تازہ ترین

Marquee xml rss feed

من� کی بجائے ناکمیں دانت نکل آیا ی� انوکھا واقع� چین میں پیش آیا ج�اں آپریشن کرکے ناک سے دانت کو نکال دیاگیا-سپیشل ایجنٹ بلی جو ساتھیوں کو �رار کروانے میں ما�ر �ے 6سال� بلی راستے میں آنے والی �ر رکاوٹ کو آسانی سے پار کر جاتی-آپ کے �نگر پرنٹ اب منشیات سے متعلق بھی بتائیں گے منشیات کی روک تھام کے لیے سائنسدانوں نے نیا �ارمولا ایجاد کرلیا-پیٹرول کی قیمت میں اضا�ے کے خلا� احتجاج میں40 لوگ جاں بحق ایران میں احتجاج کی صورت حال دن ب� دن بگڑتی جا ر�ی �ے-ٹک ٹاک نے امریک� کو چاروں شانے چت کر ڈالا تحقیقاتی کمپنی نے ٹک ٹاک پر امریک� کے الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا-ب�ادر شخص نے مگرمچھ کو اندھا کر کے خود کو موت کے من� سے نکال لیا آخری لمحے تک مگرمچھ کامقابل� کر کے زندگی جیتنے والے شخص نے ب�ادری کی مثال قائم کر دی-موٹروے پر بس حادثے کا شکار �و گئی 3 خواتین جاں بحق ،10ا�راد زخمی

GB News

گلگت بلتستان اسمبلی کے اجلاس کا ایجنڈا تبدیل کرنے پروزراء کااحتجاج

Share Button

گلگت(خصوصی رپورٹ)گلگت بلتستان اسمبلی کے اجلاس کا ایجنڈا تبدیل کرنے پر صوبائی وزیر ایکسائز حیدرخان ،صوبائی وزیر بلدیات فرمان علی اورتحریک انصاف کے رکن اسمبلی راجہ جہانزیب خان کا احتجاج سپیکر فدامحمد ناشاد نے لاعلمی ظاہرکردی جمعہ کے روز قانون سازاسمبلی کا اجلاس شروع ہوا تو تحریک انصاف کے راجہ جہانزیب خان نے کہاکہ پراسکیوشن ڈیپارٹمنٹ کے ملازمین کو مستقل کرنے کیلئے ہم نے ایکٹ بنایا تھا اور اسے آج کے اجلاس میں پیش ہونا تھا جب ہم اجلاس میں شرکت کیلئے ایوان میں آئے تو فولڈر میں جوایجنڈا تھا اس میں پراسکیوشن ڈیپارٹمنٹ کا ایکٹ بھی شامل تھامگر اب اس ایجنڈے کو اٹھا کر کوئی دوسرا ایجنڈا رکھ دیاگیا ہے وزیر قانون اورنگزیب ایڈووکیٹ نے کہا کہ پراسکیوشن ڈیپارٹمنٹ کے ایکٹ کی تیاری کے وقت میں نے اختلافی نوٹ لکھا ہے اگر کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کرنا ہے تو تمام سرکاری اداروں میں موجود کنٹریکٹ ملازمین کو مستقل کریںصرف پراسکویشن ڈیپارٹمنٹ کے ملازمین کو مستقل کرنا درست نہیں ہے وزیر بلدیات فرمان علی نے کہا کہ ممبران اسمبلی کو ایجنڈا فراہم کرنے کے بعد اسے تبدیل کر کے دوسرا ایجنڈا تھمانا کوئی درست بات نہیں ہے انہوںنے کہا کہ گلگت بلتستان کے تمام سرکاری اداروں میں کنٹریکٹ پر کام کرنے والے تمام ملازمین کو مستقل کیا جائے صوبائی وزیرحیدر خان نے کہا کہ وفاقی حکومت چار نئے اضلاع کے حوالے سے گورننس آرڈر میں ترمیم میں تاخیری حربے استعمال کررہی ہے اس حوالے سے ہم ایک قرارداد لائے تھے اور اجلاس کے آغاز سے قبل ہمیں جو ایجنڈا فراہم کیاگیا تھا اس میں یہ قرارداد بھی شامل تھی مگر اب اس ایجنڈے کو اٹھا کرہمیں جو نیا ایجنڈا دیاگیا ہے اس میں یہ قرارداد شامل نہیں ہے اس لئے اس قرارداد کو دوبارہ ایجنڈے میں شامل کیا جائے انہوںنے کہا کہ گلگت بلتستان حکومت نے چار نئے اضلاع کی منظوری دے کر نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے اب گورننس آرڈر میں چھوٹی سی ترمیم کی ضرورت ہے اوردس اضلاع کی جگہ چودہ اضلاع لکھنا ہے مگر وفاقی حکومت اس میں تاخیری حربے استعمال کررہی ہے وفاقی حکومت کو احساس دلانے کیلئے ایک قرارداد کی منظوری ضروری ہے اس موقع پر سپیکر فدا محمد ناشاد نے کہا کہ میرے پاس جوایجنڈا ہے اس میں نہ تو پراسکیوشن ڈیپارٹمنٹ کا ایکٹ شامل ہے اور نہ ہی کوئی قرارداد شامل ہے اور اب ہم ایجنڈے کو تبدیل بھی نہیں کرسکتے ہیں انہوںنے صوبائی وزیر حیدر خان کو ہدایت کی کہ وہ اسمبلی کے آئندہ اجلاس میں قرارداد پیش کریں ہم اسے بھی منظور کریں گے البتہ ہم اپنی طرف سے چار نئے اضلاع کے حوالے سے وفاق کو تحریری خط لکھیںگے۔

Facebook Comments
Share Button