تازہ ترین

GB News

آرمی چیف گلگت اور سکردو میں کرونا لیبارٹری کے فوری قیام کےلئے کردار ادا کریں، وزیر اعلیٰ

Share Button

وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے وزیر اعظم پاکستان کے زیر صدارت نیشنل کوآرڈینشن کمیٹی کے اجلاس میں ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔ اس موقع پر وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ آبادی کے تناسب سے گلگت بلتستان میں کرونا وائرس کے مریضوں کی تعدادزیادہ ہے۔ ابھی تک 633 کورونا وائرس کے ٹیسٹ کئے جاچکے ہیں جن میں 91 کے نتائج مثبت آئے ہیں جبکہ 332 کے نتائج کے منتظر ہیں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ کروناوائرس کی وجہ سے درپیش موجودہ صورتحال سے نمٹنے میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور ڈی جی این ڈی ایم اے جنرل افضل کا کردار انتہائی مثبت اور قابل تحسین ہے۔ گلگت بلتستان میں 24 گھنٹے میں صرف 15 ٹیسٹ کئے جاسکتے ہیں جس کی وجہ سے بہت سے مشکوک کیسز کے ٹیسٹ نہیں کرپا رہے ہیں۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے گزارش ہے کہ فوری طور پر سی ایم ایچ گلگت اور سی ایم ایچ سکردو میں کورونا وائرس ٹیسٹ لیبارٹری قائم کرنے کےلئے اقدامات کرےں تاکہ صوبے میں کورونا وائرس کے ٹیسٹ کی استعداد کار میں اضافہ ہو۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ کراچی کی طرز پر گلگت آغا خان میڈیکل سنٹر میں بھی کورونا وائرس کے ٹیسٹ کےلئے لیبارٹری قائم کی جائے یا آغا خان میڈیکل سنٹر کورونا وائرس کے مشکوک مریضوں کا نمونے آغاخان ہسپتال کراچی بجھوائے جہاں پر ٹیسٹ کیا جائے اور نتائج بھجوائے جائیں۔ این آئی ایچ میں کورونا وائرس کے ٹیسٹ کےلئے ملک بھر سے نمونے بھجوائے جارہے ہیں جس کی وجہ سے گلگت بلتستان بجھوائے گئے نمونے کے نتائج میں تاخیر ہورہی ہے۔وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ صوبے کے جن علاقوں میں کنٹیکٹ کورونا وائرس کے کیسز سامنے آئے ہیں ان علاقوں میں ریڈ زون قرار دیا گیا ہے اور ان علاقوں میں مکمل لاک ڈاﺅن کیا جاچکا ہے۔ صوبے سے کورونا وائرس سے نمٹنے کےلئے 300 ملین کی ڈیمانڈ وفاق کو بجھوائی گئی ہے۔این ڈی ایم اے ہنگامی بنیادوںپر ڈیمانڈ کو مدنظر رکھتے ہوئے فنڈز ریلیز کرے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ صوبے میں فوڈ سیکورٹی کو یقینی بنانے کےلئے اقدامات کئے گئے ہیں۔ وفاقی حکومت سپلائی لائن کو بحال رکھنے کےلئے اقدامات کرے۔ صوبے کے ریڈ زون میں مستحق 24 ہزار گھرانوں میں 12 کروڑ کی لاگت سے راشن تقسیم کررہے ہیں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ موجودہ صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے صوبے میں یوٹیلٹی سٹورز کی تعداد میں اضافہ کیا جائے اور یوٹیلٹی سٹورز میں تمام اشیاءخوردنوں کی سپلائی کو یقینی بنایا جائے۔ صوبے میں اس وقت صرف 9 وینٹی لیٹرز موجود ہیں۔ موجودہ صورتحال کے پیش نظر 200 وینٹی لیٹرز کی فوری فراہمی کےلئے اقدامات کئے جائیں۔ 2000 پی سی آر کی ڈیمانڈ بجھوائی گئی ہے جس کو جلد از جلد فراہم کیا جائے۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ وفاقی حکومت کی جانب سے مستحق اور نادار افراد کےلئے اعلان کئے جانے والے پیکیج میں گلگت بلتستا ن کو بھی شامل کیا جائے اور 6 کروڑ نادار اور مستحق خاندانوں کو 3 ہزار روپے وظیفہ دینے کی سکیم میں بھی گلگت بلتستان کو شامل کیا جائے۔ اجلاس میں وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن کو وزیر اعظم پاکستان اور عسکری قیادت کی جانب سے یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ گلگت اور سکردو سی ایم ایچ میں بہت جلد کورونا وائرس ٹیسٹ لیبارٹری کا قیام عمل میں لایا جائے گا اور کورونا وائرس سے نمٹنے کےلئے ضروری طبی آلات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔ دوسری جانب وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کورونا وائرس سے بچاﺅ کے حوالے سے منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گلگت اور سکردو سی ایم ایچ ہسپتالوں میں کورونا وائرس کے ٹیسٹ کےلئے لیبارٹری قائم ہونے کے بعد باآسانی تمام مشتبہ افراد کے کورونا وائرس ٹیسٹ کئے جاسکےں گے۔ موجودہ صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے چھلمس داس پولی ٹیکنیکل انسٹیٹیوٹ میں کورونا ہسپتال (COVID 9 HOSPITAL) قائم کیا جارہاہے۔ کورونا وائرس کے تمام مریضوں کا علاج کورونا ہسپتال میں کیا جائے گا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کہا کہ تمام متعلقہ محکمے ہنگامی بنیادوں پر کورونا ہسپتال میں درکار سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانے کےلئے اقدامات کرےں۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے کورونا ہسپتال کے نظم و ضبط اور کورونا وائرس کے مریضوں کے حوالے سے جوائنٹ کمیٹی بنائی ہے جس میں محکمہ صحت، انتظامیہ اور آغا خان میڈیکل سنٹر کے نمائندے شامل ہوں گے۔ کورونا وائرس کے مریضوں کے علاج کےلئے درکار مشینری اور سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔ وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمن نے صوبائی سیکریٹری صحت کوہدایت کی ہے کہ ریٹائرڈ ڈاکٹرز، پیرا میڈیکل سٹاف اور تربیت یافتہ پیرامیڈیکل سٹاف کے خدمات حاصل کرنے کےلئے فوری طور پر اقدامات کئے جائیں۔

Facebook Comments
Share Button