لوگوں کو کرپشن پر سزا دی اور جیلوں میں ڈالا، جبکہ میں نے اخبارات میں پڑھا کہ ایک چینی میئر کے گھر سے کئی ٹن سونا برآمد ہوا اور 5 روز میں اس کو سزا دی گئی۔ساتھ ہی عمران خان نے کہا کہ’کاش میں صدر شی جن پنگ کی مثال پر عمل کرپاتا اور پاکستان میں500 کرپٹ لوگوں کو جیل میں ڈال دیتا’، تاہم وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان میں یہ عمل ‘بہت پیچیدہ’ ہے۔انہوں نے کہا کہ نہ صرف پاکستان بلکہ دیگر ترقی پذیر ممالک کو اس سے جو چیز سیکھنے کی ضرورت ہے وہ یہ کہ کرپشن سرمایہ کاری کو روک دیتی ہے، کرپشن ملک میں آنے والی سرمایہ کاری میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔دوران خطاب وزیراعظم نے کہا کہ جب سے ان کی حکومت اقتدار میں آئی انہوں نے پاکستان میں سرمایہ کاری کو آسان بنانے کے لیے فیصلہ کیا اور ‘ہم چاہتے ہیں کہ یہ لوگ پاکستان میں منافع کمائیں’۔انہوں نے کہا کہ ‘وزیراعظم آفس ہمارے ملک میں سرمایہ کاری کرنے والوں کو مواقع فراہم کر رہا ہے، کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے کا عمل وزیراعظم کے دفتر سے جاری ہے اور اب ہم نے سی پیک اتھارٹی قائم کی ہے کیونکہ ہمیں سی پیک منصوبوں میں مسائل تھے جس کی وجہ اس کا مختلف وزارتوں کے تحت ہونا تھا’۔تاہم ان کا کہنا تھا کہ ‘اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ایک اتھارٹی ہوگی جو سی پیک کے تمام مسائل کو حل کرے گی اور یہ اتھارٹی وزیراعظم آفس میں ہوگی تاکہ میرا دفترپاکستان میں سرمایہ کاری کرنے والوں کے لیے آسانیاں پیدا کرسکے’۔اس موقع پر وزیراعظم نے بتایا کہ پاکستان نے گوادر فری زون کے فیز ون کی تکمل سمیت مختلف اقدامات اٹھائے ہیں۔ساتھ ہی عمران خان نے کہا کہ پاکستان میں اس کے اسٹریٹجک مقام، اس کی نوجوان آبادی اور ملک میں معاشی بحالی خاص طور پر کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے سمیت خصوصی اقتصادی زونز (ایس ای زیز) کے ذریعے صنعتی حلقوں میں سرمایہ کاری کے لیے بہت وجوہات ہیں۔عمران خان نے اپنے خطاب میں ان شعبوں کے بھی نام لیے اور بتایا کہ ٹیکسٹائل، مینوفکچرنگ، آئی ٹی اور فنانشل سروسز، فزیکل اینڈ ٹینکالوجکل لاجسٹکس، سیاحت اور مہمان نوازی، فوڈ پراسیسنگ اور زراعت، ہاؤسنگ سمیت تیل اور گیس کے شعبوں میں پاکستان چینی سرمایہ کاری چاہتا ہے۔وزیراعظم نے زور دیا گیا کہ یہ وقت ہے کہ پاکستان میں سرمایہ کاری کی جائے۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم آفس ہمارے ملک میں بڑے سرمایہ کاروں کے ساتھ معاملات طے کرے گا اور سی پیک بھی وزیراعظم آفس سے ہی دوبارہ دیکھا جائے گا۔بات کو آگے بڑھاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ‘یہ پاکستان میں ایک بہترین وقت ہے کیونکہ ہم نے اپنے ملک کو کاروبار کے لیے کھول دیا ہے، لہٰذا یہ لوگوں کے لیے بہترین موقع ہے کہ وہ آئیں اور سرمایہ کاری کریں کیونکہ ہم نے پاکستان میں ذہنیت کو تبدیل کیا ہے اور ہم چاہتے ہیں کہ کاروبار آئے اور رقم بنے’۔علاوہ ازیں اس خطاب کے بعد وزیراعظم نے بیجنگ میں گریٹ ہال آف پیپلز کا دورہ کیا، جہاں ان کا استقبال چینی ہم منصب نے کیا۔ ریڈیو پاکستان کے مطابق گریٹ ہال میں آمد کے موقع پر وزیراعظم کو گارڈ آف آنر پیش کیا گیا جبکہ افتتاحی تقریب میں پاکستان اور چین دونوں ممالک کے قومی ترانے بجائے گئے۔اس موقع پر چینی وزیراعظم نے عمران خان کی قیادت میں موجود پاکستانی وفد سے اراکین کا تعارف کروایا،دونوں رہنمائوں کے درمیان ملاقات میں دوطرفہ تعلقات کے فروغ ،مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے کئے گئے اقدامات سے پیدا ہونے والی صورتحال،ایف اے ٹی ایف کے حوالے سے معاملات ،افغان امن عمل اور دیگر امورپر تبادلہ خیال کیا گیا،چینی وزیراعظم کا اس موقع پر کہنا تھا کہ پاکستان کے ساتھ تعلقات چین کی خارجہ پالیسی کا بنیادی نکتہ ہے دونوں ممالک ہر قسم کے حالات میں ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے رہے ہیں اور آئندہ بھی کھڑے رہیں گے انھوں نے کہا کہ کشمیر کا تنازع پرامن طور پر اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روشنی میں حل ہونا چاہئے،چینی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خاتمے کے لئے بہت قربانیاں دی ہیں اور دنیا کو ان قربانیوں کو تسلیم کرنا چاہئے،ملاقات میں مختلف شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے پر اتفاق کیا گیا۔ملاقات کے بعدجاری اعلامیہ کے مطابق چینی وزیراعظم نے سی پیک کوآگے بڑھانے پرپاکستان کاشکریہ ادا کیا۔چینی وزیراعظم نے کہا کہ سی پیک کادوسرامرحلہ پاکستان کے لئے اقتصادی مواقع کھولے گا۔وزیراعظم عمرانخان کااس موقع پرکہناتھا کہ سی پیک کی تکمیل حکومت پاکستان کی اولین ترجیح ہے۔وزیراعظم نیچینی ہم منصب کومقبوضہ کشمیر کی صورت حال سے بھی آگاہ کیا۔قبل ازیں وزیراعظم عمران خان سے اورینٹ ہولڈنگز گروپ کے چیئرمین آف بورڈ، چائنہ گیژوبہ گروپ کے چیئرمین اور لانگ مارچ ٹائرکمپنی کے سی ای او نے ملاقات کی ،ملاقات میں چائنہ گیژوبہ گروپ نے پاکستان میں توانائی کے شعبے میں تعاون پر آمادگی کا اظہار کیا،اورینٹ ہولڈنگز گروپ چین کا بڑا انویسٹمنٹ گروپ ہے، گروپ انفراسٹرکچر، تعمیرات، رئیل اسٹیٹ اور کیمیکل فائیبر کے شعبوں میں بزنس کر رہا ہے۔وزیراعظم سے لانگ مارچ ٹائرکمپنی کے سی ای او کی ملاقات ہوئی ، وزیراعظم عمران خان نے چائنہ گیژوبہ گروپ کے چئیرمین ژی ژیانگ سے بھی ملاقات کی ، جس میں دونوں ممالک کے درمیان توانائی کے شعبوں میں تعاون بڑھانے پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔وزیراعظم عمران خان سے ملاقات میں چائنہ گیژوبہ گروپ نے پاکستان میں توانائی کے شعبے میں تعاون پر آمادگی کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان میں توانائی کے نئے ذخائر کی دریافت پر کام کرنے کی خواہش کا اظہار کیا۔

Facebook Comments
Share Button