تازہ ترین

Marquee xml rss feed

من� کی بجائے ناکمیں دانت نکل آیا ی� انوکھا واقع� چین میں پیش آیا ج�اں آپریشن کرکے ناک سے دانت کو نکال دیاگیا-سپیشل ایجنٹ بلی جو ساتھیوں کو �رار کروانے میں ما�ر �ے 6سال� بلی راستے میں آنے والی �ر رکاوٹ کو آسانی سے پار کر جاتی-آپ کے �نگر پرنٹ اب منشیات سے متعلق بھی بتائیں گے منشیات کی روک تھام کے لیے سائنسدانوں نے نیا �ارمولا ایجاد کرلیا-پیٹرول کی قیمت میں اضا�ے کے خلا� احتجاج میں40 لوگ جاں بحق ایران میں احتجاج کی صورت حال دن ب� دن بگڑتی جا ر�ی �ے-ٹک ٹاک نے امریک� کو چاروں شانے چت کر ڈالا تحقیقاتی کمپنی نے ٹک ٹاک پر امریک� کے الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا-ب�ادر شخص نے مگرمچھ کو اندھا کر کے خود کو موت کے من� سے نکال لیا آخری لمحے تک مگرمچھ کامقابل� کر کے زندگی جیتنے والے شخص نے ب�ادری کی مثال قائم کر دی-موٹروے پر بس حادثے کا شکار �و گئی 3 خواتین جاں بحق ،10ا�راد زخمی

GB News

چیف کورٹ گلگت بلتستان نے ایف آئی اے کو پرائیویٹ فریقین کے درمیان دیوانی مقدمات و تنازعات میں مداخلت اور کارروائی کرنے سے روک دیا

Share Button

گلگت(پ ر)چیف کورٹ گلگت بلتستان نے ایف آئی اے کو پرائیویٹ فریقین کے درمیان دیوانی مقدمات و تنازعات میں مداخلت اور کارروائی کرنے سے روک دیا۔جسٹس علی بیگ نے چیف کورٹ میں زیر سماعت مقدمہ میں محمد رضا اور یاسمین اسرار کی پٹیشن پر فیصلہ دیتے ہوئے ایف آئی اے کو مذکورہ بالا مدعیان کے خلاف جاری کارروائی کو ختم کرنے کا حکم دیدیا۔ایف آئی اے نے اسرار حسین خان کی مدعیان کے خلاف ملی بھگت سے جعلی مختار نامے کے ذریعے نجی لین دین کرنے کے الزام پر مشتمل درخواست پر کارروائی کر کے مقدمہ قائم کیا تھا۔مدعیان نے اس کارروائی کو غیر قانونی قرار دیکر فاضل عدالت میں پٹیشن دائر کر دی تھی جسٹس علی بیگ نے سنگل بینچ میں مقدمے کی سماعت کے دوران ریمارکس دیتے ہوے کہا کہ پرائیویٹ پارٹیوں کے مابین دیوانی مقدمات تنازعات میںایف آئی اے کو مداخلت کا کوئی اختیار نہیں ہے۔ دیوانی مقدمات ، تنازعات میں پرائیویٹ فریقین کے مابین فراڈ اور جعلساذی کو ثابت کرنے کے لیے ٹرائل کورٹ (سول عدالت) موجود ہے۔پرائیوٹ فریقین کے مابین پیدا دیوانی مقدمات میں ایف آئی اے کو مداخلت اور کارروائی کا کوئی اختیار حاصل نہیں ہے عدالت نے مدعیان کے خلاف ایف آئی اے کی کارروائی کو ختم کرنے کا حکم دیکر 5 صفحات پر مشتمل فیصلہ جاری کردیا

Facebook Comments
Share Button