تازہ ترین

GB News

بلتستان کے عوام پرامن لوگ ہیں، قانون کو ہاتھ میں لینے یا دہشتگردی کا دفعہ لگانے کا ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا ، کیپٹن (ر) محمد شفیع خان

Share Button

گلگت(نمائندہ خصوصی) اپوزیشن لیڈر کیپٹن (ر) محمد شفیع خان، مجلس وحدت المسلمین کے ترجمان الیاس صدیقی ، سیکریٹری سیاسیات ایم ڈبلیو ایم غلام عباس نے اپنے مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ بلتستان میں گھر کی آتشزدگی کے واقعے کے بعد جن لوگوں نے گھروں کو مزید جلنے سے بچایا ان پر انسداد دہشتگردی کے تحت مقدمات درج کرنا انتہائی افسوس ناک عمل ہے اس سے بلتستان کے عوام میں غلط تاثر پیدا ہوگا انسداد دہشتگردی کا دفعہ جس نوعیت کا ہے وہاں پر استعمال کیا جائے سول ٹرائل کیس میں بھی اے ٹی لگانے سے مزید محرومیوں میں اضافہ ہوگا۔ کے پی این سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بلتستان کے عوام پرامن لوگ ہیں قانون کو ہاتھ میں لینے یا دہشتگردی کا دفعہ لگانے کا ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا ہے اس کیس کو بڑھایا گیا ہے اور بے گناہ افراد پر اے ٹی اے کے تحت مقدمہ درج کرکے بند کردیا گیا ہے ایسے عمل سے بلتستان کے عوام کو مزید اکسانے کے مترادف ہے کسی ایک شخص نے ریسکیو 1122 کے ملازم سمجھ کر اسسٹنٹ کمشنر سے تلخ کلامی کی جس پر تشدد کا نام دیگر درجنوں افراد کو گرفتار کیا گیا اور ان پر اے ٹی اے کا مقدمہ قائم کیا گیا ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ مقامی لوگ اور اسسٹنٹ کمشنر مل بیٹھ کر اس مسئلے کو حل کرتے اور اسسٹنٹ کمشنر کوئی حکمران نہیں ہے بلکہ عوام کا خادم ہے عوام کی خدمت کے لئے تعینات کیا گیا ہے اس طرح ایک اسسٹنٹ کمشنر کو وائے سرائے کرکے پیش کرکے بلتستان کے عوام کے جذبات کو ابھارا جارہا ہے جو کہ نیک شگون نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ جن لوگوں کو گرفتار کیا ہے ان لوگوں نے آگ بجھانے کے ساتھ متصل میں جتنے بھی گھرانے تھے ان کو جلانے سے بچایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح اسسٹنٹ کمشنر کا ساتھ دیکر اے ٹی اے لگایا گیا ہے اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو آئندہ کوئی بھی سائل سرکاری دفاتر نہیں جاسکے گا کیونکہ سرکاری دفاتر میں عوامی ایشوز پر بات ہوتی ہے اس روئیے کو ختم کیا جائے اور جن لوگوں پر اے ٹی اے لگایا گیا ہے ان سے اے ٹی اے کی دفعات کو ختم کی جائیں اور مقامی لوگ آپس میں بیٹھ کر اس مسئلے کو حل کریں تاکہ اس سے بلتستان میں مزید اچھا ماحول پیدا ہوگا۔

Facebook Comments
Share Button