تازہ ترین

GB News

کراچی: پی آئی اے کاطیارہ لینڈنگ سے قبل گرکرتباہ, 96 افراد جاں بحق

Share Button

کراچی (آئی این پی،آن لائن،مانیٹرنگ ڈیسک) لاہور سے کراچی جانیوالا پی آئی اے کا طیارہ کراچی ایئرپورٹ کے قریب آبادی کے اوپر گرکر تباہ ہو گیاحادثے کے نتیجے میں96افراد جاں بحق ہوگئے 73 لاشیں ملبے سے نکال کر ہسپتال منتقل کردی گئی تھیں مرنے والوں میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں جبکہ آخری اطلاعات تک ریسکیو آپریشن جاری تھا طیارے میں نجی ٹی وی چینل کے ڈائریکٹر نیوزبھی سوار تھے ،وزیر ہوابازی غلام سرورخان نے 90سے زائد افراد کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کردی ہے بدقسمت طیارے میں91مسافر اور عملے کے 7ارکان سوار تھے،طیارہ گرنے پر سول ایوی ایشن کی جانب سے ایمرجنسی نافذ کردی گئی ، آرمی کوئیک رسپارنس فورس،رینجرز طیارہ گرنیکی جگہ پہنچ گئے، تمام اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذکردی گئی ۔تفصیلات کے مطابق جمعة الوداع کے روز کراچی ایئرپورٹ کے قریب جناح گارڈن میں پی آئی اے کا طیارہ گر کر تباہ ہوگیا ، بدقسمت طیارہ لاہور سے کراچی آرہا تھا، طیارہ گرنے پر سول ایوی ایشن کی جانب سے ایمرجنسی نافذ کردی جبکہ پاک فوج کی کوئیک رسپانس فورس، سول ایوی ایشن ، ریسکیو اور پولیس کی ٹیمیں طیارہ گرنے کی جگہ پہنچ گئیں۔طیارہ گرتے ہی ہولناک آگ لگ گئی اور پورے علاقے میں دھواں ہی دھواں پھیل گیا ، طیارہ گرنے کے مقام پر 15سے 20گھروں کو نقصان پہنچا اور چھتوں پر آگ لگ گئی اور متعددگاڑیوں بھی تباہ ہوگئیں،حادثے کی اطلاع ملتے ہی پولیس، رینجرز اور ریسکیو اداروں کی ٹیمیں امدادی آپریشن کے لیے ماڈل کالونی پہنچیں، تنگ گلیوں کی وجہ سے آپریشن میں مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑا، امدادی کارروائیوں میں پاک فوج اور پاک بحریہ کے فائر ٹینڈرز بھی شامل رہے۔پاک فوج کے ایوی ایشن ہیلی کاپٹرزکے ذریعے علاقے کا فضائی جائزہ لیا جاتا رہا،کوئیک ری ایکشن فورس سول انتظامیہ کیساتھ امدادی کارروائیوں میں شریک رہی، مسافروں کے رشتے دار کبھی ائیرپورٹ تو کبھی جائے وقوع کے چکر لگاتے رہے اور اپنے پیاروں کو تلاش کرتے رہے۔ حادثے کا شکار پروازعید کی مناسبت سے خصوصی طور پر چلائی گئی تھی۔ پرواز نے دوپہر ایک بج کر 10 منٹ پر اڑان بھری تھی اور اپنے مقررہ وقت پر کراچی پہنچ گئی تھی تاہم لینڈنگ سے ایک منٹ قبل پرواز کا کنٹرول روم سے رابطہ منقطع ہوگیا۔سول ایوی ایشن ذرائع کے مطابق طیارے کا 2 بجکر37 منٹ پر ایئر کنٹرول کے ریڈار سے رابطہ منقطع ہوا اور بعد ازاں کپتان سجاد گل نے ایئر کنٹرول ٹاور کو طیارے کے لینڈنگ گیئر میں خرابی کے بارے میں آگاہ کیا۔ ذرائع کے مطابق طیارہ فنی خرابی کا شکار ہوا اور لینڈنگ سے کچھ دیر پہلے طیارے کے ٹائر نہیں کھل رہے تھے جب کہ طیارے کے پائلٹ نے ٹریفک کنٹرول کو ‘مے ڈے’ کال بھی دی تھی۔ترجمان پی آئی اے کے مطابق طیارہ زیادہ پرانا نہیں تھا اور اس کی عمر تقریباً 10 سے 11 سال تھی اور طیارہ مکمل مینٹین تھا لہٰذا تکنیکی خرابی کے بارے میں کچھ کہنا قبل ازوقت ہوگا۔ دوسری جانب سی ای او پی آئی اے ارشد ملک کا کہنا ہے کہ واقعہ انتہائی دلخراش ہے۔اے ٹی سی کی طرف سے پائلٹ کو کہا گیا کہ دونوں رن وے خالی ہیں۔اے ٹی سی نے کہا کہ کسی بھی رن وے پر لینڈ کر سکتے ہیں۔پائلٹ نے گو راؤنڈ جانے کا فیصلہ کیا۔پائلٹ نے کہا کہ جہاز میں ٹیکنیکل مسئلہ ہے۔جہاز میں کیا ٹیکنیکل مسئلہ ہوا تھا ابھی کچھ نہیں کہہ سکتے۔انہوں نے مزید کہا کہ تحقیقات کے بعد جہاز میں خرابی کا پتہ چل سکے گا۔ طیارہ گرنے کے باعث گھروں میں موجود لوگوں کے بھی زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں،گورنرسندھ عمران اسماعیل نے پی آئی اے کا طیارہ گرنے پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا چیئر مین پی آئی اے کو ٹیلیفون کرکے حادثہ کی پورٹ طلب کرلی ہے۔

Facebook Comments
Share Button