تازہ ترین

GB News

ضلع غذر، استور ، شگر اور کھرمنگ میں ریسکیو1122 کے قیام کیلئے اقدامات میں تیزی لائی جائیں،وزیر اعلیٰ

Share Button

گلگت(پ ر)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ ضلع غذر، استور ، شگر اور کھرمنگ میں ریسکیو1122 کے قیام کیلئے اقدامات میں تیزی لائی جائیں۔ جن آسامیوں پر سٹے نہیں ہے ان پر تعیناتیاں عمل میں لائی جائے۔ شگر اور کھرمنگ میں ریسکیو1122کیلئے درکار سٹاف کیلئے پی سی ون فوری طور پر تیار کرکے متعلقہ فورم میں پیش کیاجائے۔وزیراعلیٰ حفیظ الرحمن کی زیرصدارت ایمرجنسی کونسل کااجلاس ہوا اس موقع پروزیراعلیٰ نے کہا کہ ریسکیو1122 کے این آئی ایس میں موجود اسامیوں سکیل 1 تا 16پر ریسکیو1122 ملازمین کی مستقلی کیلئے صوبائی وزیر قانون اورنگزیب ایڈووکیٹ، ممبر اسمبلی عمران ندیم ، ڈی جی گلگت بلتستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی اور ریسکیو 1122 کے نمائندہ پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو کونسل کے آئندہ اجلاس میں اپنی سفارشات منظوری کیلئے پیش کرے گی۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے ریسکیو1122 کے ملازمین کی تنخواہوں کی ادائیگی کو یقینی بنانے اور مسائل حل کرنے کے احکامات دیئے۔ حافظ حفیظ الرحمن نے جگلوٹ، دنیور اور نومل میں ریسکیو1122 کی برانچز قائم کرنے کے احکامات دیئے اورمحکمہ صحت کو ہدایت کی ہے کہ پرائیویٹ ایمبولنس سروسز کے ساتھ باقاعدہ ایم او یو کیا جائے۔ محکمہ صحت اور سیاحت کے متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ آئندہ کابینہ اجلاس میں صوبے میں آنے والے سیاحوں کی انشورنس کے حوالے سے بل تیار کرکے منظوری کیلئے پیش کیاجائے۔ وزیر اعلیٰ نے ڈی جی گلگت بلتستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی کو ہدایت کی ہے کہ بین الاضلاع شاہراہوں کی بحالی کو یقینی بنائی جائے۔ تمام ضلعی ہیڈکوارٹرز میں مشینری کو الرٹ رکھا جائے۔ سابق وفاقی حکومت کی جانب سے ایک ارب کی ہیوی مشینری گلگت بلتستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی کو فراہم کی گئی ہے جو تمام اضلاع میں موجود ہے۔ سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف نے گلگت بلتستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی کے نان لیپس ایبل انڈومنٹ فنڈ کیلئے سالانہ وفاقی حکومت کی جانب سے 15 کروڑ روپے گرانٹ فراہم کررہے تھے اور صوبائی حکومت 5 ارب کی گرانٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ انڈومنٹ فنڈ کیلئے دے رہی تھی۔ موجودہ وفاقی حکومت نے اسے ختم کردیا ہے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ گلگت بلتستان ڈیزاسٹرمینجمنٹ اتھارٹی انڈومنٹ فنڈ کی رقم کو ایک ارب تک پہنچانے کیلئے وفاقی حکومت کو خصوصی مراسلہ لکھا جائے۔ادھروزیراعلیٰ کومحکمہ پولیس کی جانب سے سپیشل پروٹیکشن یونٹ کے حوالے سے بریفنگ دی گئی اس موقع پروزیر اعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن نے کہا ہے کہ سپیشل پروٹیکشن یونٹ (SPU) اہمیت کا حامل منصوبہ ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی سابق وفاقی حکومت کی جانب سے پونے 3 ارب کا منصوبہ منظور کیا گیا اور تقریباً ایک ارب کی رقم بھی فراہم کی گئی۔ سپیشل پروٹیکشن یونٹ میں سٹاف کی بھرتیاں عمل میں لائی گئی۔ اس منصوبے کے تحت صوبے میں جدید کمیونی کیشن نظام کی توسیع، نائٹ ویژن کیمروں کی تنصیب اور دیگر ضروری آلات کی خریداری عمل میں لانی تھی۔ محکمہ پولیس کی جانب سے ری پروپیشن کیلئے متعلقہ وزارت کو بجھوایا گیا ہے لیکن جون سے اب تک اس کا فیصلہ نہ ہونے کی وجہ سے منصوبہ تاخیر کا شکار ہورہاہے۔ وزیر اعلیٰ نے چیف سیکریٹری گلگت بلتستان کو فوری طور پر متعلقہ وزارت سے رابطہ کرکے سپیشل پروٹیکشن یونٹ سے متعلق مسئلے کو حل کرنے اور منصوبے کو ہنگامی بنیادوں پر آگے بڑھانے کے احکامات دیئے۔ سپیشل پروٹیکشن یونٹ کے تحت تمام ضلعی ہیڈکوارٹرز میں کنٹرول رومز کا قیام عمل میں لانا ہے۔ وزیر اعلیٰ نے محکمہ پولیس کے متعلقہ آفیسران کو ہدایت کی ہے کہ اپریل تک سپیشل پروٹیکشن یونٹ کے تحت ضروری آلات کی خریداری کے عمل کو مکمل کیا جائے اور ان کی تنصیب عمل میں لائی جائے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے قائم مقام آئی جی پی گلگت بلتستان کو ہدایت کی ہے کہ صوبے کے تھانوں کو بہتر بنانے کیلئے جامعہ پلان تیار کیا جائے۔ ٹریفک کے نظام کو بہتر بنانے کیلئے گلگت میں ٹریفک کیلئے الگ ایس پی کی تعیناتی عمل میں لائی جائے۔ صوبے میں ٹریفک کے چالان کا اختیار پولیس کو دینے سے ریونیو میں اضافہ ہوا ہے لیکن نمایاں تبدیلی نظر نہیں آرہی ہے۔ ٹریفک کے نظام کو مزید بہتر بنانے کیلئے اقدامات کئے جائیں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے صوبے میں تمام سیاسی شخصیات کیلئے گاڈر آف آنرز ختم کرنے کے احکامات پر سختی سے عملدرآمد کو یقینی بنانے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ تمام دفاتر سے سلامی گارڈز کی نفری کو ختم کیا جائے ۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے صوبائی ہیڈکوارٹر ہسپتال اور ریجنل ہیڈکوارٹر ہسپتال (سٹی ہسپتال) میں سیکورٹی کے نظام کو بہتر بنانے کے احکامات دیئے۔ وزیر اعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ صوبے میں گارڈ آف آنر صرف نمایاں پوزیشن حاصل کرنے والے اور مختلف شعبوں میں نمایاں کارکردگی دکھانے والوں کو دیا جائے۔

Facebook Comments
Share Button