تازہ ترین

GB News

ریکارڈ قرضہ، امریکی معیشت کی چولیں ہل گئیں

Share Button

امریکا میں ریاست کے ذمے واجب الادا قرضوں کی صورت حال کبھی اتنی زیادہ منفی نہیں تھی جتنی آج۔ امریکی کانگریس کے بجٹ آفس کے مطابق رواں دہائی میں امریکا اتنا مقروض ہو جائے گا، جتنا وہ گزشتہ پچھہتر برسوں میں کبھی نہیں تھا۔امریکا دنیا کی سب سے بڑی معیشت ہے اور ملک کی اقتصادی کارکردگی بھی کافی متاثر کن ہے۔ اس کے باوجود موجودہ مالی سال کے دوران امریکا کے سالانہ بجٹ میں خسارہ ایک ٹریلین ڈالر یا 1000بلین سے بھی زیادہ رہے گا۔کانگریس بجٹ آفس (سی بی او)نے اپنے تازہ ترین مالیاتی اندازوں میں یہ بھی کہا کہ ریاست کے ذمے واجب الادا بے تحاشا قرضوں اور ان میں مسلسل اضافے کی موجودہ صورت حال میں جلد کوئی بہتری ہوتی بھی دکھائی نہیں دیتی۔بجٹ آفس کے مالیاتی ماہرین نے کہا ہے کہ رواں عشرے کے دوران امریکی بجٹ کا خسارہ اوسطا 1.3ٹریلین ڈالر تک پہنچ جائے گا۔ یہ پیش رفت، جو ایک طویل عرصے سے جاری ہے، اس لیے بھی بہت پریشان کن ہے کہ امریکی ریاست کے ذمے قرضوں کی موجودہ مجموعی مالیت اس وقت مجموعی ملکی پیداوار کے 81فیصد کے برابر ہے، جو 2030 تک مزید بڑھ کر 98 فیصد تک پہنچ جائے گی۔ساتھ ہی سی بی او کے مالیاتی ماہرین نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکی ریاست کے ذمے قرضوں کی یہ مجموعی مالیت اتنی زیادہ ہے جو گزشتہ تین چوتھائی صدی کے دوران کبھی دیکھنے میں نہیں آئی تھی۔ ان ماہرین کے بقول رواں دہائی کے دوران ہی یہ ریاستی قرضے 1946 کے بعد سے آج تک کی اپنی بلند ترین سطح پر پہنچ جائیں گے

Facebook Comments
Share Button